سات سال بعدبھی سوپور مہاراج پورہ پل نامکمل ،اب دوبارہ ٹینڈر جاری ہونگے

تاریخ    11 اکتوبر 2020 (00 : 02 AM)   


غلام محمد
 سوپور //اس وقت کے وزیر اعلی کے ذریعہ سنگ بنیاد رکھنے کے سات سال بعد ، حکام شمالی کشمیر کے بارہمولہ ضلع میں سوپور میں مہاراج پورہ پل مکمل کرنے میں بری طرح ناکام ہوچکے ہیں۔سوپور کے باشندوں کے مطابق ، اس منصوبے کو اس وقت کے وزیر اعلی عمر عبداللہ کے دور میں منظور کیا گیا تھا ، جس نے دسمبر 2013 میں اس وقت کے آر اینڈ بی کے وزیر عبدالمجید وانی کی موجودگی میں اس پل کا سنگ بنیاد بھی رکھا تھا۔عہدیداروں کے مطابق یہ پل 16 کروڑ روپے کی لاگت سے تعمیر کیا جارہا تھا جس میں سے صرف 09 کروڑ روپے جاری کئے گئے ہیں۔تاہم مقامی لوگوں نے الزام عائد کیا کہ 9 کروڑ کی واگذاری کے بعد بھی ، متعلقہ حکام پل پر 15 فیصد کام بھی مکمل کرنے میں ناکام رہے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ان 7 سالوں کے دوران پل پر تعمیرکا کام کئی بار روک دیا گیا ۔ ضلعی انتظامیہ کی جانب سے بار بار یقین دہانی کے باوجود کہ اس منصوبے پر کام کو تیز کیا جائے گا ، لیکن زمین پر کچھ نہیں ہوا۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ تکمیل کے بعد یہ پل بارہمولہ اور بانڈی پورہ اضلاع کے متعدد علاقوں کے درمیان تارزو ، ننگلی ، ہائیگام اور مہاراج پورہ کے دیہات کے درمیان فاصلہ کم کردے گا۔ اس سے تجارت کو بھی فروغ ملے گا اور مسافروں کو کم سے کم وقت میں اپنی اپنی منزل تک پہنچنے میں مدد ملے گی۔دریں اثنا جے کے پی سی سی کے ڈی جی ایم بارہمولہ شبیر احمد نجار نے بتایا کہ فنڈز کی کمی کی وجہ سے پل پر کام کئی سالوں سے رک گیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ پل پر تعمیراتی کام جلد ہی دوبارہ شروع ہوجائے گا ۔انہوں نے مزید کہا کہ پل کی تعمیر کا تازہ ٹینڈر حال ہی میں جاری کیا گیا تھا لیکن ابھی کم جواب ملا ہے ، ہم جلد ہی ٹینڈر دوبارہ جاری کریں گے۔
 

تازہ ترین