ویشنودیوی المناک سانحہ پر جمو ں میں سوگواریت کی لہر

جموں// کٹر ہ میں ماتا ویشنو دیوی مندر میں بھگدڑ کے واقعہ میں 12یاتریوںکی موت اور16کے زخمی ہونے کے المناک واقعہ پر جموں میں سوگواریت کی لہر دوڑ گئی ہے اور پورے جموں کے سیاسی لیڈروں نے اس المناک واقعہ پر اپنے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے اس کی جانچ کا مطالبہ کیا ہے۔جموں و کشمیر کے سابق وزیر اعلیٰ غلام نبی آزاد نے ماتا ویشنو دیوی مندر میں بھگدڑ کے المناک واقعہ پر اپنے دلی رنج و غم کا اظہار کیا ہے جس میں 12 افراد کی جانیں گئیں۔آزاد نے مرنے والوں کے لواحقین کو مناسب معاوضہ اور زخمیوں کو مناسب طبی امداد دینے کا مطالبہ کیا۔ آزاد نے کہا"مجھے یقین ہے کہ یوٹی حکام تمام دستیاب وسائل کو بروئے کار لائیں گے اور فوری تدارک کے اقدامات کریں گے۔ میرا دل ان لوگوں کے ساتھ ہے جنہوں نے اپنے پیاروں کو کھو دیا۔ زخمیوں کو فوری طبی امداد دی جانی چاہیے" ۔سابق ممبر پارلیمنٹ ڈاکٹر کرن سنگھ نے کٹرہ میں ماتا ویشنو دیوی بھگدڑ کے واقعہ پر غم کا اظہار کیا ہے۔سابق ممبر پارلیمنٹ نے کہا کہ "مجھے شری ماتا ویشنو دیوی میں بدقسمت بھگدڑ کے بارے میں جان کر گہرا صدمہ پہنچا ہے جس کے نتیجے میں کئی یاتریوں کی موت اور زخمی ہوئے۔ اپنی جانیں گنوانے والوں کے خاندانوں کے ساتھ میری گہری ہمدردی ہے اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کے لیے میری دعا ہے۔ میں شری ماتا ویشنو دیوی سے دعا کرتا ہوں کہ وہ آج سے شروع ہونے والے نئے سال میں ہم سب پر اپنی رحمتیں نازل کریں۔نئے سال کے موقع پر بھون میں بھگدڑ کی وجہ سے ماتا ویشنو دیوی یاتریوں کی بدقسمت اموات اور زخمی ہونے پر غم اور صدمے کا اظہار کرتے ہوئے پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی نے اس سانحہ کو انتظامیہ کی ناکامی قرار دیا۔پارٹی نے اعلیٰ سطح پر ایسے افسران پر ذمہ داریاں طے کرنے کا مطالبہ کیا جو 12 یاتریوںکی موت کے ذمہ دار تھے۔پی ڈی پی لیڈروں نے اس واقعہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ایک مشترکہ بیان میں کہا"یہ کوئی حادثہ نہیں ہے بلکہ ایک انسان ساختہ سانحہ ہے کیونکہ جو لوگ مقدس غار کی عبادت گاہ میں پہلی مرتبہ بھگدڑ مچنے کے ذمہ دار ہیں وہ ذمہ دار ہیں"۔انہوںنے کہا"گزشتہ دو سال کے دوران، عام عقیدت مندوںکو مندرمیں وی آئی پی کلچر کی وجہ سے مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ بھون کے کمرے اورمندر کے راستے میں عموماً رشتہ داروں، خاندانی دوستوں، پڑوسیوں اور بیوروکریٹس کے جاننے والوں کا قبضہ ہوتا ہے"۔انہوںنے افسوس کا اظہار کیا کہ ویشنو دیوی شرائن بورڈ کے اعلیٰ افسران کو سہولیات فراہم کرنے کے بجائے عموماً افسران کے رشتہ داروں کو پروٹوکول فراہم کرنے میںمصروف رہتے ہیں۔پارٹی نے کووڈ پروٹوکول کے باوجود حیرت کا اظہار کیا کہ کیسے تقریباً ایک لاکھ عقیدت مندوں کو یاترا کو آگے بڑھنے کی اجازت دی گئی جب بھون پہلے ہی یاتریوں سے بھرا ہوا تھا۔بعد ازاں چودھری حامد کی قیادت میں پی ڈی پی قائدین کی ایک ٹیم نے کٹرہ کا دورہ کیا اور سانحہ میں زخمی ہونے والوں کا حال احوال دریافت کیا۔