لیفٹیننٹ گورنر کاجموں میں ریلوے سٹیشن اور بازاروں کا دورہ

لاک ڈاون میں نرمی کے بعد کی صورتحال کا جائزہ لیا

24 مئی 2020 (00 : 03 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
 جموں// لیفٹیننٹ گورنر ر گریش چندر مر مو نے زمینی صورتحال کا موقعہ پر جائزہ لینے کیلئے شہر کے معروف بازاروں کا معائینہ کیا۔ لیفٹیننٹ گورنر نے ریلوے سٹیشن اور جموں شہر کے معروف مقامات اور بازاروں کا دورہ کر کے لاک ڈاون پابندیوں میں نرمی کے اعلان کے بعد زمینی سطح پر صورتحال کا موقعہ پر جائزہ لیا۔ریلوے سٹیشن پر لیفٹیننٹ گورنر نے خصوصی ریل گاڑیوں کے ذریعے واپس لائے جارہے درماندہ لوگوں کو فراہم کی جارہی سہولیا ت کا جائزہ لیا۔ ڈپٹی کمشنر جموں نے اُنہیں بتایا کہ واپس آنے والوں کے نمونے لینے اور دیگر متعلقہ معاملات کے بارے میں تفصیل دی۔اُنہوں نے بتایا کہ زمینی سطح پر مؤثر کام کاج یقینی بنانے کے لئے مختلف سطحوں پر نوڈل آفیسر مقرر کئے گئے ہیں اور جموں ریلوے سٹیشن پر اب تک 10خصوصی ریل گاڑیوں میں 9000 درماندہ مسافروں کا خیرمقد م کیا گیا۔لیفٹیننٹ گورنر نے کہا کہ کووِڈ۔19 ایس او پیز کو سختی سے لاگو کیا جانا چاہیئے اور مسافروں کے ریل گاڑیوں سے اُترنے ،ان کے نمونے لینے اور انہیں اپنے متعلقہ اضلاع بھیجنے کے تمام عمل کے دوران پروٹوکالز کی عمل پیرایقینی بنائی جانی چاہیئے ۔اُنہوں نے ریلوے سٹیشن پر مسافروں کے لئے سینٹائز ر ماسک دستیاب رکھنے پر زور دیااور پی پی ای کِٹس کا پروٹوکال کے تحت ٹھکانے لگانے کی اہمیت کو اُجاگر کیا ۔اُنہوں نے واپس آنے والوں کے لئے اشیائے خورد نوش وافر مقدار میں فراہم رکھنے کے ساتھ اُن کے عارضی قیام کے مقام پر پنکھوں وغیر ہ کا معقو ل انتظام یقینی بنا یا جائے۔لیفٹیننٹ گورنر نے ضلع میں نمونے لینے کے عمل سے متعلق بھی تفصیلات طلب کرتے ہوئے متعلقہ افسران کو بروقت نمونے لینے اور ٹیسٹنگ عمل میں سرعت لانے کی ہدایت دی۔بعد میں لیفٹیننٹ گورنر نے لاک ڈاون پابندیوں میں نرمی کے بعد زمینی صورتحال کا موقعہ پر جائزہ لینے کے لئے جموں شہر کے معروف مقامات اور بازاروں کا دورہ کیا۔ اُنہوں نے اَفسروں پر زور دیا کہ وہ لوگوں کو موجودہ کووِڈ۔19خطرے کے بارے میں جانکاری فراہم کریں اور اُنہیں ماسک پہننے اور عوامی مقامات پر سماجی دُوری بنائے رکھنے سے متعلق بھی عمل کرنے کے لئے کہا۔اِس موقعہ پر اے ڈی جی پی ، ایس ایس پی جموں ، ایس ایس پی ریلوے اور سول انتظامیہ اور پولیس کے اعلیٰ افسران موجود تھے۔