۔2 ماہ بعد بحال ہوئی چملواس۔نیل سڑک کا حال بے حال

بانہال // بھاری برفباری کی وجہ سے لگ بھگ دو ماہ تک بند رہنے کے چملواس – نیل رابطہ سڑک کو بحال کیا گیا ہے لیکن سڑک کی حالت ابتر ہے۔ مقامی لوگوں کا الزام ہے کہ چملواس۔نیل رابطہ سڑک محکمہ تعمیرات عامہ کے عہدیداروں کے لئے سونے کی کان بنی ہوئی ہے جو محکمہ کے ملازمین کیلئے پچھلے 40 برس سے متواتر سونا اگل رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سال رواں کے موسم سرما میں لگ بھگ دو ماہ بند رہنے کے  بعد سڑک بحال کی گئی اور گاڑیاں نیل ٹاپ پہنچی۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ تعمیرات نے برف صاف کرنے اور مشینوں وغیرہ کے مد دسے مبینہ طور تقریباً 20 لاکھ روپے کا خرچہ دکھایا ہے جو خزانہ عامرہ کو لوٹنے کے مترادف ہے۔ انہوں نے کہا کہ گورنر انتظامیہ کے دور میں بھی اگر سرکاری ملازمین اتنے نڈر اور بے خوف ہو کر اس پیمانے پر مالی بدنظمی انجام دینگے ، تو شائداس قوم کے مستقبل کا سورج اس کرہ ارض پر کبھی طلوع نہیں ہوگا اور عام لوگوں کیلئے امیدوں کے شجر کی ہر شاخ ٹوٹتی دکھائی دیتی ہے۔ انہوںنے الزام لگایا کہ برف صاف کرنے کے دوران دہائیوں پرانی بچھائی گئی بجری کو جڑ سے اکھاڑ دیا گیا ہے اور سڑک کا بیشتر حصہ دلدل کی صورت اختیار کرگیا ہے جو کسی بڑے حادثے کا سبب سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مسلسل آہ و فریاد کے بعد سڑک پر بنے کھڈوں کو بھرنے کی غرض سے محکمہ تعمیرات عامہ نے ایک مشین اور ٹپر بھیجا تھا مگر انہوں نے چند ایک کھڈوں کو بھر کر باقی تباہی حال سڑک کو یوں ہی چھوڑ دیا تاکہ محکمہ کیلئے مارچ فائنل کی راہ ہموار ہوسکے۔ انہوں نے کہا کہ سڑک کے کنارے بہتات میں موجود قدرتی کنکریٹ میٹریل سے کھڈے اور دلدلی زمین بھرنے کے لئے استعمال نہیں کیا بلکہ مبینہ مارچ فائنل کی خاطر صرف رسمی خانہ پری کرکے مشین اور ٹپر کو چند ایک روز روانہ کیا لیکن زمینی سڑک کی حالت جوں کی توں ہے اور ہزاروں کی آبادی کو مشکلات کا سامنا ہے۔انہوں نے کہا کہ آجکل بیشتر سرکاری ملازمین انتخابی تربیت لینے کی خاطر تحصیل صدر مقام بانہال کا رخ کرتے ہیں اور سڑک کی خرابی کے پیش نظر مقامی گاڑی مالکان اس خستہ اور شکستہ سڑک کی خطرناک صورتحال کے پیش نظر اس پر سفر کرنے سے اجتناب کرتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ پیر کے روز علاقہ نیل سے تعلق رکھنے والے ملازمین پانچ بجے الیکشن تربیت کے بعد جب گھر واپسی کی فکر میں تھے تو گھنٹوں تلاش کرنے کے گاڑی نہ ملی اور بعد میں منت سماجت کے بعد ایک ڈرائیور کو نیل ٹاپ تک کے پندرہ کلومیٹر کے سفر کیلئے 150روپے فی کس دینے کی شرط پر بمشکل آمادہ کیا گیا۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ انتظامیہ کے اسقدر مفلوج کردار پر سوائے مر ثیہ خوانی کے لوگوں کے دل و دماغ میں دوسری کوئی سوچ ہی نہیں آسکتی اور ان کے اس رویہ سے ہزاروں لوگ پریشان ہیں۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن کیلئے یہاں روانہ کئے جانے والے پولنگ عملے اور سیکورٹی فورسز کو بھی سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا کیونکہ روڈ کی حالت بہت خراب ہے۔ انہوں نے نیل چملواس رابطہ سڑک پر فوری طور پر میکڈم بچھانے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس سلسلے میں بات کرنے پر ایگزیکٹو محکمہ تعمیرات عامہ ڈویژن رام بن مقبول حسین نے کہا کہ نیل سڑک کی ایک دیوار نکل گئی تھی اور بھاری برفباری کی وجہ سے تباہی ہوئی سڑک ٹھیک کرنے کیلئے ایک مشین وہاں بھیجی گئی تھی اور سڑک قابل آمدورفت ہے۔ انہوں نے کہاکہ چملواس۔نیل رابطہ سڑک پر میکڈم بچھانے کیلئے ایک منصوبہ پہلے ہی اعلیٰ حکام کو بھیجا گیا ہے اور امید ہے کہ اسکی منظوری ملے گی اور میکڈم بچھایا جائے گا۔