حاملہ خواتین کو کووِڈ- 19مخالف ٹیکہ لگایا جائے:’ڈاک ‘کا مشورہ

تاریخ    4 مئی 2021 (00 : 01 AM)   


سرینگر//ڈاکٹرس ایسوسی ایشن کشمیر نے کہا ہے کہ حاملہ خواتین کو کووِڈ ویکسین لینا چاہیے۔حاملہ خواتین کواب کووِڈ- 19کاشکار ہونے کازیادہ خطرہ ہے اس لئے ہمیں انہیں ترجیحی طورکووِڈ ویکسین لگاناچاہیے۔ڈاکٹر س ایسوسی ایشن کشمیر کے صدر ڈاکٹر نثار الحسن نے کہا کہ امریکہ کی ’اوبسٹیٹریکس اینڈ گائناکالوجی‘جریدے میں شائع تحقیقی رپورٹ کاحوالہ دیتے ہوئے کہا کہ کووِڈ ٹیکہ ماں اور بچے دونوں کیلئے محفوظ پایا گیا ہے ۔ڈاکٹر نثار نے کہا کہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ حاملہ خواتین میں ویکسین مضبوط مدافعتی نظام پیدا کرتا ہے ۔اس کے علاوہ تحفظی اینٹی باڈیز بچے کی ناف اور ماں کے دودھ میں بھی پائے جاتے ہیں جو ابھی جو بچہ پیدانہیں ہواہو،اور نوزائیدہ دونوں کو تحفظ فراہم کرتا ہے۔ڈاکٹر نثار نے کہا کہ مرکزی وزارت صحت نے اگرچہ حاملہ کوویکسین دینے کی سفارش نہیں کی ہے کیوں کہ اس کی سلامتی اور محفوظ ہونے کے اعدادوشمار موجود نہیں ہیں لیکن اب ہمارے پاس شواہد وثبوت ہیںاور ہمیں اُنہیں ویکسین دیناچاہیے۔ڈاکٹر س ایسوسی ایشن کے صدر نے کہا کہ پہلی لہر کے مقابلے میں دوسری لہر میں حاملہ خواتین کو زیادہ شدید پیچیدگیوں کا سامنا کرناپڑتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم دیکھ رہے ہیں کہ حاملہ خواتین کی کثیر تعداد کوانٹینسیو کیئر کی ضرورت پڑتی ہیں اور وہ بالآخر وینٹی لیٹر پر پہنچ جاتی ہیں۔انہوں نے کہا کہ اگرچہ سابق تحقیق سے معلوم ہوا تھا کہ حاملہ کو شدیدبیماری کاخطرہ نہیں ہے لیکن حالیہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ انہیں شدیدکورونا ہونے کاخطرہ ہے ۔ڈاکٹر نثار نے اکسفورڈ کی حالیہ تحقیق کاحوالہ دے کر کہا کہ حاملہ خواتین جوکورونا انفیکشن کاشکار ہوتی ہیں ،کو پہلے سے معلوم زیادہ پیچیدگیوں کے پیش آنے کاخطرہ ہے۔انہوں نے کہا کہ حاملہ خواتین کو کوروناکازیادہ خطرہ ہونے کی بنا پر حاملہ خواتین کو کووڈ ویکسین لینے کی صلاح دی جاتی ہے۔

تازہ ترین