سی پی آئی (ایم) نے ہفتہ کو کٹرہ میں ماتا ویشنو دیوی مندر میں بھگدڑ کے المناک واقعہ پر صدمے اور غم کا اظہار کیا جہاں بارہ افراد اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھے اور پندرہ دیگر زخمی ہو گئے۔سی پی آئی (ایم) جموں کے ریجنل سکریٹری ہری سنگھ نے قیمتی جانوں کے المناک نقصان پر گہرے دکھ کا اظہار کیا ہے اور سوگوار خاندانوں کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا ہے۔انہوں نے انتظامیہ پر زور دیا کہ زخمیوں کا مفت علاج کیا جائے اور مرنے والوں کے لواحقین کو ایکس گریشیا فراہم کیا جائے۔شیوسینا جموں و کشمیر یونٹ کے رہنماؤں نے ماتا ویشنو دیوی بھون میں بھگدڑ میں 12 یاتریوں کی موت پر گہرے رنج و غم کا اظہار کیا ہے۔ پارٹی کے ریاستی صدر منیش ساہنی کی قیادت میں پارٹی لیڈر کٹرہ پہنچے اور نارائنا ہسپتال گئے۔منیش ساہنی نے اس المناک حادثے میں جان گنوانے والے مرنے والوں کے اہل خانہ سے تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ ساہنی نے کہا کہ پارٹی ہائی کمان سمیت ملک بھر کے شیوسینک شرائن کمپلیکس میں بھگدڑ کی وجہ سے ہونے والے جانی نقصان سے گہرے صدمے میں ہیں اور زخمی عقیدت مندوں کی جلد صحت یابی کی دعا کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ شیوسینا کے لیڈران شیوسینکوں کے ساتھ صبح سویرے موقع پر پہنچ گئے اور عقیدت مندوں کو ہر ممکن مدد فراہم کی۔نیشنل کانفرنس کے صوبائی صدر مسٹر رتن لال گپتا نے  ماتا ویشنو دیوی مندرمیں بھگدڑ کے افسوسناک واقعہ پر افسوس کا اظہار کیا جس کے نتیجے میں 12 یاتریوں کی موت ہوگئی اور کئی دیگر زخمی ہوگئے۔گپتا نے سوگوار خاندانوں کے ساتھ ہمدردی کا اظہار کیا، مرنے والوں کی روح کے سکون اور زخمیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔ گپتا نے انتظامیہ اور ماتا ویشنو دیوی شرائن بورڈ کی انتظامیہ پر یاترا کو منظم کرنے میں ناکامی کا الزام لگایا۔انہوںنے کہاکہ یاترا کو کٹرہ کے بیس کیمپ پر ہی ریگولیٹ کیا جانا چاہیے تھا تاکہ یاتریوں کی نقل و حرکت کو یقینی بنایا جا سکے۔جموں و کشمیر نیشنل پینتھرس پارٹی کی ورکنگ کمیٹی نے ملک کے مختلف حصوں سے ماتا ویشنو دیوی کے درشن کے لئے آئے یاتریوں کی افسوسناک موت اور زخمی ہونے پر گہرے رنج و غم کا اظہار کیا ہے۔ورکنگ کمیٹی کے ارکان نے صدر رام ناتھ کووند سے اپیل کی کہ وہ اس واقعہ کے حالات کی انکوائری کے لیے ہائی کورٹ کے کم از کم تین ججوں کی تقرری کے لیے مداخلت کریں۔ پروفیسر بھیم سنگھ نے کہا کہ نئے سال 2022 کے پہلے دن پیش آئے سانحہ کے لیے سیاست دانوں، مرکزی ریاستی انتظامیہ اور دیگر نے ایک دوسرے کو گالی اور قصوروار ٹھہرانا شروع کر دیا ہے۔پینتھرس پارٹی نے صدر سے درخواست کی کہ وہ تفصیلات، حالات اور کام کے نظم و ضبط کا پتہ لگانے کے لیے ہائی کورٹ کے کم از کم 3 موجودہ ججوں کی تقرری کریں تاکہ اس سانحہ کی وجوہات کے بارے میں سچائی سامنے آسکے۔ کمیشن کے ذریعہ یہ معلوم کرنا بھی ضروری ہے کہ اس سانحہ کی منصوبہ بندی کیسے اور کس نے کی، جس کے نتیجے میں 12 سے زائدیاتریوں کی موت ہوئی اور درجنوں زخمی ہوئے۔پروفیسر بھیم سنگھ نے بورڈ کو ان کی قیادت والی جموں و کشمیر لیگل ایڈ کمیٹی کی مفت مدد کی پیشکش کی ہے تاکہ سچائی سامنے آئے اور ماتا ویشنو دیوی تیرتھ میں یاتریوں کا عقیدہ ہمیشہ برقرار رہے۔
 
