تازہ ترین

مزید خبرں

تاریخ    15 جولائی 2021 (00 : 01 AM)   


راجوری پونچھ کے مختلف دیہات میں تلاشی مہم جاری 

سمت بھارگو 
راجوری //خطہ پیر پنچال کے دوران سرحدی اضلاع کے کچھ دیہات میں سیکورٹی فورسز کی جانب سے شروع کر دہ تلاشی مہم مسلسل جاری ہے ۔فوجی ذرائع نے بتایا کہ دونوں سرحدی اضلاع میں مشکوک نقل و حرکت کی اطلاع ملنے کے بعد فوج کی جانب سے تلاشی مہم شروع کی گئی ہے جو کہ گزشتہ روز بھی جاری رہی ۔غور طلب ہے کہ راجوری ضلع میں حالیہ دنوں میں کی گئی دراندزی کی کوششوں کے بعد سرحدی علاقوں میں سیکورٹی سخت کر دی گئی ہے جبکہ ضلع کے اندرونی علاقوں میں بھی تلاشی مہم شروع کر دی گئی ہے ۔انہوں نے بتایاکہ سرحدی ضلع پونچھ کے سرنکوٹ اور راجوری ضلع کے تھنہ منڈی سب ڈویژن میں کچھ دیہات میں مشکوک نقل و حرکت کی اطلاع موصول ہونے کے بعد تلاشی مہم شروع کی گئی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ تیسرے دن بھی سیکورٹی فورسز نے اپنی مذکورہ کارروائی مسلسل جاری رکھی۔
 
 

   او بی سی طبقہ کو نظر اندز کرنے کا الزام 

حسین محتشم
پونچھ// اْو بی سی طبقہ کو درپیش مشکلات کو اعلیٰ حکام تک پہچانے کے سلسلہ میں آل انڈیا بیکورڈ کلاس یونین رجسٹرڈ سوشل یونٹ پونچھ نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ طبقہ کو انتظامیہ کی جانب سے یکسر نظراندز کر دیا گیا ہے ۔پونچھ میں ایک پریس کانفرنس کے دوران مقررین نے کہا کہ آج تک اْو بی سی طبقہ کو اندھیرے میں رکھا گیا ہے اور ان کا حق اْن کو نہیں دیا جا رہا ہے۔انھوں نے کہا آج تک او بی سی طبقہ کا جموں وکشمیر میں اعداد وشمار جمع ہی نہیں کیا گیا ۔انھوں نے کہا 5اگست 2019سے پہلے دفعہ 370کی آڑ میں جموں وکشمیر میں سیاسی جماعتیں اْو بی سی جماعت کا استحصال کرتی تھی اور 5 اگست 2019کے بعد مرکزی حکومت کر رہی ہے۔انھوں نے کہا کہ 2014 میں بی جے پی نے اپنی سرکار بنانے کیلئے اْو بی سی کا بھرپور استعمال کیا کہ اْو بی سی طبقہ کو ان کا حق منڈل کمیشن کے مطابق دینے کا وعدہ کیا مگر کرسی ملنے کے بعدہی ان کو نظراندز کردیا ہے ۔انھوں نے الزام لگایا کہ سرکار کی طرف سے چلائی جارہی سکیموں میں بھی اْو بی سی کا حصہ نہیں ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ پورے ہندستان میں جانوروں کی گنتی ہوتی ہے مگر اْو بی سی طبقہ کا ابھی تک اعداد وشمار جمع کرنے کیلئے کوئی قدم نہیں اٹھایا جاسکا ۔مقررین نے کہا جموں کشمیر میں ہی نہیں بلکہ  پورے ہندوستان میں اْو بی سی طبقہ کی آبادی 67فیصد سے تجاوز کر چکی ہے مگر حقوق سے محروم ہیں ۔انھوں نے مطالبہ کیا کہ موجودہ سرکار اْو بی سی طبقہ کی مردم شماری کرکے اْو بی سی کا بوکس الگ بنائے ۔انھوں نے اْو بی سی طبقہ کے زیرتعلیم بچوں کے لئے ہوسٹل بنانے،ان کیبے روزگار افراد کے لیے سپیشل پیکیج دینے، پنچائت مونسپل کونسل اسمبلی اور پارلیمانی انتخابات میں آبادی کے حساب سے حصہ داری دی جائے ۔اس موقعہ پر محمد رشید سٹیٹ سکریڑی آل انڈیا بیکورڈ کلاس جموں ،عبدلرشید شاہپوروی،حاجی محمد اقبال ضلع نائب صدر موجود تھے۔
 

 ہسپتال کے سامنے سے آٹو سٹیڈ منتقل کرنے کا مطالبہ 

حسین محتشم
پونچھ// بار ایسوسی ایشن پونچھ کے ممبران نے ضلع انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ ہسپتال کے سامنے سے آٹو اسٹینڈ منتقل کرکے ہسپتال کی نو تعمیر شدہ سڑک کی دائیں طرف متبادل سٹینڈقائم کیا جائے ۔انھوں نے کہا کہ ضلع ہسپتال کے صدر دروازے کے سامنے کے آٹو سٹینڈ کی وجہ سے اب بھی وہاں جام لگنے سے پریشانیاں پیدا ہورہی ہیں ۔انھوں نے کہا کہ ریڈیو سٹیشن پونچھ، محلہ بچتر نگر اور دیگر محلہ جات کی جانب سے آے والی لگاڑیاں اسی راستے سے گزرتی ہیں کیونکہ وہاں آٹو زکی بڑی تعداد کھڑی ہوتی  ہے ان کی وجہ سے جام لگ جاتا ہے۔ بار ممبر ایڈووکیٹ طاہر محمود اور بار کے کچھ دیگر ممبران نے پونچھ قصبہ میں تازہ ترین ترقی کے لئے ضلع ترقیاتی کمشنر پونچھ کے کردار کو سراہاجن کی وجہ سے مختلف سڑکوں ، گلیوں اور پلوں پر مرمت کا کام کر کے وہاں پڑے گڈھے بھرے گئے۔انھوں نے تارکول کے بچھانے میں   
استعمال کئے گئے غیر معیاری مواد پر اظہار افسوس کیا اور اس کی انکوائری کا مطالبہ کیا۔انھوں نے مادر مہربان بیتاڑ نالہ پل کے فٹ پاتھ کی مرمت کا بھی مطالبہ کیا ۔
 
