کورونا وائرس| 6اموات کا اضافہ، مہلوکین کی تعداد 155

۔4حاملہ خواتین، سوپور ضلع عدالت کے 4ملازمین اور پولیس و فورسز کے 21اہلکاروں سمیت 240مثبت

تاریخ    10 جولائی 2020 (00 : 03 AM)   


پرویز احمد
 سرینگر // 9جولائی جمعرات ،کو جموں و کشمیر میں کورونا وائرس سے مزید 6افراد فوت ہو گئے جن میں جموں سے تعلق رکھنے والا نیشنل کانفرنس کا ایک یوتھ لیڈر بھی شامل ہے۔ اسکے ساتھ ہی مہلوکین کی تعداد بڑھ کر 155تک پہنچ گئی جن میں سے 15جموں جبکہ 140افراد کشمیر میں فوت ہوئے ۔ جمعرات کو4حاملہ خواتین، سوپور ضلع عدالت کے 4ملازمین،پولیس و فورسز کے 21 اہلکاروں سمیت 240افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں۔ جموں و کشمیر میں متاثرین کی تعداد 9501تک پہنچ گئی ۔ ان میں سے 1997جموں جبکہ 7504کشمیر سے تعلق رکھتے ہیں۔ 240متاثرین میں سے 58سرینگر، 37بارہمولہ، 2کولگام،7شوپیان، 8اننت ناگ، 32کپوارہ، 4پلوامہ، 18بڈگام،5بانڈی پورہ، 14گاندربل، 12جموں،4کٹھوعہ، 9سانبہ، 18راجوری،5پونچھ، 3ڈوڈہ اور ایک کشتواڑ سے تعلق رکھتا ہے۔ 
۔5خواتین سمیت 6فوت
 جموں و کشمیر میں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران 5خواتین سمیت 6افراد وائرس کا شکار ہوکر فوت ہوگئے۔ان میں 2صدر اسپتال ,ایک جے وی سی بمنہ, 1سی ڈی اسپتال ، ایک مریض جی ایم سی جموں جبکہ ایک خاتون گھر میں ہی فوت ہوگئی۔جمعرات کو اموات کا سلسلہ صبح 4بجے صدر اسپتال سرینگر سے شروع ہوا جہاں نٹی پورہ سرینگر سے تعلق رکھنے والی 80سالہ خاتون فوت ہوگئی۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر نذیر احمد چودھری نے بتایا ’’بلڈ پریشر اور نمونیا کی وجہ سے خاتون کو یکم جولائی کو اسپتال میں داخل کیا گیا اور وہ 9جولائی کو صبح فوت ہوگئی‘‘۔ ڈاکٹرچودھری نے بتایا’’ پلوامہ کی 70سالہ خاتون بھی کوروناوائرس میں مبتلا ہونے کے بعدجمعرات کوصدراسپتال میںفوت ہوگئی‘‘۔خاتون میڈیکل سپر انٹندنٹ جے وی سی بمنہ ڈاکٹر شفا دیوا نے بتایا ’’کولگام سے تعلق رکھنے والی ایک65سالہ خاتون کو بھی وائرس نگل گیا ‘‘۔ڈاکٹر شفا دیوا نے بتایا ’’ خاتون کو 8جولائی کو شام 7بجے اسپتال میں داخل کیا گیا اور وہ جمعرات کو دوپہر ایک بجے فوت ہوگئی‘‘۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ سی ڈی اسپتال ڈاکٹر محمد سلیم ٹاک نے بتایا ’’ماسومہ پٹن سے تعلق رکھنے والی ایک 65سالہ خاتون 29جون کو شوگر اور نمونیا کی وجہ سے اسپتال میں داخل ہوئی لیکن 9جولائی کو وائرس سے زندگی کی جنگ ہار گئی‘‘۔ادھر محکمہ صحت کے ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ6جولائی کوباگندر شوپیان کی ایک 55سالہ خاتون رضاکارانہ طور پر تشخیص کرانے کیلئے اسپتال پہنچی تھی اور خون کے نمونے دینے کے بعد جوں ہی خاتون گھر پہنچی تو وہ فوت ہوگئی۔ جی ایم سی اسپتال جموں کے میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر دارا سنگھ نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا’’ گول پولی جموں کا38سالہ نیشنل کانفرنس یوتھ لیڈر 7جولائی کو اسپتال میں بخار اور کھانسی کی وجہ سے داخل ہوالیکن رپورٹ مثبت آنے کے بعد وہ جمعرات کو شام 7بجکر 15منٹ پر فوت ہوگیا ‘‘۔ 
سکمز صورہ 
میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق احمد جان نے بتایا ’’ پچھلے 24گھنٹوں کے دوران 1647نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں سے 60مثبت جبکہ 1587کی رپورٹیں منفی آئیں‘‘۔ڈاکٹر جان نے بتایا کہ 60متاثرین میں سے 16سرینگر، 17بڈگام، 5اننت ناگ، 4کپوارہ،2شوپیان،6بارہمولہ، 5بانڈی پورہ، ایک کولگام اور ایک کرگل سے تعلق رکھتا ہے۔ڈاکٹر جان نے بتایا ’’  بڈگام ضلع کے 17متاثرین میں سے 4بگام،2چاڈورہ، ایک ناگم   ، ایک بنگال،  ایک بٹہ پورہ، ایک اومپورہ ، ایک گوپال پورہ چاڈورہ ، ایک ملہ پورہ اور ایک کھانڈبڈگام سے ہے۔ ڈاکٹر جان نے بتایا ’’سرینگر ضلع کے 16متاثرین میں سے سرینگر ایئرپورٹ پر تعینات رعناواری کا ایک ملازم،ایک عیدگاہ ، ایک بژہ پورہ، ایک  نوشہرہ ، ایک صورہ، ایک نواکدل، ایک جواہر نگر،  ایک نوہٹہ، ایک فتح کدل،ایک ایس آر گنج ، ایک نشاط ،ایک صفا کدل اور  ایک پیر باغ سے ہے‘‘۔میڈیکل سپر انٹنڈنٹ نے بتایا ’’ اننت ناگ کے 5متاثرین میں سے ایک شانگس ، ایک بجبہاڑہ،  ایک کوکر ناگ اور ایک مین ٹائون اننت ناگ سے تعلق رکھتا ہے‘‘۔ڈاکٹر جان نے بتایا ’’ بارہمولہ کے 6متاثرین میں سے 2 سوپور، ایک کانلی باغ،ایک ہردشیر،  اور ایک نور باغ بارہمولہ سے تعلق رکھتا ہے۔ ڈاکٹر جان کا مزید کہنا تھا کہ کپوارہ کے 4متاثرین میں سے ایک کرالہ پورہ، ایک ڈلون اور  ایک لولاب سے تعلق رکھتا ہے۔ڈاکٹر جان نے بتایا ’’ بانڈی پورہ کے 5متاثرین میں سے 4اشٹنگو اور ایک اتھمولہ بانڈی پورہ سے تعلق رکھتا ہے۔ ڈاکٹر جان بتایا کہ 2شوپیاں اور ایک مریض کولگام ضلع میں مثبت آیا ہے جبکہ ایک کا تعلق کرگل لداخ سے ہے۔ انسٹیچٹیوٹ کے شعبہ عوامی رابطہ کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کی جانب سے جاری کئے گئے اعدادوشمار میںبتایا گیا ہے کہ ابتک کل879مشتبہ مریضوں کا داخلہ کیا گیا جن میں سے600مریضوں کو قرنطینہ کی مدت مکمل کرنے کے بعد گھر روانہ کردیا گیا جبکہ148مثبت قرار دئے گئے مریضوں کو گھر بھیجا گیا ہے۔ابتک142927نمونوں کی تشخیص کی گئی ہے جن میں سے133275کو منفی قرار دیا گیا ہے جبکہ3315مریضوں کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں۔

