تازہ ترین

کووڈ 19: پیر پنجال میں 78 کیس درج

راجوری//راجوری اور پونچھ اضلاع میں کورونا وائرس کے کیسوں کی روزانہ کی تعداد میں اضافہ مسلسل جاری ہے ۔گزشتہ روز دونوں اضلاع میں مجموعی طورپر مزید 78 افراد وائرل انفکشن کا شکار ہو کر مثبت پائے گئے ہیں جبکہ پونچھ ضلع میں انتالیس نئے کیس اور راجوری میں انتیس کیس سامنے آئے ہیں ۔سرکاری اعداد و شمار کے مطابق سرحدی ضلع پونچھ میں 49 نئے کورونا وائرس کے کیس سامنے آئے ہیں جن میں 44 مقامی اور پانچ مسافر ہیں۔راجوری میں جمعہ کو درج کئے گئے تمام انتیس کیس مقامی ہیں۔دریں اثنا، جڑواں اضلاع کی انتظامیہ کی جانب سے مزید چار علاقوں کو مائیکرو کنٹینمنٹ زون قرار دے دیا ہے ۔انتظامیہ کے مطابق مذکورہ علاقوں میں سے بڑے پیمانے پر نئے کیس سامنے آنے کے بعد ان کو مذکورہ زمرے میں شامل کرلیا گیا ہے ۔ضلع مجسٹریٹ راجوری وکاس کنڈل کے جاری کردہ ایک حکم کے مطابق، راجوری قصبہ کے جواہر نگر کے وارڈ نمبر چھ کا علاقہ ،کھیورہ

برفباری کا قہر ،اب تک 300سے زائد بجلی کھمبے تبدیل

راجوری//خراب اور نامساعد موسمی حالات بالخصوص بھاری برف باری ن راجوری ضلع میں بجلی کے بنیادی ڈھانچے کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچایا ہے اور محکمہ نے دعویٰ کیا ہے کہ اس نے پچھلے دو ہفتوں کے دوران تین سو سے زیادہ تباہ شدہ کھمبوں کو تبدیل کیا ہے اور 86 پاور ٹرانسفارمروں کی مرمت کی ہے۔06 جنوری سے 09 جنوری تک ہونے والی شدید برف باری کے باعث بجلی کے کھمبوں اور بجلی کی ترسیلی لائنوں سمیت بجلی کے بنیادی ڈھانچے کو بڑے پیمانے پر نقصان پہنچا جس کے نتیجے میں کئی علاقے گھپ اندھیر ے میں ڈوب گئے تھے ۔ایگزیکٹیو انجینئر پاور ڈیولپمنٹ ڈیپارٹمنٹ (جے پی ڈی سی ایل) راجوری، ایر نروتم کمار نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ برف باری میں لو ٹینشن اور ہائی ٹینشن ٹرانسمیشن لائنوں کے کھمبوں کی ایک بڑی تعداد کو نقصان پہنچا ہے اور محکمہ نے اب تک تین سو سے زیادہ کھمبوں کو تبدیل کیا ہے۔انہوں نے بتایا کہ جمعہ کی سہ پہر کو نئے ک

جے ڈی اے مہم کے متاثرین کے حق میں مظاہرہ

راجوری//جموں ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی مسماری مہم کے خلاف احتجاجی دھرنا جمعہ کو مسلسل تیسرے وز بھی جاری رہا جس کے ساتھ راجوری ضلع میں بھی متعدد احتجاجی مظاہرے کئے گئے اور مظاہرین نے تمام بے گھر خاندانوں کی بحالی کا مطالبہ کیا۔جموں کے روپ نگر میں ان خاندانوں کا احتجاجی دھرنا جن کے ڈھانچے کو چار دن پہلے مسمار کر دیا گیا تھامسلسل تیسرے دن بھی احتجاجی دھرنا جاری رہا۔کئی سرکردہ لیڈران بھی احتجاج میں شامل ہوئے اور جے ڈی اے کی طرف سے انہدامی مہم کے خلاف آواز اٹھائی اور محکموں کے اقدام پر جموں و کشمیر حکومت کی خاموشی پر سوال اٹھایا۔دریں اثنا، جمعہ کو راجوری میں زبردست احتجاجی مظاہرے کئے گئے جس میں مظاہرین نے جے ڈی اے کے اقدام کو مخصوص قرار دیتے ہوئے بے گھر خاندانوں کی فوری بحالی کا مطالبہ کیا۔راجوری میں، اسلامک ویلفیئر آرگنائزیشن نے حالیہ مہم کے دوران مکانات کو مسمار کرنے پر جے ڈی اے اور یو ٹی انت

