نیشنل کانفرنس کی طرف سے اسمبلی حدبندی کمیشن مسترد

پارٹی کے اراکین پارلیمان حصہ نہیں بنیں گے

تاریخ    30 مئی 2020 (00 : 03 AM)   


سرینگر// نیشنل کانفرنس نے حکومت ہند کی جانب سے تشکیل دیئے گئے اسمبلی حلقوں کے حد بندی کمیشن کو مسترد کردیا ہے۔پارٹی نے ایک بیان میں کہا ہے کہ انکے تین اراکین پارلیمان مذکورہ کمیشن کا بطور ممبرحصہ نہیں بنیں گے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ حدبندی کمیشن جموں وکشمیر تنظیم نو ایکٹ2019کا حصہ ہے ، جسے نیشنل کانفرنس نے عدالت عظمیٰ کے اندر اور باہر چیلنج کیا ہے۔ حد بندی کمیشن میں حصہ لینا 5اگست 2019کے واقعات کو قبول کرنے کے مترادف ہوگا اور نیشنل کانفرنس ایسا کرنے کیلئے تیار نہیں ہے۔ بیان میں مزید کہا گیا کہ جموں وکشمیر آئین کے مطابق اسمبلی حلقوں کی حدبندی2026میں پورے ملک کیساتھ ہوگی۔ ریاست کے اسمبلی حلقوں کی حد بندی آخری بار 90کی دہائی میں ہوئی تھی۔ اس کے بعد جموں و کشمیر کے آئین میں متفقہ طور پر ایک ترمیم کی گئی ،جس میں تمام علاقائی جماعتوں ، کانگریس اور بی جے پی نے 2026 میں ملک کے باقی حصوں کے ساتھ حد بندی کے ساتھ جانے کیلئے اس ترمیم کے حق میں ووٹ دیا۔ لہٰذا حدبندی کمیشن کا قیام غیر ضروری ہے۔ 

تازہ ترین