جے وی سی بمنہ

پرنسپل میڈیکل کالج بمنہ ڈاکٹر ریاض احمد انتو نے بتایا ’’ پچھلے 24گھنٹوں کے دوران443نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں سے 14مثبت جبکہ429کی رپورٹیں منفی آئیں ‘‘۔ڈاکٹر ریاض انتو نے بتایا ’’سبھی 14متاثرین کا تعلق شوپیان ضلع سے ہے جن میں سے 5کلورہ،2گٹی پورہ،  ایک میمندر، ایک ریشی نگری، ایک ٹکرو، ایک ڈی پی ایک شوپیان، ایک کھاروارہ، ایک کانی ہامہ اور ایک میں ٹائون شوپیان سے تعلق رکھتا ہے‘‘۔

سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ

سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ میں پچھلے 24گھنٹوں کے دوران 122افراد کی رپورٹیں مثبت آئیں۔ ذرائع نے بتایا کہ متاثرہ 122افراد میں سے8سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ،5پی ایچ سی لنگیٹ، 3کیمونٹی ہیلتھ سینٹر کپوارہ، 4کیمونٹی ہیلتھ سینٹر ترہگام، 2پی ایچ سی ولگام، 4کیمونٹی ہیلتھ سینٹر کرالہ پورہ، ایک بون اینڈ جوئنٹ اسپتال برزلہ،  کشمیر ویلی نرسنگ ہوم کے 4،  بی بی کینٹ بادامی باغ کے 11فوجی اہلکار،  صدر اسپتال سرینگر کے 15،9رعناواری اسپتال،8ایس ڈی ایچ پٹن، 12ضلع اسپتال گاندربل، 20ایس ڈی ایچ سوپور، 5بی ایم اوشیری، 6سب ضلع اسپتال ٹنگڈار اور 3گورنمنٹ ڈگری کالج کپوارہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ متاثرین میں سے 63بٹالین ایس ایس بی  کے 3اہلکار،  ڈی پی ایل ہندوارہ کے 2پولیس اہلکار، آر آر کیمپ سوپور کے 3فوجی اہلکار، ڈی پی ایل شوپیان کا ایک پولیس اہلکار اور  117بٹالین سی آر پی ایف  گاندر بل کا  ایک اہلکار، سوپور ضلع عدالت کے 4ملازمین اور 4حاملہ خواتین بھی شامل ہیں۔ 

حکومتی بیان

حکومت کی طرف سے جاری میڈیا بلیٹن میں بتایا گیا ہے کہ نوول کورونا وائرس کے9,501 معاملات سامنے آئے ہیں جن میں سے3,652سرگرم معاملات ہیں ۔ اب تک5,695اَفراد شفایاب ہوئے ہیں ۔جموں وکشمیر میں کوروناوائرس سے مرنے والوں کی تعداد154تک پہنچ گئی ،جن میں سے 140کا تعلق کشمیر   صوبہ سے اور14کاتعلق جموں صوبہ سے ہیں۔اِس دوران جمعرات کومزید128مریض صحتیاب ہوئے ہیںجن میںجموں صوبے کے54اور کشمیر صوبے کے 74اَفراد شامل ہیں ، جن کو جموں و کشمیر کے مختلف ہسپتالوں سے رخصت کیا گیا۔بلیٹن میں مزید کہا گیا ہے کہ اب تک 4,29,787ٹیسٹوں کے نتائج دستیاب ہوئے ہیں جن میں سے  09جولائی2020ء کی شام تک 4,20,286نمونوں کی رِپورٹ منفی پائی گئی ہے ۔علاوہ ازیں اب تک3,06,434افراد کو نگرانی میں رکھا گیا ہے جن کا سفر ی پس منظر ہے اور جو مشتبہ معاملات کے رابطے میں آئے ہیں۔ ان میں 38,939اَفراد کو ہوم قرنطین میں رکھا گیا ہے ۔ اس کے علاوہ44 اَفراد کو ہسپتال قرنطین میں رکھا گیا ہے۔3,652کو ہسپتال آئیسولیشن میں رکھا گیا ہے جبکہ45,713 اَفراد کو گھروں میں نگرانی میں رکھا گیا ہے۔اسی طرح بلیٹن کے مطابق2,17,932اَفرادنے 28روزہ نگرانی مدت پوری کی ہے۔
 