 

 خودکشی کے بڑھتے واقعات پر تشویش کا اظہار

حسین محتشم
پونچھ//ریاست کے مختلف اضلاع میں آئے دن خود کشیوں کے واقعات رونما ہونے پرتشویش کا اظہار کرتے کرتے ہوئے سماجی وسیاسی کارکن جاوید اقبال ریشی نوجوان نسل سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ اس طرح کے سنگین اقدامات نہ اٹھائیں بلکہ تمام مطالبات کو آپسی مشاروت کے ذریعہ حل کریں ۔انھوں نے کہا کہ خودکشی کو اسلام میںحرام قرار دیا گیا ہے اور ہر ایک مسلمان کو اللہ تعالی کی ذات پر پورا بھروسہ رکھنا چاہئے ۔انھوں نے کہا کہ ملک میں بہت زیادہ بے روزگاری ہے جس کی وجہ سے آئے دن بہت سارے نوجوان اپنی جان گنوا رہے ہیں۔انھوں نے کہا کہ خودکشی حل نہیں ہے بلکہ اس کی وجہ سے وہ اپنے والدین کے تمام ارمان چور چور کر دیتے ہیں۔انہوں نے انتظامیہ سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ خو د کشی کے بڑھتے ہوئے واقعات کو کم کرنے کیلئے اقدامات اٹھائے جائیں ۔
 
 

مختلف جگہوںپر صفائی مہم چلائی گئی 

حسین محتشم
پونچھ//ڈی جی اسپورٹس ڈاکٹر سلیم الرحمان کے جاری کردہ ہدایت نامہ پر عمل کرتے ہوئے پونچھ میں مختلف مقامات پر صفائی مہم کا آغاز کیا گیا ۔رہبر کھیل ٹیچرس ایسوسی ایشن کے ترجمان پرویز ملک آفرید ی نے گاؤں سیڑھی خواجہ کے مختلف علاقوں میں صفائی / بیداری مہم چلائی ۔ اس مہم کے دوران رضاکارانہ طور پر نوجوانوں اور اس علاقے شہریوں نے صفائی کر کے دوسروں کو صفائی کی اہمیت وافادیت سے روشناس کرنے کی کوشش کی ۔انھوں نے عوام سے درخواست کی کہ وہ اپنے گرد و نواح میںخصوصاآبی ذخائرکو محفوظ رکھنے کے اقدام کریں۔انہوں نے رہبر کھیل اساتذہ سے بھی درخواست کی کہ وہ جوش و جذبے سے اس کام ـ کو انجام دیں اور اس سرگرمی کو اپنی زندگی کا حصہ بنائیں۔انہوں نے کہا کہ اس سرگرمی کا مقصد پانی کا تحفظ کرنا ہے۔ انھوں نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ اپنے چشموں اور تالابوں کو صاف رکھیں۔انھوں لوگوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ حفظان صحت کے لئے چشموں کا صاف و شفاف پانی استعمال کریں ۔انھوں نے کہا کہ مزید کہا کہ یہ ہمارا فرض 
ہے کہ ہم اپنے آبی ذخائر کو آلودگی سے پاک بنائیں اور ان کی دیکھ بھال کریں۔ پرویز ملک آفریدی نے کہا کہ صفائی مہم انھوں نے ضلعی سپورٹ افسر محمد قاسم اور زیڈ ای پی او سرنکوٹ وپن کھجوریا کی سربراہی میں شروع کی ہے ۔
 
 

میونسپل حکام پر رہائشی علاقہ میں گندگی پھینکے کا الزام 

رمیش کیسر 
نوشہرہ //نوشہرہ سب ڈویژن کے درشن نگر علاقہ کے مکینوں نے میونسپل حکام پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ قصبہ کے مختلف علا قوں سے جمع کردہ گندگی کو رہائشی علاقوں میں پھینک دیاجاتا ہے جس کی وجہ سے عام زندگی متاثر ہورہی ہے ۔قصبہ کی وارڈ نمبر 13کے مکینوں نے میونسپل حکام کیخلاف احتجاج کرتے ہوئے کہاکہ گرمیوں کے موسم میں میونسپل کمیٹی کی جانب سے بستی میں گندگی پھینک دینے سے مچھروں کی پیدا ور میں اضافہ ہوگیا ہے ۔انہوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ گندگی کو ان کے گھروں کے قریب پھینک دیاجارہاہے جس کی وجہ ماحولیاتی آلودگی بھی جنم لے رہی ہے ۔مکینوں نے مقامی انتظامیہ کیساتھ ساتھ ضلع ترقیاتی کمشنر راجوری سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ میونسپل حکام کو ہدایت جاری کی جائیں تاکہ گندگی کو جمع ٹھکانے لگانے کیلئے مناسب بندوبست کیا جاسکے ۔