۔35اے کا دفاع اور قیدیوں کی حالت زار

 سرینگر//دفعہ35اے  کے حق میں اورجیلوں میں قیدیوں کی حالت زار اور مزاحمتی قیادت کو مبینہ طور خوف زدہ کرنے کے خلاف مزاحمتی جماعتوں کی طرف سے لالچوک اورنوہٹہ اور حیدرپورہ میںاحتجاجی جلوس برآمد ہوئے۔نماز جمعہ کے بعد سرینگر کے مائسمہ علاقے سے لبریشن فرنٹ چیئرمین محمد یاسین ملک کی قیادت میں احتجاجی جلوس برآمد کیا گیا،جس میں مزاحمتی کارکنوں کے علاوہ تاجروں اور دیگر شعبوں سے تعلق رکھنے والے لوگوںنے بھی شرکت کی۔احتجاجی مظاہرین نے ہاتھوں میں بینر اور پلے کارڑ اٹھا رکھے تھے،جن پر قیدیوں اور دفاع35ائے کی حق میں تحریر درج کی گئی تھی۔مظاہرین مدینہ چوک میں جمع ہوئے جہاں محمد یاسین ملک نے مظاہرین سے خطاب کیا۔اس دوران دفعہ 35-Aکو منسوخ کرنے اور مختلف جیل خانوں میں نظر بندوں کی مبینہ ابتر صورتحال کے خلاف حریت(گ)کے سینئر لیڈروں اور کارکنوں نے حیدرپورہ چوک میں نماز جمعہ کے بعد احتجاجی مظاہرہ کیا۔جس میں نوجوانوں کے علاوہ حریت مجلس شوریٰ کے ارکان بلال احمد صدیقی کی قیادت میں محمد یوسف نقاش، مولوی بشیر احمد عرفانی، حکیم عبدالرشید، سید محمد شفیع، نثار حسین راتھر، محمد یٰسین عطائی، بشیر احمد اندرابی، خواجہ فردوس، ارشد عزیز، سید امتیاز حیدر، عمران احمد بٹ، بشیر احمد بڈگامی، عبدالرشید لون، ارشد حسین بٹ وغیرہ نے شرکت کی۔اس موقعہ پر خطاب کرتے ہوئے بلال صدیقی نے ریاست کے اسٹیٹ سنجیکٹ قانون کو منسوخ کرکے یہاں کے مسلم اکثریتی کردار کو ختم کرنے کی گہری سازش قرار دیتے ہوئے ریاستی عوام سے اس ننگی جارحیت کے خلاف ایک سیسہ پلائی ہوئی دیوار کی مانند کھڑا رہنے کی اپیل کی۔ادھرنماز جمعہ کے بعد جامع مسجد سرینگر سے ایک جلوس برآمد کیا گیا۔جلوس میں شامل شرکاء کے ہاتھوں میں کتبے تھے،جن پر’’ہم قیدیوں کے ساتھ ہیں،دفعہ 35ائے کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کی اجازت نہیں دی جائے گی اور ریاست کی ہیت کو تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی‘‘ کے نعرے درج تھے۔مظاہرین نے جامع مسجد کے باہری دروازے تک جلوس نکالااور بعد میں پرامن طور منتشر ہوئے۔