کووڈ- 19کے بارے میں منفی سوچ نقصان دہ

ذہنی پریشانی سے مدافعتی نظام کمزور ہوسکتا ہے:ڈاکٹرانتو

 پرویز احمد
 
  سرینگر //پرنسپل سکمز میڈیکل کالج بمنہ ڈاکٹر ریاض احمد انتو نے کہا ہے کہ  ذہنی دبائو کی وجہ سے لوگوں کے مدافعتی نظام میں کمزوری آتی ہے۔ڈاکٹر ریاض انتو نے بتایا ’’ کالج کے شعبہ ذہنی امراض میں روانہ 30سے 40مریض آتے ہیں جو نقل و حرکت محدود ہونے کی وجہ سے ذہنی دبائو کا شکار ہوئے ہیں۔ ڈاکٹر ریاض انتو نے بتایا کہ اسپتالوں میں زیر علاج کورونا وائرس مریضوں کیلئے علاج کے ساتھ ساتھ تفریح کا انتظام کرنا بھی لازمی بن گیا ہے۔ ڈاکٹر ریاض انتو نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ کورونا وائرس  کے بارے میں سوچنا بند کرکے احتیاطی تدابیر پر عمل کرنے کی کوشش کریں۔  ڈاکٹر ریاض انتو نے کہا ’’کورونا وائرس  کے بارے میں سوچنا بند کر دیں کیونکہ یہ آپ کو مشکلات میں ڈال سکتا ہے‘‘۔ڈاکٹر ریاض انتو نے بتایا ’’ذہنی پریشانی سے آپ کا مدافعتی نظام کمزور ہوسکتا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ مدافعتی نظام کو مضبوط کرنے کے مختلف طریقے ہیں، ان میں سے ایک روزانہ ورزش بھی ہے۔  انہوں نے کہا ’’ روزانہ ورزش انسان کے مدافعتی نظام کو مضبوط بناتا ہے اور جتنا انسان کا دماغ مضبوط ہوگا ، اتنا اس کیلئے بہتر ہے۔ ڈاکٹر ریاض انتو نے کہا کہ کورونا وائرس یا دیگر وائرس ہمیشہ سے ہی شکار کی تلاش میں رہتے ہیں اور انسان ان کیلئے بہترین شکار ہے۔  انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس ناک، آنکھ اور منہ سے اندر جاسکتا ہے اور اس کیلئے ہمیشہ سے ہی ماسک پہننے اور ہاتھ دھونے کی ضرورت ہے۔  انہوں نے کہا کہ سماجی دوریاں اور ماسک کا استعمال کرنا لازمی ہے۔ ڈاکٹر ریاض انتو نے بتایا ’’ کیسوں میں اضافہ کے ساتھ اموات میں بھی اضافہ ہوگا۔ ڈاکٹر ریاض انتو نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ غیر ضروری طور پر اسپتال جانا ترک کریں۔ 
 
 

مشیربھٹناگر کاایمبولنس ڈرائیور کو انعام سے نوازنے کااعلان

نیوزڈیسک
 
سری نگر//لیفٹیننٹ گورنر کے مشیر راجیو رائے بھٹناگر نے سی ایم او سری نگر کے ساتھ کام کرنے والے ایمبولنس ڈرائیور جمیل احمدکو،کو وِڈ۔ 19وَبا کے دوران ان کی لا مثال خدمات کے لئے نقد انعام اور توصیفی سندسے نوازنے کا اعلان کیا۔  انعام کا اعلان کرتے ہوئے مشیر بھٹناگر نے کہا کہ ہمیں محکمہ صحت کے فرنٹ لائین ورکروں کی حوصلہ افزائی کرنی چاہیئے جو اس وَبا سے نمٹنے کے لئے تن دہی سے کام کر رہے ہیں۔اُنہوں نے کہا کہ متعدد مشکلات کے باوجود وہ جموں وکشمیر کے عوام کی صحت و تندرستی کو یقینی بنارہے ہیں۔ اُنہوں نے جموںوکشمیر کے طبی اِداروں کے سربراہوں کو اس وَبا کے دوران بہترین کار کردگی کا مظاہرہ کرنے والے عملے کے اَفراد کے نام پیش کرنے کے لئے کہا تاکہ اُنہیں بھی معقول انعامات سے نوازا جاسکے۔واضح رہے کہ کووِڈ۔19وَبا ء کے دوران مذکورہ ڈرائیور دِن رات کا م کرتا رہا ہے ۔اُنہوں نے اکثر اَوقات رضاکارانہ طورفرائض کی انجام دہی کے لئے اپنی خدمات پیش کی ہیں۔دریں اثنا مشیر بھٹناگر نے لوگوں کو غیر ضروری سفر اور گھروں سے بے مقصد باہر نکلنے سے احتراز کرنے کے لئے کہا ہے اور گھر سے باہر نکلنے کی صورت میں لوگوں کے تحفظ کے لئے صحت حکام کی جانب سے جاری ایس او پیز اور رہنماخطوط پر من و عن عمل کرنے کی تلقین کی ہے ۔
 

 

تازہ ترین