غزلیات

تاریخ    1 مئی 2022 (00 : 01 AM)   


 ناصر کاظمی کی زمین میں
 
جب سے تُو نے ہمیں بیگانہ بنا رکھا  ہے
"سنگ ہر شخص نے ہاتھوں میں اُٹھا رکھا  ہے"
 نہجِ نبوی سے مسلمان گریزاں کیوں ہیں
 نورِ وحدت کو جہالت میں چھپا رکھا ہے
 اب کہاں آئیں گے رحمت کے فرشتے در پر
ہم نے ابلیس کو آنگن میں بٹھا رکھا ہے
 ہم ہیں وہ قوم کہ جس سے ہے خدا روٹھا ہوا
ہم نے دنیا کو عذابوں میں پھنسا رکھا ہے
 اسطرف بھی کبھی آجاتا مرے جانِ عزیز
میں نے تیرے لئے کاشانہ سجا رکھا ہے
تنگدستی کی اذئیت سے بچا رہتا ہوں
 شکر ہے ہاتھ سدا اپنا کُھلا رکھا  ہے
 اب کہاں ہوگا سکوں ہم کو میسر بسملؔ
 ربِ اقدس کو تو اب ہم نے بُھلا رکھا ہے
 
خورشیدبسملؔؔ
تھنہ منڈی ، راجوری
موبائل نمبر؛9622045323
غزلیات
اگر پاسِ وفاداری نہيں ہے 
عداوت پھر وہ معیاری نہيں  ہے
 
جہاں جائے گا وہ ناکام ہو گا
اگر فطرت میں عیاری نہیں ہے 
 
سمجھتا ہے مجھے اپنا  وہ دشمن
ابھی اس میں سمجھداری نہیں ہے
 
ہوا  ہے بھوک سے بے ہوش بچہ
وگرنہ،کوئی بیماری نہیں ہے
 
جواں بیٹی ہے گھر مفلس کے لیکن
کوئی شادی کی تیاری نہیں ہے 
 
ہیں چھالے پاؤں میں اور دور منزل
مگر ہمت ابھی ہاری نہیں ہے 
 
سناتا ہوں ادب کی محفلوں میں
مری تخلیق، بازاری نہیں ہے 
 
رفیق عثمانی
 آکولہ ( مہاراشٹر )
rafiqueusmani@gmail.com
 
 
دیکھ لو آ کر کبھی بیمار دل 
اب مرے بس میں نہیں سرکار! دل
زندگی کی فلم جاری ہے مگر
ختم شد تیرے سبھی کردار دل
چھوڑئے جھوٹے دلاسے، بولئے!
دیکھ لے گا کب یہاں گلزار دل
فلسفہ من تو شدم تو من شدی
زندگی کا راز ہے عیّار دل
یاد کرکے خوف آتا ہے مجھے
لُٹ گیا کیسے مرا گھربار دل!
کہتے کہتے عمر گزری ''لوٹ جا''
کیوں نہیں سنتا مری اک بار دل
تو بھی تنہا میں بھی تنہا، اس لئے
بات مجھ سے کر لیا کر یار دل!
دیکھ لے منصور جی تیری طرح
ہوگیا کب کا مرا سنگسار دل!
 
شاہیؔ شہباز
وشہ بگ پلوامہ
موبائل نمبر؛7889899025 
 
 
خُود کو جب سے غریب ہی دیکھا
سایہ تب سے عجیب ہی دیکھا
میری باریک بین کیوں آنکھیں
اُن نے خوابِ نقیب ہی دیکھا
آج تو محوِ ذات ہے ہونا
دور کا وا قریب ہی دیکھا
میرے نادان عشق سے کہنا
طوقِ گردن رقیب ہی دیکھا
کیا ہوا اے حیاتِ ماہ و سال
میں نے تجھ کو شکیب ہی دیکھا
میں نے محتاجی اورگدائی میں
پھر سے یاورؔ حبیب ہی دیکھا
 
یاورؔ حبیب ڈار
بڈکوٹ ہندوارہ
موبائل نمبر؛6005929160
 
 
وہ نہیں جب آس پاس ہوتا ہے
دِل میرا کتنا اُداس ہوتا ہے
 
گذرتی ہے جب اپنے دِل پر کبھی
کِسی کے درد کا احساس ہوتا ہے
 
چاہت ملتی ہے جسے محبوب کی
شخص بہت ہی وہ خاص ہوتاہے
 
ہوتا ہے کیا اور غمِ زیست
غمِ عشق ہی کا اقتباس ہوتا ہے
 
اثر ہوتا ہے اُس پہ اُتنا ہی 
صورتؔ دِل جتنا حساس ہوتا ہے
 
صورت سنگھ
رام بن، جموں
موبائل نمبر؛9622304549
 
 
دل کے دروں سے مجھ کو صدا دے رہا ہے تُو
اس ناتوان کو کیسی سزا دے رہا ہے تُو
 
یہ امتحان کھٹن ہوا ہے میرے لئےاب
اُمیدیہی ہے کہ جزا دے رہا ہے تو
 
وہ ڈگمگائے تھے جو قدم تم کو دیکھ لے
ہر ہر قدم پہ اُس کو جِلا دے رہا ہے تو
 
ناحق کو اپنے حق پر مسلط میں ہونے دوںَ
یہ کیسے سچ کا مجھ کو پتا دے رہا ہے تُو
 
ایمان اُس پہ رکھتی ہوں، کرتی ہوں توّکل
ہر بات سے تو زخمِ اَنا دے رہا ہے تُو
 
دل خوب دُکھا، جب مجھے احساس ہوا یہ
اس ماہ جبینؔ پہ خود کو اب جتلا رہا ہے تو
 
ماہ جبینؔ اختر 
لرگام ترال، کشمیر
 

تازہ ترین