عدالت عظمیٰ میں حد بندی کمیشن کیخلاف عرضی پر سماعت

مرکز، جموں کشمیر انتظامیہ اور الیکشن کمیشن کو نوٹس

تاریخ    14 مئی 2022 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
نئی دہلی//سپریم کورٹ نے جمعہ کو مرکز، جموں اور کشمیر انتظامیہ اور الیکشن کمیشن آف انڈیاسے دو کشمیر ی باشندوں کی درخواست پر جواب طلب کیا جس میں حکومت کی جانب سے حد بندی کمیشن کی تشکیل کے فیصلے کو چیلنج کیا گیا تھا۔ مرکز کے زیر انتظام علاقے میں اسمبلی اور لوک سبھا کے حلقے جسٹس سنجے کشن کول اور ایم ایم سندریش کی بنچ نے مرکز اور الیکشن کمیشن آف انڈیا کو نوٹس جاری کیا اور چھ ہفتوں میں ان سے جواب طلب کیا اور کہا کہ اس کے بعد دو ہفتوں میں جوابی حلف نامہ داخل کیا جائے گا۔شروع میں سرینگر کے دو رہائشیوں حاجی عبدالغنی خان اور ڈاکٹر محمد ایوب متو کی طرف سے پیش ہونے والے وکیل نے کہا کہ آئین کی شق کے برخلاف یہ حد بندی کی مشق کی گئی اور حدود میں ردوبدل اور توسیعی علاقوں کو شامل نہیں کیا جا سکتا۔.بنچ نے کہا کہ حد بندی کمیشن کچھ عرصہ پہلے تشکیل دیا گیا تھا اور درخواست گزاروں سے پوچھا کہ اس وقت وہ کہاں تھے اور انہوں نے کمیشن کی تشکیل کو کیوں چیلنج نہیں کیا۔وکیل نے کہا کہ حد بندی کے حکم کے مطابق، یہ الیکشن کمیشن ہے جو کوئی بھی تبدیلی کرنے کا اختیار رکھتا ہے۔بنچ نے کہا کہ وہ آئین کے آرٹیکل 32 کے تحت ایک مخصوص سوال پوچھ رہا ہے کہ آپ نے خود کمیشن کی تشکیل کو چیلنج کیوں نہیں کیا اور کیا آپ آرٹیکل 370 کی منسوخی کو بھی چیلنج کرتے ہیں۔بنچ نے وکیل سے، جو قابل اعتراض گذارشات کر رہے تھے، اپنے الفاظ کا صحیح انتخاب کرنے کو کہا اور کہا کہ کشمیر ہمیشہ سے ہندوستان کا حصہ ہے اور صرف ایک خصوصی شق کو ہٹا دیا گیا ہے۔سالیسٹر جنرل تشار مہتا نے کہا کہ حد بندی صرف الیکشن کمیشن آف انڈیا کر سکتا ہے نہ کہ حد بندی کمیشن۔مہتا نے کہا کہ دوسری بات، انہوں نے مردم شماری پر سوالات اٹھائے ہیں۔"سوالوں کا جواب تنظیم نو کے قانون میں ہے۔ حد بندی کی دو قسمیں ہیں۔ ایک جغرافیہ ہے جو حد بندی کمیشن کرتا ہے اور دوسرا الیکشن کمیشن سیٹوں کے ریزرویشن کے حوالے سے ہے''، ۔مہتا نے کہا کہ عرضی گزاروں کا معاملہ یہ ہے کہ دفعہ 370 ختم ہونے کے بعد مردم شماری 2026 میں ہی ہوگی۔اس کے بعد بنچ نے نوٹ کیاکہ درخواست گزاروں نے آئین کے آرٹیکل 370 کی منسوخی کو چیلنج نہیں کیا ہے لہذا آرٹیکل 370 سے متعلق درخواستوں کو نظر انداز کیا جائے۔اس میں کہا گیا ہے کہ چیلنج 6 مارچ 2020 اور 3 مارچ 2021 کے نوٹیفکیشن کے مطابق حد بندی کے بارے میں ہے اور مرکز اور ای سی آئی کو اپنے جواب داخل کرنے کی ہدایت دی ہے۔درخواست گزاروں کے وکیل نے کہا کہ حکومت حد بندی کا حکم پارلیمنٹ کے سامنے رکھے گی اور اس سے معاملہ مزید پیچیدہ ہو جائے گا۔بنچ نے وکیل سے کہا کہ وہ چاہتے ہیں کہ عدالت حکومت کو پارلیمنٹ کے سامنے پیپر پیش کرنے سے روکے، اگر آپ بہت پریشان تھے تو آپ نے اسے دو سال پہلے کیوں نہیں اٹھایا؟۔اس نے اس معاملے کی مزید سماعت 30 اگست کو مقرر کی ہے۔
 

تازہ ترین