تازہ ترین

ایک دن میں ریکارڈ اضافہ،20مثبت، تعداد95 | سکمز میں 31اور سی ڈی اسپتال میں 18افراد آئیسولیشن وارڈوں میں داخل

تاریخ    5 اپریل 2020 (00 : 12 AM)   


پرویز احمد
سرینگر //گذشتہ37دنوں میں پہلی مرتبہ جموں کشمیر میں ایک دن میں سب سے زیادہ مثبت کیس سنیچر کو سامنے آئے، جن کی تعداد 20ہے۔ان میں سے 17وادی کشمیر سے جبکہ 3جموں کے ادہمپور سے تعلق رکھتے ہیں۔اس نئی لہر کیساتھ ہی متاثرہ افراد کی کل تعداد95ہوگئی ہے جن میں 74 وادی جبکہ 21جموں صوبے سے تعلق رکھتے ہیں۔وادی میں مثبت قرار دئے گئے17رپورٹوں میں سے بانڈی پورہ کے 5، کپوارہ کے 6،ٹنگمرگ کے 3، پلوامہ کا ایک اور شوپیان کے میان بیوی شامل ہیں۔جبکہ3 مریض جموں کے ادھمپور ضلع سے ہیں۔ 

سکمز میں داخل مریض

کشمیر میں سنیچر کو مثبت قرار دئے گئے 17کورونا وائرس مریضوں میں سے 13کے خون کی تشخیص سکمز میں کی گئی جبکہ 3 کی رپورٹ سی ڈی اسپتال سے مثبت قرار دی گئی۔ سکمز صورہ میں مثبت قرار دئے گئے14رپورٹوں میں سے 8مریض جی ایم سی بارہمولہ میں زیر علاج ہیں جبکہ 5سکمز کے آئیسولیشن وارڈ میں داخل ہیں۔سکمز ذرائع نے بتایا ’’ 13 مریضوں میں سے 6کپوارہ، 5بانڈی پورہ اور 3بارہمولہ ضلع سے تعلق رکھتے ہیں‘‘۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر فاروق احمد جان نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا ’’آئیسولیشن وارڈ میں31نئے مشتبہ مریضوں کو داخل کیا گیا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا ’’42نمونوں کی تشخیص ہوئی جن میں 13مثبت آئے جن میں سے 8جی ایم سی بارہمولہ اور 5سکمز میں زیر علاج ہیں‘‘۔ ان کا کہنا تھا کہ جی ایم سی بارہمولہ کی جانب سے بھیجے گئے نمونوں میں سے جو 8مثبت آئے ، ان میں5بانڈی پورہ سے ہیں جو مثبت مریضوں کے ساتھ رابطے میں آئے تھے اور کچھ جموں میں ایک اجتماع میں بھی شریک ہوئے تھے۔کپوارہ میں مثبت قرار دیئے گئے 6افراد میں سے میاں بیوی اور انکا 27سالہ بیٹاکے علاوہ ہندوارہ کی دو خواتین شامل ہیں۔ یہ سبھی لوگ بنلگہ دیش سے واپس آئے اور نظام الدین مرکز میں ٹھہرے تھے۔چھٹا کیس ٹنگڈار سے تعلق رکھتا ہے جو بھوپال سے واپس آکر دلی مرکزمیں ایک ہفتے تک ٹھہرا تھا۔ انہوں نے کہا کہ3کا تعلق بارہمولہ کے ٹنگمرگ علاقے سے ہے جو ایک فوت ہوئے شخص کے بیٹے کے رشتہ دار ہیں جن کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے۔ان میں فوت ہوئے شخص کے پیشے سے استاد بیٹے کی اہلیہ،انکی 8سالہ بیٹی اور 25سالہ رشتہ دار شامل ہے۔انہوں نے کہا کہ سکمز کے آئیسولیشن وارڈ میں داخل کل مریضوں کی تعداد 21ہوگئی ہے جو کورونا وائرس سے متاثر ہیں جبکہ قرنطینہ وارڈ میں داخل افراد کی کل تعداد 31ہے‘‘۔ سکمز کی جانب سے سنیچر کو جاری کئے گئے ا عدادوشمار میں بتایا گیا ہے کہ ابتک 253مشتبہ کورونا وائرس مریضوں کا علاج و معالجہ کیا گیا جن میں 22ابھی بھی آئیسولیشن وارڈ میں داخل ہیں جبکہ قرنطینہ میں صرف ایک مشتبہ مریض ہے۔سکمز کے شعبہ عوامی رابطہ کی جانب سے جاری کئے گئے بیان میں مزید بتایا گیا ہے کہ اسپتال سے 219مریضوں کو گھر بھیج دیا گیا ہے جبکہ پہلی خاتون کورونا وائرس مریض کو بھی گھر روانہ کردیا گیا ہے۔ سکمز لیبارٹری میں کل 392نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں 37کی رپورٹ مثبت آئی جبکہ 355 رپورٹیں منفی قرار دی گئیں۔

