مقامی معیشت کو فروغ دینے کی کوشش

حکومت زراعت اور باغبانی مصنوعات کو فروغ دے گی: نوین چودھری

تاریخ    4 مئی 2021 (00 : 01 AM)   


جموں// پرنسپل سیکرٹری زرعی پیداوار اور کسانانِ بہبود محکمہ نوین چودھری نے جموں وکشمیر کے زراعت اور باغبانی مصنوعات کی برآمدات کو بڑھاوا دینے کے منصوبے پر عمل درآمد پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ میں اس منصوبے پر عمل درآمد کے بارے میں تبادلہ خیال کیا گیا، جس کا عنوان تھا ’’ ڈیولپنگ ایکسپورٹ اورنٹیڈ ایگریکلچر اینڈ ہارٹیکلچر فار انہنسنگ فارمرس‘‘جسے اے پی ڈی اے نے اے ایف سی کے ساتھ عملایا ہے۔ اس منصوبے کے تحت مقامی معیشت کو فروغ دینے کے لئے جموں و کشمیر کے منتخب زراعت اور باغبانی مصنوعات کی پیداوار ، پروسیسنگ اور مارکیٹنگ کی جائے گی۔دورانِ میٹنگ پرنسپل سیکرٹری نے پاور پوائنٹ پرزنٹیشن پیش کی اور سیب اور اخروٹ کے لئے زرعی برآمد زون قائم کرنے اور جموں و کشمیر کی اہم فصلوں جیسے زعفران ، باسمتی اور چیری کو فروغ دینے کی حکمت عملی کے بارے میں جانکاری دی۔ اس پروجیکٹ کو مڈل ایسٹ ، آسٹریلیا ، سنگاپور اور امریکہ جیسے بین الاقوامی منڈیوں میں ان مصنوعات کی ترویج اور مارکیٹنگ کے لئے ڈیزائن کیا گیا ہے۔اس تجویز میں پانچ سے چھ سٹوریج ، پیکیجنگ اور پروسیسنگ کلسٹروں کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔ یہ منصوبہ رسد اور برآمدات کے انضمام کے علاوہ مٹی کے پانی کی جانچ اور بقیہ تجزیہ جیسے سائنسی اقدامات کو بھی یقینی بنائے گا۔پرنسپل سیکرٹری نے اس تجویز کی سراہنا کی اور جموں و کشمیر کے مختلف زرعی باغبانی سے متعلق اپنی معلومات اور تجربات بانٹیں۔ انہوں نے بتایا کہ سیبوں کے لئے 400 ہیکٹر اونچی کثافت والی شجر کاری تیار کی گئی ہے اور اگلے برسوںمیں اس طرح کے پودے لگانے کے لئے 1000 ہیکٹر رقبے میں اضافے کی ضرورت ہے۔پرنسپل سیکرٹری نے جموں خطے کی مصنوعات پر کہاکہ گوچی مشروم کو حال ہی میں جی آئی ٹیگ کیا گیا ہے اور اسے دنیا کے پریمیم صارفین میں فروغ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈوڈہ اور پونچھ اضلاع کے راجما کو دنیا کا بہترین مقام سمجھا جاسکتا ہے۔اُنہوںنے آر ایس پورہ کے خوشبودار باسمتی چاول کی تعریف کی اور کہا کہ زیادہ کاشتکاروں کو نامیاتی طریقوں سے فصل کی کاشت کرنے کی ضرورت ہے۔ نوین چودھری نے کشمیری مصنوعات مشک بدج چاول ، ٹراؤٹ فش کے بارے میں آگاہ کیا اور کہا کہ اس کا محکمہ رواں سال دو سے تین بار ٹراؤٹ کی پیداوار بڑھانے پر کام کر رہا ہے۔اُنہوںنے جموں و کشمیر کی دیگر خصوصیات جیسے زیرا اور کشمیر مرچوں کو جی آئی ٹیگس کو تیزی سے فراہم کرنے میںاے پی ای ڈی اے کا تعاون حاصل کیا۔میٹنگ میں دیگر اَفراد کے علاوہ ڈائریکٹر زراعت جموں ، ڈائریکٹر زراعت کشمیر ، ڈائریکٹر ہارٹیکلچر جموں اور ڈائریکٹر ہارٹیکلچر نے بذریعہ ویڈیو کانفرنسنگ شرکت کی۔
 

تازہ ترین