ویری ناگ بازار میں بیت الخلاء ناقابل استعمال

دکانداروں اور راہگیروں کو مشکلات کا سامنا

تاریخ    29 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


عارف بلوچ
اننت ناگ//سیاحتی مقام ویری ناگ کے بازار میں سرکاری بیت الخلاء ناقابل استعمال ہے اور بدبو نزدیکی مکینوں کے لئے سوہان روح ثابت ہورہی ہے۔سیاحتی مقام ہونے کی وجہ سے ویری ناگ بازار میں اکثر لوگوں کا رش لگا رہتا ہے تاہم بازار میں موجود سرکاری بیت الخلاء ناقابل استعمال بن گئے ہیں ۔بیت الخلاء کی عدم دستیابی کے سبب راہگیروںبالخصوص خواتین کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑتاہے۔جامع مسجد ویری ناگ اوربس اسٹینڈ کے نزدیک 3بیت الخلاء انتہائی خستہ حالی کا شکارہیں ۔ میونسپل کمیٹی نے کئی سال قبل جنرل بس اسٹینڈ میں بیت الخلاء تعمیر کیا تاہم ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی جانب سے آج تک پختہ ڈرین کو تعمیر نہیں کیا جاسکا جس کے باعث بستی کا سارا گندہ پانی بیت الخلاء میں داخل ہورہا ہے اور لاکھوں روپئے کی لاگت سے تعمیر کئے گئے بیت الخلاء کھنڈرات میں تبدیل ہوچکے ہیں ۔ محمد امین نامی ایک  شہری نے کہا کہ بازار میں بیت الخلاء نہ ہونے کی وجہ سے انہیں سخت مشکلات کا سامناکرنا پڑتاہے ۔انہوں نے کہا ’’ سوچھتا ہی سیوا نعرہ کاغذات تک ہی محدود ہے‘‘ ۔انہوں نے مزید کہا کہ ویری ناگ قصبہ ڈیولپمنٹ اتھارٹی کی نگرانی میںآتا ہے تاہم عوام کی سہولیات کے لئے میونسپل کمیٹی اورڈیولپمنٹ اتھارٹی آج تک اس مصروف ترین بازار میں بیت الخلاء تعمیر نہیںکر سکی ہے۔صدر میونسپل کمیٹی ڈورو ویری ناگ محمد اقبال آہنگر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ کئی سال قبل محکمہ نے این جی او ز کے ذریعے ڈورو ویری ناگ میں6بیت الخلاء تعمیر کئے ۔ہر بیت الخلاء کی تعمیر پر 14لاکھ روپئے خرچ ہوئے اوردیکھ ریکھ کا ذمہ10سال کے لئے تعمیراتی ایجنسی کو سونپا گیا۔ انہوں نے کہاکہ اگلے چند روز تک سبھی بیت الخلاء پھر سے قابل استعمال ہونگے ۔
 

تازہ ترین