سی ڈی اسپتال

سی ڈی اسپتال ڈلگیٹ میں  5 نئے مشتبہ مریضوں کو داخل کیا گیا ہے جبکہ 20کورونا وائرس مریضوں میں سے 7کی رپورٹ منفی آئی ہے اور انہیں قرنطینہ کیلئے کشمیر ویلی نرسنگ ہوم سونہ وار منتقل کیا جارہا ہے۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ ڈاکٹر محمد سلیم ٹاک نے بتایا ’’5مشتبہ مریضوں کو سنیچر کو داخل کیا گیا اور اس طرح اسپتال کے آئیسولیشن وارڈ میں موجود افراد کی تعداد 18ہوگئی ہے‘‘۔ انہوں نے کہا ’’ کورونا وائرس میں مبتلا 20مریضوں میں سے 7کی رپورٹ منفی آئی ہے اور اب کورونا وائرس سے متاثر 13افراد موجود ہے‘‘۔انکا مزید کہنا تھا کہ سی ڈی اسپتال کی لیبارٹری میں سنیچر کو ایک مریض کو مثبت قرار دیا گیا لیکن وہ مریض ضلع اسپتال پلوامہ میں زیر علاج ہے۔ جبکہ سی ڈی اسپتال میں ہی شام کو شوپیان میں زیر علاج میاں بیوی کا ٹیسٹ بھی مثبت آیا ہے۔سی ڈی اسپتال تشخیصی لیبارٹری میں سنیچر کو 34مشتبہ مریضوں کے خون کی تشخیص کی گئی، جن میں سے تین کی رپورٹ مثبت آئی۔گورنمنٹ میڈیکل کالج ترجمان ڈاکٹر محمد سلیم خان نے بتایا ’’ جی ایم سی تشخیصی لیبارٹری میں اسوقت 64نمونوں کی تشخیص پر کام جاری ہے جن میں 33نمونے رعناواری، 20جی ایم سی سرینگر سے منسلک اسپتالوں اور 11 سی ڈی اسپتال  کے ہیں‘‘۔انہوں نے کہا’’ 11مشتبہ مریضوں کی تشخیصی رپورٹ منفی آئی تھی لیکن ہم نے انکے خون کی تشخیص دوبارہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

جموں

جموں سے تعلق رکھنے والے 3مشتبہ مریضوں کی رپورٹ مثبت آنے کی خبر ٹیوٹر پر حکومتی ترجمان روہت کنسل نے دی’’نرسو ادھمپور سے تعلق رکھنے والے مزید 3افراد کی رپورٹیں مثبت آئی ہیں اور یہ تینوں ادھمپور میں ان کورونا وائرس مریضوں کے رابطے میں آئے ہیں جو بیرون ممالک سے سفر کرکے آئے ہیں‘‘۔ادھم پور میں مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ نرسو کا جو شخص تبلیغی جماعت کے ساتھ دلی میں تھا ، گھر واپسی کے بعد اس کے رابطے میں علاقے کے 40افراد آئے تھے جنکی شناخت کی گئی ہے اور ان ہی 40افراد میں سے سنیچر کو 3میں کورونا وائرس کی موجودگی کی تصدیق ہوگئی ہے۔ 

سرکاری بیان

سرکار کی جانب سے سنیچر کی شام جاری کئے گئے ا عدادوشمار میں بتایا گیا ہے کہ جموں و کشمیر میں  ابتک28ہزار545افراد کو نگرانی کے دائرے میں لایا گیا ہے جن میں 10ہزار 606افراد کو گھروں اور سرکار کی جانب سے مختص کئے گئے قرنطینہ مراکز میں زیر نگرانی رکھا گیا ہے۔ 682افراد کو سرکاری اسپتالوں میں قرنطینہ میں رکھا پڑا ہے جبکہ 86افراد کو آئیسولیشن وارڈوں میں داخل کرنا پڑا ہے۔  4ہزار376افراد نے سرولنس کی مدت مکمل کرلی ہے جبکہ12ہزار795افراد کو گھروں میں زیرنگرانی رکھا گیا ہے۔ کل1397نمونوں کی تشخیص کی گئی جن میں 1250منفی قرار دئے گئے جبکہ 92کی رپورٹ مثبت قرار دی گئی ہے۔  مثبت قرار دئے گئے 92نمونوں میں سے 71کشمیر جبکہ 31جموں صوبے ہے۔ جموں میں18ابھی زیر علاج ہیں جبکہ 3مریض صحتیاب ہوکر گھر چلے گئے ہیں۔سرکاری بیان میں بتایا گیا ہے کہ کشمیر میں 68مریض ابھی زیر علاج ہیں جبکہ 2کی موت ہوئی ہے اور ایک مریضہ صحتیاب ہوکر گھر لوٹ گئی ہے اور 55مشتبہ مریضوں کی رپورٹ ابھی آنا باقی ہے۔ 
 

تازہ ترین