سرنکوٹ میں خاتون کے اغوا کا معاملہ

سرنکوٹ//سرنکوٹ سب ڈویژن میں ایک خاتون کے مبینہ اغوا کے معاملہ کو لے کر بفلیاز کے لوگوں نے تحصیل کمپلیکس سرنکوٹ میں پولیس کے خلاف پرامن احتجاجی مظاہرہ کیا۔ احتجاج کے دوران ایڈوکیٹ ماجد خان بار صدر سرنکوٹ نے کہا کہ ایک مخصوص فرقہ کے ایک نوجوان و دیگر کچھ غنڈا عناصر کیساتھ مل کر بفلیاز کی ایک شادی شدہ خاتون کو زبردستی اغوا کرلیا گیا ہے ۔انہوں نے کہاکہ ڈیڑھ ماہ قبل اغوا ہوئی خاتون کے سلسلہ میں جموں وکشمیر پولیس کی جانب سے ابھی تک خاتون کو باز یاب نہیں کیا جاسکا ہے ۔مظاہرین نے ملزم کی گرفتاری اور خاتون بازیاب کا مطالبہ کرتے ہوئے کہاکہ جلداز جلد اہل خانہ کو انصاف فراہم کیا جائے ۔

کوٹرنکہ کے سیاحتی مقامات انتظامیہ کی نظروں سے اوجھل

کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ میں درجنوں ایسی جھیلیں و سیاحتی مقامات موجود ہیں جن کو آج تک سیاحتی نقشے پر لانے کیلئے کوئی قدم نہیں اٹھایا گیا ہے ۔گزشتہ دنوں سب ڈویژن کے پہاڑی علاقوں بالخصوص قدرتی حسن سے مالا مال علاقو ں میں ہوئی برفباری کے بعد مذکورہ علاسے اپنی مثال آپ بن گئے ہیں ۔سب ڈویژن کی پیر پنچال پہاڑیوں میں لگ بھگ 35سو میٹر کی اونچائی پر قدرتی حسن سے مالا مال سمارٹ سر جھیل پائی جاتی ہے جس کو دیکھنے کیلئے مختلف علاقوں سے سیاحوں کی ایک بڑی تعداد رخ کرتی ہے ۔اس کے علاوہ سب ڈویژ ن کی ان پہاڑیوں میں جہاں قدرتی حسن والے میدان واقعہ ہیں وہائیں کئی آبشار ودیگر سیاحتی مقامات بھی ہیں جہاں پر صاف پانی او ر صاف آب و ہوا پائی جارہی ہے ۔مقامی لوگوں نے محکمہ سیاحت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ مذکورہ مقاما ت و جھیلوں تک پہنچنے کیلئے کم از کم چھ گھنٹوں تک پیدل سفر کرناپڑتا ہے ۔انہوں نے بت

سرکاری سکول کی اراضی پر ناجائز قبضہ

مینڈھر //مینڈھر کے گور نمنٹ پرائمری سکول ناڑ گھماں کیری کی اراضی پر گزشتہ کئی عرصہ سے مسلسل غیر قانونی قبضہ کیا جارہا ہے لیکن شکایت کے باووجود محکمہ ایجوکیشن 2برسوں سے سکول کی اراضی کی نشاندہی نہیں کروا پایا ہے ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ کچھ زمین مافیاکی جانب سے سکول کی زمین پر لگاتار قبضہ کیاجارہا ہے جبکہ اس سلسلہ میں متعلقہ محکمہ اور اعلیٰ حکام کو جانکاری فراہم کرنے کے باوجود بھی محکمہ نے مافیا کو کھلی چھوٹ دی ہوئی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ سرکاری سکول کی اراضی آہستہ آہستہ کم ہوتی جارہی ہے لیکن بچوں کی مشکلا ت کے باوجود حکام کارروائی ہی نہیں کررہے ہیں ۔غور طلب ہے کہ مینڈھر سب ڈویژن میں کئی ایسے سرکاری سکول موجود ہیں جن کی اراضی پر زمین مافیا کی جانب سے غیر قانونی قبضہ کیا گیا ہے لیکن محکمہ ایجوکیشن و محکمہ مال سرکاری زمین کو بحال کروانے میں ابھی تک ناکام رہا ہے ۔مقامی لوگوں نے مانگ کرتے

