بانہال بلاک سے 8 خواتین سمیت 16 امیدوار میدان میں

بانہال اے سے 3 آزاد امیدوارں اور بانہال بی سے پنتھرس امیدوار نے نام واپس لے لیا

تاریخ    20 نومبر 2020 (00 : 01 AM)   


محمد تسکین
 بانہال // ڈی ڈی سی انتخابات میں سیاسی سرگرمیاں تیز ہوگئی ہیں اور سیاسی جنوں اور دل بدلی کا جادو سر چڑھ کر بول رہا ہے۔جمعرات کو بلاک بن بانہال میں نام واپس لینے کے آخر تاریخ تھی اور کل چار امیدوارں نے دستبرداری اختیار کی۔ بانہال اے خواتین کیلئے مختص ہے اور یہاں سے گیارہ امیدوارں نے فام بھرے تھے۔بلاک بانہال اے سے آزاد امیدوار اور سابقہ نائب صدر بھارتیہ جنتا پارٹی رضوانہ میر نے اپنا نام واپس لیکر کانگریس امیدوار مصباح رشید کے حق میں دستبردار ہوکر کانگریس میں شمولیت اختیار کی جبکہ بانہال بی سے پنتھرس پارٹی امیدوار ارشاد احمد خان نے اپنا فارم واپس لیکر کانگریس امیدوار امتیاز احمد کھانڈے کے حق میں اپنی حمایت کا اعلان کیا۔ اسی طرح بانہال اے سے تعلق رکھنے والے سرپنچ اور سابق پی ڈی پی لیڈر غلام رسول ماتو اور بانہال اے سے ہی تعلق رکھنے والے نیشنل کانفرنس سرپنچ شبیر احمد نے کانگریس میں شمولیت اختیار کرکے الیکشن میں کانگریس امیدوار کو اپنی حمایت دینے کا اعلان کیا ہے جبکہ بانہال اے کے ہی آزاد امیدوار رفعت آرا اور رخسانہ بیگم نے نامزدگی فارم واپس لئے ہیں اور بتایا جاتا ہے کہ انہوں نے کانگریس کے امیدوار کو اپنی حمایت دینے کا اعلان کیا۔ فوری طور پر ان کے ردعمل اور سپورٹ کے حوالے سے مزید تفصیلات معلوم نہیں ہوسکی ہیں۔ اب بانہال اے میں گیارہ کے مقابلے آٹھ خواتین امیدوارں کے درمیان نزدیکی مقابلے کی توقع ہے۔ یہاں سے بھارتیہ جنتا پارٹی، پنتھرس پارٹی، نیشنل کانفرنس اور کانگریس امیدوارں کے علاؤہ چار آزاد امیدوار میدان میں رہے ہیں،جبکہ بانہال بی سے جموں و کشمیر اپنی پارٹی، بھارتیہ جنتا پارٹی، نیشنل کانفرنس اور کانگریس امیدوارں کے مقابلے میں پانچ آزاد امیدوار قسمت آزمائی اور لوگوں کا اعتماد حاصل کرنے کیلئے میدان میں اترے ہیں۔ اس سلسلے میں بات کرنے پر ریٹرننگ افسر بانہال اے کلدیپ سنگھ نے کشمیر عظمیٰ بتایا کو بتایا اے سے11 میں سے تین آزاد امیدوارں نے اپنے نام زدگی واپس لئے ہیں اور اب کل آٹھ امیدوار میدان میں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہاں یکم دسمبر کو پولنگ ہوگی اور 22 دسمبر کو نتائج سامنے آئیں گے۔

تازہ ترین