 

رانا، سلاتھیا کا دورہ کٹرہ،اموات پر دکھ کا اظہار

کٹرہ // بی جے پی کے سینئر قائدین دیویندر سنگھ رانا اور سرجیت سنگھ سلاتھیا نے کٹرہ کا دورہ کیا اوربھگدڑ سانحہ کے متاثرین سے ملاقات کی اور گیٹ 3 کے قریب بھگدڑ کے بدقسمت واقعہ میں یاتریوں کی المناک موت پر صدمے اور غم کا اظہار کیا۔اس سانحہ کو انتہائی سنگین قرار دیتے ہوئے  رانا نے کہا کہ جموں و کشمیر کے لوگ اور ملک بھی اس واقعہ پر صدمے سے دوچار ہیں اور مرحوم کی روح کے سکون اور ان کی جلد صحت یابی کے لیے دعاگو ہیں۔ رانا نے کٹرہ ہسپتال میں میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا’’ہم بھی ہم وطنوں کے ساتھ دکھ بانٹنے اور ان خاندانوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں جنہوں نے اس سانحہ میں اپنے رشتہ داروں کو کھو دیا ہے‘‘۔ رانا نے کہا کہ یہ الزام تراشی میں ملوث ہونے کا وقت نہیں ہے۔ انتظامیہ اور شری ماتا ویشنو دیوی شرائن بورڈ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے تمام ضروری اقدامات کر رہے ہیں کہ مہلوکین کی لاشیں باوقار طریقے سے ان کے گھروں تک پہنچیں اور زخمی صحت یاب ہو کر اپنے گھروں کو واپس جائیں۔انہوں نے کہا کہ ویشنو دیوی جی پوری دنیا کے کروڑوں لوگوں کے عقیدے کا معاملہ ہیں اور یہاں کوئی سیاست نہیں ہونی چاہیے اور سب کو درگاہ کے تقدس کو برقرار رکھنا چاہیے۔ قبل ازیںدیویندر رانا اورسرجیت سنگھ سلاتھیا نے نارائنا اسپتال میں زخمیوں کی صحت کے بارے میں دریافت کیا اور ڈاکٹروں سے زخمیوں کی حالت کے بارے میں بات کی۔
 
 

مرکزی وزیر ڈاکٹر جتندر سنگھ ہنگامی طورپر کٹرہ پہنچ گئے

جموں//مرکزی وزیر ڈاکٹر جتندر سنگھ کا کہنا ہے کہ ماتا ویشنو دیوی میں بھگدڑ کا واقع پیش آنے کے بعد حالات کا جائزہ لینے کی خاطر کٹرا پہنچ گیا ہوں۔موصوف وزیر نے ٹویٹ کے ذریعے جانکاری دیتے ہوئے بتایا کہ ماتا ویشنو دیوی بھون میں بھگدڑ کے باعث زائرین کی موت پر افسوس ہے ۔انہوں نے کہا کہ حالات کا جائزہ لینے کے لئے کٹرا پہنچ گیا ہوں ۔مرکزی وزیر نے بتایا کہ بھگدڑ کا یہ واقع کیسے وقوع پذیر ہوا اس حوالے سے مندر انتظامیہ کے ساتھ تفصیلات حاصل کرکے وزیر اعظم نریندر مودی کو جانکاری فراہم کی جائے گی۔
 
 

اپنی پارٹی وفدنے زخمی افراد کی عیادت کی

 جموں//جموں وکشمیر اپنی پارٹی لیڈران کے ایک وفد نے سابق کابینہ وزیر اورسنیئر نائب صدر غلام حسن میر کی قیادت میں ہفتہ کے روز ماتا ویشنو دیوی نرائینہ سپرسپیشلٹی اسپتال کٹرہ کا دورہ وہاں زیر علاج ماتا ویشنو دیوی شرائین پر صبح ہوئی بھگدڑ میں زخمی افراد کی عیادت کی۔ میڈیا سے بات کرتے ہوئے غلام حسن میر نے اِس واقعے کو انتہائی بدقسمت آمیز قرار دیتے ہوئے سوگوارکنبوں کے ساتھ دلی ہمدردی اور یکجہتی کا اظہار کیا۔ انہوں نے مطالبہ کیاکہ انتظامیہ کو چاہئے کہ فوری معقول ایکس گریشیاریلیف لواحقین کو فراہم کی جائے۔ انہوں نے کہا’’ہم مارے گئے زائرین کے اہل خانہ کے دکھ میں برابر کے شریک ہیں، اُن کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرتے ہیں۔ اپنی پارٹی زخمی افراد کے بہتر علاج ومعالجہ کے لئے ہرممکن ضروری تعاون فراہم کرنے کو تیار ہے۔ اس کے علاوہ ہم مارے گئے افراد کی روح کی شانتی اور سوگواران ِ کنبہ کے ساتھ دلی ہمدردی کا اظہار کرتے ہیں‘‘