انٹر بلاک کرکٹ کپ ٹورنامنٹ اختتام پذیر

پونچھ//ضلع پونچھ کے بلاک لسانہ میں محکمہ یوتھ سروس اینڈ اسپورٹس کی طرف سے کروایا جارہا انٹر بلاک کرکٹ کپ گورنمنٹ ہائر سکنڈری گراؤنڈ سیڑی خواجہ میں کامیابی کے ساتھ اختتام پذیر ہوا۔اس دوران سیڑی چوہانہ اے کرکٹ ٹیم نے فائنل میچ 8 رنز سے جیت لیا۔یوتھ سروسز اینڈ سپورٹس کی جانب سے زیڈ پی ای او سرنکوٹ وپن کھجوریہ کی زیر نگرانی بلاک لسانہ کے گورنمنٹ ہائیر سکینڈری اسکول سیڑی خواجہ کے گراؤنڈ میں بلاک سطح کا کامیاب کرکٹ ٹورنامنٹ کا انعقاد کیا۔ اس کپ کا فائنل پنچایت سیڑی چوہانہ اے اور پنچایت کلائی کے درمیان کھیلا گیا۔ ٹاس جیتنے کے بعد سیڑی چوہانہ اے نے پہلے بلے بازی کرتے ہوئے  10 اوورز میں 67 رنز بنائے۔ کلائی ہدف حاصل کرنے میں ناکام رہی اور 59 پر ڈھیر ہوگئی، اس طرح سیڑی چوہانی اے نے میچ 8 رنز سے جیت لیا۔پرویز ملک آفریدی کو مین آف دی میچ قرار دیا گیا جنہوں نے 21 رنز کی اننگز کھیلی اور 3 وک

تھنہ منڈی کے بیگوناڑہ علاقے میں طویل ٹریفک جام

 تھنہ منڈی // ضلع راجوری کے سب ڈویژن تھنہ منڈی میں وارڈ نمبر ایک بیگوناڑہ کے نزدیک بھاری لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے تھنہ منڈی- بفلیاز سڑک صبح دس بجے سے مکمل بند ہو کر رہ گئی۔ مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ سڑک کے غیر ضروری کٹائی کی وجہ سے ایک علاقہ دھنس گیا جس کی زد میں لوگوں کی زمینوں کے ساتھ ساتھ ان کے رہائشی مکانات بھی آ گئے ہیں۔بتایا جاتا ہے کہ اس علاقہ میں لینڈ سلائیڈنگ اور زمین دھنسنے کے بعد جہاں تھنہ منڈی - بفلیاز سڑک آمدو رفت کیلئے بند ہو گئی وہیں دوسری طرف شدید خطرے کے پیش نظر لوگوں کو بھی گھروں سے نکالنا پڑا تاکہ کوئی جانی نقصان نہ ہو۔عوام نے کشمیر عظمیٰ کی وساطت سے گورنر انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ غریب عوام کی طرف توجہ دے تا کہ انکے جانی و مالی نقصان کا تحفظ ہو سکے۔ واضح رہے کہ تھنہ منڈی کے بیگوناڑہ علاقے میں جمعہ کی صبح دس بجے بھاری لینڈ سلائیڈنگ کی وجہ سے مزکورہ سڑک مکمل

مزید خبریں

ایس او پی پر سختی کیساتھ عمل کیا جائے :علماء  عظمیٰ یاسمین  تھنہ منڈی // تھنہ منڈی کی تمام مساجد میں علمائے کرام نے لوگوں کو تلقین کرتے ہوئے کہاکہ وہ کووڈ-19 کے پیش نظر مساجد میں احتیاطی تدابیر کیساتھ ہی داخل ہوں۔انہوں نے کہاکہ اس وقت پوری دنیا کیساتھ ساتھ ملک بھر میں کورونا وائرس کی تیسری لہر کے کیسوں میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے اسلئے سماج میں ہر ایک شخص کو چاہئے کہ وہ اس قدرتی وبا ء سے بچنے کیلئے محکمہ صحت کی جانب سے بتائی گئی احتیاطی تدابیر اختیار کر کے ہی معمول کا کام کاج کریں۔انہوں نے کہاکہ ہر انسان کو چاہئے کہ وہ سماجی دوری بنائے رکھے اور ایس او پی انتظامیہ کی جانب سے جاری کردہ ہدایات پر عمل کریں تاکہ کرونا وائرس سے محفوظ رہا جاسکے۔ علماء نے کہاکہ اللہ کا عذاب تب شروع ہوتا ہے جب مسلمان بد اعمالیوں کا شکار ہوتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ ہر ایک مسلمان کو چاہئے کہ وہ توب

تازہ ترین