تازہ ترین

پکل ڈول پاور پروجیکٹ میں مقامی لوگوں کو نوکریوں سے انکار پر این سی کو تشویش

تاریخ    26 جنوری 2022 (00 : 01 AM)   


نیوز ڈیسک
 جموں//چیئرپرسن ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کونسل کشتواڑ پوجا ٹھاکر اور دیگر کی طرف سے ڈنگدورو میں پکل ڈول ہائیڈرو الیکٹرک پروجیکٹ کی 1000 میگاواٹ کی تعمیر میں پیشہ ور افراد کے علاوہ مقامی ہنر مند اور غیر ہنر مند افرادی قوت کو جذب کرنے کے حوالے سے اٹھائے جانے والے مسائل کی بھرپور حمایت کرتے ہوئے صوبائی صدر نیشنل کانفرنس مسٹر رتن لال گپتا نے اس معاملے کو حل کرنے میں انتظامی بے حسی پر افسوس کا اظہار کیا اور اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ ایم او یو پر عمل درآمد کو یقینی بنانے میں ایگزیکیوٹنگ ایجنسی غالب ہے۔ رتن لال گپتا نے کہا، "عمل درآمد کرنے والی ایجنسی کو اس منصوبے کی تعمیر میں مقامی افرادی قوت کو شامل کرنے کی ضرورت ہے لیکن وہ انتظامیہ کے ساتھ کیے گئے معاہدے کے حوالے سے بہت کم توجہ دے رہے ہیں"۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ نوکر شاہی کے اعلیٰ ظرف کی بات کرتا ہے جو عوامی مفادات کی بہت زیادہ پرواہ کرتا ہے۔ گپتا نے کہاکہ وزارت اس معاملے کو ایگزیکیوٹنگ ایجنسی کے ساتھ نہ اٹھا رہی ہے، وہ اس احتجاج کا نوٹس لینے کی زحمت نہیں کر رہے ہیں، جس کی قیادت ڈسٹرکٹ ڈیولپمنٹ کونسل کے ایک منتخب چیئرپرسن اور دیگر کونسلرز کر رہے ہیں۔ اس سے نچلی سطح کے جمہوری اداروں کو بااختیار بنانے میں انتظامیہ کے ارادے پر بھی شکوک پیدا ہوتے ہیں۔ ایک طرف انتظامیہ نے منتخب نمائندوں کو لیٹر آف وارنٹ کی مد میں پروٹوکول دے رکھا ہے اور دوسری طرف انہیں دھرنوں پر بیٹھنے پر مجبور کر کے ذلیل کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ڈی ڈی سی چیئرپرسن نوجوانوں اور بے روزگاروں سے متعلق مسائل کو اٹھا رہے ہیں جو انتظامیہ کو یکساں طور پر فکر مند ہونا چاہئے تھا، جو جان بوجھ کر دوسری طرف دیکھ رہی ہے، حیرت ہے کہ کس بات پر غور کیا جائے۔ صوبائی صدر نے کہا کہ منتخب نمائندوں کی پوزیشن کو مجروح کرنا جمہوری اقدار کے منافی ہے اور ایسا کرکے انتظامیہ کی جانب سے خطرناک رجحان کو رواج دیا جا رہا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس قسم کی اونچ نیچ اور نوکر شاہی کی بالادستی ناقابل قبول ہے اور نیشنل کانفرنس ان غیر جمہوری رجحانات کا مقابلہ کرے گی۔ صوبائی صدر نے احتجاجی ڈی ڈی سی چیئرپرسن اور دیگر کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے جو کہ گزشتہ پانچ دنوں سے تحصیل آفس داچھن میں دھرنے پر بیٹھے ہیں، انتظامیہ پر زور دیا کہ وہ مسائل کا جائزہ لے اور ان کو ترجیحی بنیادوں پر حل کرے۔