تازہ ترین

لداخ سے جموں کشمیر کے ملازمین کو واپس لایاجائے

تاریخ    30 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


سرینگر//جموں وکشمیر اپنی پارٹی کے سینئرلیڈر اور سابق وزیر غلام حسن میر نے مرکزی زیر ِ انتظام علاقہ لداخ میں تعینات جموں وکشمیر کے ملازمین کی فوری واپسی سے متعلق پارٹی مطالبہ کو دہرایا ہے۔ ایک بیان میں میر نے کہا ہے کہ سینکڑوں ملازمین جوکہ جموں وکشمیر کے مختلف علاقوں میں رہتے ہیں، نے عمومی انتظامی محکمہ کے پاس پوسٹنگ کے لئے اپنی رضامندی بھی پیش کی ہے لیکن لداخ میں چار سال تک خدمات انجام دینے کے باوجود بھی ،ابھی تک انہیں لداخ یونین ٹیرٹری سے واپس نہ لیاگیا ہے ۔میر نے کہاکہ بدقسمتی سے ایسا لگتا ہے کہ جموں وکشمیر انتظامیہ اِن ملازمین کی حالتِ زار کو بھول چکی ہے جوکہ لداخ یوٹی کے اندر مشکل صورتحال میں کام کر رہے ہیں، جموں وکشمیر حکومت کے حکم نامہ کے مطابق اِ ن ملازمین نے عمومی انتظامی محکمہ (GAD) میں اپنی پسند کی تعیناتی کے لئے متبادل بھی دیئے تھے لیکن اِس کے باوجود ابھی تک انہیں وہیں تعینات رکھاگیاہے۔انہوں نے کہاکہ جموں وکشمیر کے دونوں صوبوں سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں ملازمین مختلف محکمہ جات اعلیٰ تعلیم، اسکول تعلیم، صحت، بجلی، خزانہ، منصوبہ بندی، داخلہ ، تعمیرات عامہ، صحت عامہ اور قومی صحت مشن کے تحت لداخ میں تعینات ہیں، سماجی وماحولیاتی حالات سے بے حدمتاثر ہیں۔  میر نے مرکزی وزیر داخلہ سے اپیل کی ہے کہ وہ اِس معاملہ میں مداخلت کر کے بے سہارا ملازمین کی یونین ٹیرٹری لداخ سے جموں وکشمیر کے متعلقہ صوبوں میں واپسی یقینی بنائیں تاکہ اُن کے کنبوں کو راحت کی سانس نصیب ہو۔ میر نے لیفٹیننٹ گورنر گریش چندر مرمو سے گذارش کی کہ یہ معاملہ ترجیحی بنیادوں پروزارت ِ داخلہ کے ساتھ اُٹھایاجائے اور اِس ضمن میں ضروری ہدایات جاری کرنے کو یقینی بنائیں۔