تازہ ترین

عارضہ ٔقلب کا توڑ دل سے کیجئے

کووِڈ - 19میں عارضہ قلب کے مریضوں کودوہرے مشکل کاسامنا

تاریخ    26 ستمبر 2020 (00 : 02 AM)   


پروفیسر اوپندر کول
بھارت میں عارضہ قلب اموات کی ایک بڑی وجہ بن گئی ہے۔ہمارے ملک میں 25سے30فیصد اموات دل کا دورہ پڑنے یادماغ کی نس پھٹنے سے منسوب کئے جانے کے قابل ہیں۔ ملک میں عارضہ قلب سے اموات کی شرح ایک لاکھ میں سے 272ہے،جبکہ عالمی سطح پر عارضہ قلب سے مرنیوالوں کی شرح ایک لاکھ میں 235ہے۔گویا ہمارے ملک میں عارضہ قلب سے اموات کی شرح عالمی سطح کی شرح سے زیادہ ہے۔ہمارے ملک کی دوسری خصوصیت میں یہاں کم عمر میں ہی بیماری کاظاہر ہونا،بیماری کی رفتار تیزپکڑنااور اموات کی زیادہ شرح ہے۔اس لئے احتیاطی تدابیراس ڈرائونے رجحان کوکم کرنے کی کلید ہے کیوں کہ ایک باریہ بیماری آشکار ہوئی ،تو پھر علاج کی ساری تدابیرزیادہ سے زیادہ درد کو کم کرتے ہیں ،نہ کہ بیماری کاعلاج ۔ورلڈہارٹ فیڈریشن اورعالمی صحت تنظیم ہر سال 29ستمبر کوعالمی یوم قلب مناتے ہیں ۔یہ عالمی سطح پر عارضہ قلب سے متعلق بیداری پیدا کرنے کاسب سے بڑاپلیٹ فارم ہے۔
 اس سال یہ چیلنج اورزیادہ سخت ہے۔پہلے ہی ملک میں کووِڈ- 19کے پچاس لاکھ معاملے سامنے آئے ہیں اوران اعدادوشمارمیں تیز تر اضافہ ایک خوفناک معاملہ ہے۔ہم ایک ایسے دورمیں جی رہے ہیں ،جس کی پہلے کوئی مثال نہیں ہے اور ہماراصحت کی نگہداشت کانظام شدید مالی مشکلات کے باوجود حتی الامکان سخت جی جان سے محنت کرکے حالات کامقابلہ کررہا ہے۔اس لئے افراد،کنبوں اور غیرمحفوظ سماج کی ذمہ داریوں کا سخت امتحان ہورہا ہے۔اس وائرس کے مستقبل کے بارے میں کچھ بھی نہیں کہاجاسکتا ہے،لیکن ہم یہ بات جانتے ہیں کہ اس عالمگیر وباء کا مقابلہ کرنے کیلئے ہمیں اپنے دل یا قلب کی حفاظت کرناازحد لازمی ہے۔
 اس سال کے عالمی یوم قلب کا موضوع ’’دل سے دل کے دورے کاتوڑ‘‘ ہے۔کووِڈ- 19کی وجہ سے یہ اورزیادہ مشکل بن گیا ہے کیوں کہ عارضہ قلب کے مریضوں کو دوہراخطرہ ہے۔انہیں خطرناک پیچیدگیوں کے پیداہونے کا خطرہ ہے جوزیادہ اموات کاباعث بن سکتا ہے اوروہ ان حالات میںاپنے بیما ردلوں کا علاج جاری رکھنے سے بھی خوفزدہ ہیں ۔انہیں یہ احتیاط ،’’کہ گھر سے کسی شدیدمجبوری کی حالت کے بغیر نہ نکلیں،تاکہ کہیں کووِڈ کاشکار نہ ہو،ڈرارہا ہے۔
اگر ہم صحت کی نگہداشت کے کارکن ہیں، ہمیں یہ سمجھنا ہے کہ صحت مند قلب کی زندگی گزارنے کیلئے دل کی صحت کے کیا معنی ہیں اورہمارے پیاروں،ہمارے مریضوں تک یہ پیغام پہنچانا ہے کہ دل کوصحت مندرکھنے کے سادہ اورسستے طریقے ہیں۔
 بہتر پسند کرنے کیلئے دل کواستعمال کیجئے۔
صحت مند خوراک میں چاریاپانچ بارروزانہ میوے،سبزیاں ،خاص طور سے ہرے پتوں والی کھانی چاہیے۔ہفتے میں کم سے کم پانچ بارتیس سے پنتالیس منٹ تک کسرت کرنا۔تمباکو یاسگریٹ نوشی کو ترک کرنااورکم سے کم شراب کا استعمال۔
اپنے دل کی سننے کیلئے دل کواستعمال کریں
 اگر آپ کو کوئی دل کی مشکل ہے جیسے ہائی بلڈ پریشر یاذیابیطس جسے ہم شوگر کی بیماری بھی کہتے ہیں یاآپ موٹاپے کاشکار ہیں۔آپ کیلئے لازمی ہے کہ آپ اپنے علاج کے شیڈول پرسختی سے کاربندرہیں۔کووِڈ-   19کواپنے معینہ چیک اَپ کی آڑ نہ بننے دیں۔اکثر یہ ورچیولی یعنی ویڈیو کال کے ذریعے بھی ہوسکتے ہیں۔تاہم کبھی بھی کسی ہنگامی صورتحال میں ،اگر لازمی ہوتواسپتال جانے یاایمبولینس کو بلانے سے احترازنہ کریں۔یہ محفوظ ہے اور وہاں طبی پیشہ ورآپ کی مدد کیلئے موجودہیں۔
