ہائی اسکول نکہ منجہاڑی کی عمارت خستہ

 مینڈھر//ہائی اسکول نکہ منجہاڑی جہاں 200سے زائد طلبازیرتعلیم ہے کی عمارت اس قدرخستہ حالی کاشکارہے کہ والدین بچوں کوسکول توبھیجتے ہیں لیکن انہیں پرپل یہ ڈرستاتارہتاہے کہ سکول کی خستہ عمارت کہیں گرنہ جائے اورکوئی بڑاحادثہ رونمانہ ہوئے ۔مقامی لوگوں نے ہائی سکول نکہ منجہاڑی کی عمارت کی خستہ حالی پربرہمی کااظہارکرتے ہوئے محکمہ تعلیم کے اعلیٰ افسران کوہدف تنقیدبنایا۔انہوں نے کہاکہ سکول کی خستہ عمارت کے نیچے بچوں کوبٹھاکرتعلیم دیناسمجھداری نہیں بیوقوفی ہے۔انہوں نے کہاکہ اگرکوئی حادثہ پیش آئے گاتواس کیلئے محکمہ کے افسران ذمہ دارہوں گے ۔انہوں نے الزام عائد کیاکہ محکمہ کے افسران ہائی سکول نکہ منجہاڑی کی خستہ حال عمارت کے سلسلہ میں غیرذمہ داری اورغفلت کامظاہرہ کررہے ہیں۔تفصیلات کے مطابق گو رنمنٹ ہائی اسکول نکہ منجہا ڑی 1985 کواس وقت کی ریا ستی حکو مت نے ہائی اسکول کا درجہ دیا تھااو رسکول کی ایک عمارت بھی تیارکی تھی تاکہ بچے تعلیم حا صل کرسکیں۔اس سکول میں نکہ منجہاڑی وگردونواح کے کثیرتعدادمیں دیہات کے 200 سے زائد طلبازیرتعلیم ہیں جبکہ 20 ٹیچربچوں کوتعلیم دینے کیلئے تعینات ہیں لیکن سکول عما رت کی نہایت ہی خستہ حالی کاشکارہے جس کے نیچے بچوں کوتعلیم دیناخطرے سے خالی نہیں ہے اورکوئی بڑاحادثہ کسی بھی وقت پیش آسکتاہے۔ علا قہ کے لو گوں نے کہاکہ محکمہ تعلیم کے اعلی افسران کے تعلیم کے سلسلہ میں کیے جانے والے دعوے زمینی سطح پر برائے نام ہیں۔انہوں نے کہاکہ بچوں کی کثیرتعدادمیں خستہ حالی عمارت میں تعلیم دیناطلباء واساتذہ کیلئے خطرے سے خالی نہیں ہے۔انہوں نے کہاکہ خستہ حالی سکول عمارت میں بچوں کوبٹھاناسراسرناانصافی ہے۔ انہوں نے گو رنر انتظامیہ سے اپیل کی کہ ہائی اسکول نکہ منجہا ڑی کی  نئی اسکول عما رت تعمیر کرکے بچوں کے تحفظ اوران کی تعلیم کویقینی بنایاجائے۔ اس سلسلہ میں محمد شفیع جاگل نے کہا کہ ہائی اسکول نکہ منجہا ڑی میںوسیع  علاقہ سے تعلق رکھنے والے طلبازیرتعلیم ہیں ۔انہوں نے سکول کادرجہ ہائرسکینڈری کرنے پربھی زوردیا۔ اس مو قعہ پر جب انچا رج ہیڈ ماسٹر سے بات کی گئی  تو انہوں نے کہاکہ ہم نے کئی بار اسکول کی عما رت کے سلسلے میں اعلیٰ حکام کوخط لکھے لیکن نہ جانے کن و جو ہا ت کی بنا پر یہاں پر نئی عما رت کیوں نہیں دی گئی ۔اس سلسلہ میں جب ڈپٹی چیف ایجوکیشن آفیسر مینڈھر سے با ت کی گئی  تو ان کا کہنا تھا کہ میں جلد اسکول کا دو رہ کرکے عمارت کیلئے اعلی حکام کو لکھوں گا۔ اس دو ران چیف ایجوکیشن آفیسرپو نچھ کا کہنا تھا کہ جب سکول عمارت کی خستہ حالی سے متعلق خط میرے پاس پہنچے گا تو میں فو ری طو ر اعلی حکام کو عما رت کیلئے لکھوں گا تاکہ بچوں کی پڑھائی متا ثر نہ ہو۔