تازہ ترین

ریلیف فراہم کرنے کے اقدامات کا مطالبہ

تاجروں نے فاروق خان کویاداشت پیش کی

تاریخ    9 جون 2021 (00 : 01 AM)   


سرینگر//ایک تجارتی وفد نے لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر فاروق خان سے ملاقات کی اور حکومت کی جانب سے اس طبقے کو ریلیف فراہم کرنے کے اقدامات کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے ایک میمورنڈم پیش کیا ۔ انہوں نے تاجروں اور باغبانوں کی فلاح و بہبود کیلئے کئے گئے متعدد اقدامات کی بھی تعریف کی ۔ ان میں این اے ایف ای ڈی کے ساتھ باہمی تعاون کے ذریعہ مقامی پیداوار کیلئے مارکیٹ کے اہم روابط شامل ہیں ۔ سابق صدر کے سی سی اینڈ آئی جاوید ٹینگا کی سربراہی میں تاجروں نے کہا کہ کووڈ وبائی مرض کی وجہ سے ان کے کاروبار کو نقصان اٹھانا پڑا ہے کیونکہ وہ اس بیماری کی وجہ سے بہت سے سرکاری پروگراموں کے فوائد پر استحکام حاصل کرنے سے قاصر ہیں۔ انہوں نے تاجر برادری کو راحت پہنچانے کیلئے حکومت کو متعدد اقدامات کرنے کی تجویز پیش کی ۔ وفد نے موقف اختیار کیا کہ حالیہ بارشوں کی وجہ سے حکومت نے کئی اضلاع میں 40 فیصد تک ہونے والے نقصان کا تخمینہ لگایا ہے ۔ لہذا انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اس طرح کے کسانوں کے حق میں ریلیف کی فراہمی کریں جو ماضی کی مشقوں کی طرح 2018 میں فراہم کی جانے والی امداد میں ہے ۔ وفد نے مزید عرض کیا کہ لوگوں کے ذریعہ گروسری لانے کیلئے بازاروں میں رش کو کم کرنے کیلئے حکومت کو ماہرین کے مشورے سے ان دکانوں /دکانداروں کو 24 گھنٹے کھلا رہنے کی اجازت دینی چاہئیے تا کہ رش کم سے کم رہ جائے ۔ انہوں نے سامان کی نقل و حرکت اور سامان کی معیاد ختم ہونے سے بچانے کیلئے گھریلو فراہمی کے کلچر کی حوصلہ افزائی کیلئے ایک محفوظ راہداری کا مطالبہ کیا ۔ اس کے علاوہ انہوں نے ڈیزاسٹر منیجمنٹ ایکٹ کے تحت جائیز سرگرمیوں کے مقصد کیلئے بیکری اور ڈیپارٹمنٹل اسٹورز /سُپر مارکیٹوں کو ضروری زمرے میں لانے کی تجویز پیش کی ۔ مشیر خان نے وفد کی تجاویز غور سے سُنیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت اس طبقے کے خدشات کو دور کرنے کیلئے ضروری تمام اقدامات کرے گی ۔ انہوں نے انہیں یقین دلایا کہ آتم نربھر بھارت مہم کے تحت ایل جی انتظامیہ نے پہلے ہی بہت سے اقدامات کئے ہیں اور جموں و کشمیر میں کاروبار کی بحالی اور ترقی کیلئے مزید اقدامات کئے جائیں گے ۔ 
 

تازہ ترین