اگر آپ کو کووِڈ- 19جیسی علامات ہیں جیسے بخار، کھانسی، سانس کا پھولناوغیرہ ہیں ،توآپ کو طبی نگرانی میں جانچ کرانے سے شرمانانہیں چاہیے۔جلد پہچان لینے سے آپ اورآپ کے کنبے کی مددکی جاسکتی ہے ۔
 دل کو سماج،اپنے پیاروں اوراپنے لئے استعمال کریں۔
 عالمگیر وباء کے دوران عام طور سے سماج،افراد اور تجارت کاردعمل ناقابل یقین رہا ہے ۔ہماری روزمرہ کی زندگی میں ایک دوسرے کی مددکرنا،صحت عامہ کے اہلکاروں کے ساتھ تعاون اورسماج کے غیرمحفوظ افراد کی امدادمستند ہے۔
 صحت عامہ کے پیشہ وروں کاشکریہ اداکرنے کیلئے دل کواستعمال کیجئے
 عالمگیر وباء کی وجہ سے نرسوں،ڈاکٹروں ،محققوں اورنظام کے نگرانوں کے تئیں حمایت وستائش میں جذبات کا پرجوش اظہار کیاگیا۔کبھی ان کے نازک رول کااس طرح اظہار نہیں ہوا ہے جس کااس وباء کے دوران انہوں نے مظاہر ہ کیا اوراکثر اوقات اپنی جانوں پر کھیل کرانہوں نے لوگوں کی جانوں کوبچایا۔صف اول پر کام کرنے والے یہ بہادرہمارے دل کے ہیرو بن گئے ہیں ۔
حصہ لینے کیلئے دل کواستعمال کیجئے
آیئے ہم اس عالمی دن کو زیادہ موثربنائیں۔ٹوٹے دلوں پرمسکراہٹ لانے کچھ نیا کریں۔ہمار اگروپ ’’گوری ہیلدی ہارٹ پروجیکٹ‘‘کے تحت ایک منفرد پروگرام شروع کررہا ہے تاکہ موجودہ بلڈ پریشر،ذیابیطس یاعارضہ قلب کے مریضوں کیلئے تازہ  ترین علاج کے اصل مسودے سامنے لائیں۔سومریضوں جن میں ان میں سے کوئی بھی بیماری ہو،اورجنہیںچیف میڈیکل افسر کی طرف سے ضلع کے صحت عامہ کے حاکموں نے پہلے ہی منتخب کیا ہو،کوانٹرنل میڈیسن،کارڈیالوجی اور بڑھاپے کی بیماریوں کے ماہر ملاحظہ کریں گے۔ان کے علاج کوموجودہ سفارشات کی بنیاد پر بہتربنایاجائے گا۔اس کیلئے آنے والے دوبرسوں میں جموں کشمیرکے تمام بیس اضلاع کا دورہ کیاجائے گا۔
 ایک ’’صحتمند دل کی مہم‘‘خطے کے لوگوں کیلئے پروفیسر اوپندر کول،پروجیکٹ کے بانی ڈائریکٹر کی قیادت میں تقریب کے دوران شروع کی جائے گی۔ اس میں ہرایک ضلع کے ڈاکٹروں کے ساتھ ، مضافات میں ہنگامی صورتحال کے دوران عارضہ قلب کو کم کرنے سے متعلق تبادلہ خیال کی ایک مجلس بھی ہوگی ۔
 ’’گوری ہلدی ہارٹ پروجیکٹ‘‘کا دن بھر جاری رہنے والا پروگرام اس سال 29ستمبر کو کپوارہ ضلع اسپتال میں شروع کیاجائے گا ۔یہ سرگرمیاں پھرہرمہینے ایک ضلع میں تمام اضلاع میںہوں گی۔2000مریضوں پر مشتمل اعداوشمار کو پھر ملاکر شائع کرکے پیش کیاجائے گاتاکہ اِسے جموں کشمیرمیں دیہی علاقوں میں صحت کے نظام کو بہتر بنانے کیلئے استعمال کیاجائے ۔بترہ اسپتال ومیڈیکل ریسرچ سینٹرنئی دہلی اور’’اُمید فائونڈیشن ‘‘غیرسرکاری تنظیم شراکت دار ہوں گے ۔اعجازرشید اورناصرلون بالترتیب چیف ایگزیکیٹوافسر اور پروجیکٹ ڈائریکٹرہوں گے ۔سائنسی اورتحقیقی جُزکی سربراہی پریہ درشنی ارم بم کریں گی۔
 ہمیں امید ہے کہ اس پروگرام کی شروعات سے جموں کشمیرکے دیہی نظام صحت میں ایک نئے تصورکو ضلع انتظامیہ کی نگرانی میں متعارف کیاجائے گا۔
 (مصنف یہ قبول کرتا ہے کہ عالمی یوم صحت کے ورلڈسلسلے میں ہارٹ فائونڈیشن کا تشہیری مواد ااستعمال کیا ہے) 
 ( پدم شری  اورڈاکٹر بی سی رائے اعزازیافتہ پروفیسر اوپندکول،ماہرامراض قلب  اورکارڈیالوجی سوسائٹی آف انڈیاکے سابق صدر ہیں)
ای میل۔kaul.upendra@gmail.com
 

تازہ ترین