تازہ ترین

۔27سالہ سروس کے بعد ریٹائر منٹ کا نیا قانون | بورڈ کا ملازم پہلا نشانہ ، سبکدوشی کا حکمنامہ جاری

تاریخ    30 نومبر 2020 (00 : 12 AM)   


بلال فرقانی
سرینگر// جموں و کشمیر حکومت نے ایک ماہ قبل متعارف کرائے گئے نئے قانون کے تحت قبل از وقت ملازمین کو سبکدوش کرنے کا آغاز کردیا ہے اور اس سلسلے میں پہلا شکار جموں کشمیر بورڈ کا ایک چپراسی بن گیا ہے۔امسال اکتوبر میں ، حکومت نے جموں و کشمیر کے سول سروس ضوابط کی دفعہ 226 (2) میں ترمیم کی تاکہ  22 سال کی معیاد مکمل ہونے پر یا عوامی مفاد میں 48 سال کی عمر حاصل پر ملازم کو سبکدوش کیا جاسکے۔نئے قانون کے تحت ، جموںکشمیر بورڈ آف اسکول ایجوکیشن نے 14 اکتوبر 2020 کو 27 سال کی معیاد ملازمت مکمل کرنے والے چپراسی فیاض احمد سراج کو قبل از وقت ریٹائر کردیا ہے۔چیئرپرسن جموں کشمیر بورڑ آف اسکول ایجوکیشن وینا پنڈتا کے جاری کردہ حکم نامہ زیر نمبر 521-B of 2020 محررہ 27 نومبر2020کے مطابق ، سراج یکم دسمبر کو سبکدوش ہونگے۔اس نئی ترمیم کے تحت لازمی طور پر 3 ماہ قبل کے نوٹس کے بدلے 3 ماہ کی تنخواہ کی منظوری کی گئی ہے۔دریں اثناء کشمیر عظمیٰ کو بورڈ ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ فیاض احمد سراج ساکن رعناواری سرینگر کئی برسوں سے معطل ہیں۔ذرائع نے بتایا کہ فیاض احمد پر الزامات تھے جس کے بعد انہیں معطل کیا گیا اور فی الوقت وہ مکمل تنخواہ بھی حاصل نہیں کررہے تھے بلکہ وہ 75فیصد تنخواہ ہی لیا کرتے رہے تھے۔ذرائع سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ فیاض احمد سراج پر ساتویں پے کمیشن سفارشات کا اطلاق بھی نہیں لایا گیا تھا جو یکم جنوری 2016سے عمل میں لائی گئیں تھیں۔وہ پچھلے کئی سال سے معطل تھے اور چھٹے پے کمیشن کے حساب سے ہی تنخواہ حاصل کرتے تھے۔