تازہ ترین

ڈیڑھ ماہ سے قرنطین میں رکھے گئے مزدورگھر جانے کیلئے بیتاب

’یہاں کھاناتوملتا ہے لیکن ہمارے گھروالے بھوکے مررہے ہیں‘

تاریخ    24 مئی 2020 (00 : 03 AM)   


یواین آئی
سری نگر// سرینگر کے مضافات نوگام میں واقع ایک قرنطینہ مرکز میں زائد از ڈیڑھ ماہ سے رکھے گئے بیرون وادی کے مزدوروں کا کہنا ہے کہ کورونا ٹیسٹ دو بار منفی آنے کے باوجود بھی انہیں گھر واپس بھیجنے کے لئے کوئی بندوبست نہیں کیا جارہا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہاں رکھے گئے اینٹ بٹھوں میں کام کرنے والے مزدوروں کو تو بٹھوں پر جانے کی اجازت دی گئی لیکن ہمیں گھر واپس جانے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے۔ ان مزدوروں کی مانگ ہے کہ وہ اپنے خرچے پر گھر جائیں گے حکومت صرف ان کے لئے گاڑیوں کا انتظام کرے۔مذکورہ قرنطینہ میں رکھے گئے بیرون وادی کے مزدوروں کے ایک گروپ نے فون پر اپنی روداد بیان کرتے ہوئے بتایا،’’ہمیں یہاں چار اپریل کو رکھا گیا اور کہا گیا کہ چودہ دن گذر جانے کے بعد گھر روانہ کریں گے لیکن اب دو ماہ ہونے والے ہیں لیکن ہمارے گھر جانے کا کوئی انتظام نہیں کیا جارہا ہے‘‘۔ایک مزدور نے کہا کہ یہاں جو افسر آتا ہے وہ کہتا ہے کہ فلاں تاریخ کو چھوڑ دیں گے لیکن اب تک یہ سب محض وعدے ثابت ہوئے۔انہوں نے کہا،’’ہم یہاں پہلے تین سو مزدور تھے جو یہاں وادی میں مختلف کام کرتے ہیں ان میں سے یہاں بٹھوں میں کام کرنے والے مزدوروں کو تو اپنے اپنے بٹھے مالکان اپنے ساتھ لے گئے اب ہم یہاں صرف چالیس بندے رہ گئے ہیں اور ہم سب اتر پردیش کے ہیں جو بھی افسر یہاں آتا ہے وہ ہمیں کہتا ہے کہ فلاں تاریخ کو گھر بھیج دیں گے لیکن کوئی انتظام نہیں کیا جاتا ہے‘‘۔موصوف مزدور تو جو یہاں ترکھان کا کام کرتا تھا، نے بتایا کہ ہم اپنے خرچے پر جانے کے لئے تیار ہیں حکومت صرف ہمارے لئے اجازت ناموں اور گاڑیوں کا انتظام کرے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں یہاں کھانا تو ملتا ہے لیکن ہمارے گھر والے بھوکے مررہے ہیں۔