پانتہ چھوک سے شراب کی دکان منتقل کریں

سرینگر// اپنی پارٹی کے صوبائی صدر محمد اشرف میر نے پانتہ چھوک میں شراب کی دکان کھولے جانے پر اپنی ناپسندیدگی کا اظہار کیا ہے۔ میر نے لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا کے نام اپنے ایک مکتوب میں ان سے گزارش کی ہے کہ وہ متعلقہ حکام کو یہ دکان رہائشی علاقے سے منتقل کرنے کی ہدایات دیں۔ اپنے مکتوب میں اپنی پارٹی کے لیڈر نے کہا ہے کہ جس دن سے یہ دکان یہاں کھولی گئی ہے، اس دن سے ہی مقامی لوگ  سراپا احتجاج ہیں اور انہوں نے اس ضمن میں متعلقہ حکام سے اپیل کی ہے کہ اس دکان کوفوری طور پر یہاں سے منتقل کیا جائے۔ تاہم حکام نے عوامی ناراضگی اور ان کے مطالبے پر تاحال کوئی توجہ نہیں دی ۔ لیفٹیننٹ گورنر کے نام اپنے خط میں میر نے لکھا ہے کہ یہ دکان ایک ایسی جگہ پر کھولی گئی ہے، جس کے آس پاس نہ صرف رہائشی علاقہ ہے بلکہ ایک سکول، مسجد اور امرناتھ یاتری نواس بھی واقع ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ مقامی لوگوں کو خدشہ ہے کہ علاقے میں شراب کی دکان کی موجودگی کا اثر مقامی نوجوانوں پر پڑ سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ علاقے میں شراب کی دکان کھولے جانے پر نہ صرف مقامی آبادی نالاں ہے بلکہ اس کی وجہ سے لوگوں کے مذہبی جذبات مجروح ہوجانے کا احتمال بھی ہے کیونکہ یہ دکان مسجد اور یاتری نواس کے قریب واقع ہے۔انہوں نے لیفٹیننٹ گورنر سے اپیل کی ہے کہ وہ مداخلت کرکے متعلقہ حکام کو شراب کی دکان کو فوری طور پر یہاں سے منتقل کرنے کی ہدایات دیں۔