وزیراعظم مودی کی کامیاب ریلی کے بعدبھاجپا کاانتخابی حکمت عملی پر تبادلہ خیال

جموں// بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی جموں و کشمیر یونٹ نے سانبہ ضلع کی پلی پنچایت میں وزیر اعظم نریندر مودی کے کامیاب پروگرام کے ایک دن بعد پورے مرکز کے زیر انتظام علاقے میں بوتھ اور پنچایت کی سطح پر زمینی کام کی منصوبہ بندی کرنے کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا۔جموں خطہ کے ضلعی صدور، سابق صدور، سابق قانون سازوں اور سابق وزراء اور ریاستی ایگزیکٹو کمیٹی کی میٹنگ پارٹی ہیڈکوارٹر تریکوٹہ نگر میں منعقد ہوئی۔بی جے پی کے ایک سینئر لیڈر نے بتایا کہ میٹنگ میں ضلع صدر، ضلع پرابھاری، سابق وزراء، سابق ایم ایل سی اور جموں خطہ کے سابق ایم ایل اے نے شرکت کی تاکہ اسمبلی انتخابات کی حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا جا سکے جس کا ابھی اعلان ہونا باقی ہے۔سینئر بی جے پی لیڈر نے کہا ’’ہم اسمبلی انتخابات کی توقع کر رہے ہیں اور اس لیے بوتھ کی سطح کے ساتھ ساتھ پنچایت کی سطح پر زمینی سطح کے کارکنوں کو مضبوط کرنے کے سلسلے میں تفصیلی بات چیت کی‘‘۔بی جے پی لیڈر نے مزید کہا کہ ’’پی ایم نریندر مودی کے دورے کے بعد پارٹی لیڈروں اور کارکنوں میں جوش و خروش ہے۔ حد بندی کمیشن کی رپورٹ جمع ہونے کے فوراً بعد انتخابات متوقع ہیں‘‘۔بی جے پی لیڈر نے مزید کہا’’ہم نے تمام حلقوں میں اپنا زمینی کام شروع کر دیا ہے اور یہ جموں خطہ کے مختلف حلقوں کی نمائندگی کرنے والے بی جے پی لیڈروں کے ساتھ پلان پر بات چیت کرنے کا ابتدائی قدم تھا۔بی جے پی لیڈر نے مزید کہا کہ پارٹی مودی حکومت کے 8 سال مکمل ہونے کا جشن منانے اور مختلف پروگراموں کو شیڈول کرنے والی ہے۔اس میٹنگ میں جموں و کشمیر بی جے پی کے صدر رویندر رینا، جنرل سکریٹری (تنظیم) اشوک کول، سابق ایم پی شمشیر سنگھ منہاس، سابق وزیر ست شرما، سابق ریاستی صدر اشوک کھجوریا، سابق نائب وزیر اعلیٰ کویندر گپتا، جنرل سکریٹری سنیل شرما اور ڈاکٹر دیویندر کمار منیال نے شرکت کی۔میٹنگ کے دوران اپنے خطاب میں رینہ نے گاؤں پلی میں وزیر اعظم نریندر مودی کی کامیاب بڑی ریلی کے لیے پارٹی کے سینئر رہنماؤں کو مبارکباد دی۔انہوں نے کہا کہ یہ بڑی ریلی پی ایم مودی کے لیے عوام کی بے پناہ محبت اور حمایت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔ان کا کہناتھا”کل کی زبردست شرکت عام لوگوں کی طرف سے بی جے پی کی پالیسیوں کو قبول کرنے کا ثبوت دیتی ہے۔ بی جے پی لیڈروں کو اس بات کو یقینی بنانے کی ضرورت ہے کہ بی جے پی کی پالیسیاں عوامی کاموں میں ان کی روزمرہ کی سرگرمیوں میں جھلکتی ہیں۔انہوں نے ان سے یہ بھی کہا کہ وہ زمینی سطح پر مودی حکومت کی عوامی بہبود کی اسکیموں کے نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے مزید لگن سے کام کریں۔اس دوران اشوک کول نے پارٹی کے آئندہ پروگراموں پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا اور ساتھ ہی 6 اپریل کو بی جے پی کے یوم تاسیس کے موقع پر منعقد ہونے والے مختلف پروگراموں اور حال ہی میں منعقد ہونے والے دیگر پروگراموں پر بھی تبادلہ خیال کیا۔اشوک کول نے کہا کہ “مختلف تنظیمی پروگرام ہمیں عوام سے براہ راست جڑنے اور پارٹی اور عوام کے درمیان دو طرفہ چینل بنانے کا موقع فراہم کرتے ہیں۔”