نیوزی لینڈ کی2 مساجد میں قتل و غازت پر تاجر سیخ پا

سرینگر// نیوزی لینڈ میں نمازجمعہ کے موقعہ پر دو مساجدمیں دہشت گردانہ حملوں جن میں 49افراد جانبحق اور درجنوں زخمی ہوگئے،کی مذمت کرتے ہوئے کشمیر ٹریڈرس اینڈ مینوفیکچررس فیڈریشن،، محاذ آزادی،حقانی میموریل ٹرسٹ،شاہین سپورٹس سینٹر نے زبردست دکھ اور رنج کااظہار کیا۔نیوزی لینڈ میں مساجد پر حملے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے کشمیر ٹریڈرس اینڈ مینو فیکچرس فیڈریشن نے اس واقعے کو عالم انسانیت کیلئے ایک المیہ قرار دیا۔ کشمیر ٹریڈرس اینڈ مینو فیکچرس فیڈریشن کے صدر حاجی محمد صادق بقال نے کہا کہ یہ واقعہ فسطائیت اور نسل پرستی پر مبنی ہے اور اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ اسلام اور مسلمانوں کے خلاف عداوت کس حد تک پہنچ گئی ہے۔انہوں نے اِسے ہشت گردی کی بدترین مثال قراردیتے ہوئے جان بحق افرادکے تئیں خراج پیش کیا۔بقال نے کہاکہ ان حملوں سے مسلمانان عالم کے حوصلے پست نہیں ہوسکتے نہ ہی دنیا پر راج کرنے کے سامراج کے خواب پورے ہوںگے۔کشمیر ٹریڈرس اینڈ مینو فیکچرس فیڈریشن کے صدر نے کہا کہ دنیا کے کسی بھی کونے میں کوئی بھی سینے میں دل رکھنے والا انسان نہتوں کا قتل عام دیکھ کر دُکھ محسوس کئے بغیر نہیں رہ سکتا ہے،اور یہی حال دنیا کے اس خطہ ارض پر بھی ہیں،جہاں روزانہ لوگ لاشوں کو کندھا دینے میں مصروف ہے۔اس موقعہ پرجنرل سیکریٹری شاہد احمد اور چیف کارڈی نیٹر حاجی نثار احمد بھی موجود تھے۔محاذآزادی کے صدر محمد اقبال میر نے ایک بیان میں کرائس چرچ لین نیوزی لینڈ کی دو مساجد میں نماز جمعہ کے موقعہ پر دہشت گردانہ حملے کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے  اسے مسلمانوں کا سفاکانہ اور بدترین قتل عام قرار دیا، جس میں پچاس سے زائد معصوم نمازی جان بحق  اور درجنوں شدید زخمی ہوئے ۔ میر اقبال نے اس سانحہ میں  جاں بحق ہوئے افرادکے لواحقین کے ساتھ تعزیت کا اظہار کیا  اور زخمی ہوئے افراد کی جلد صحت یابی کے لئے دعا کی۔ انہوں نے نیوزی لینڈ کی وزیر اعظم جیسندا آردرن  سے مخاطب ہو کر کہا کہ ہم اس دکھ کی گھڑی میں آپ کے ساتھ ہیں اور مطالبہ کرتے ہیں کہ ان قاتلوں کو جنہوں نے ایک پرامن ملک کے امن وامان کو بگاڑنے کی کوشش کی ہے کو کڑی سے کڑی سزادی جائے۔ حقانی میموریل ٹرسٹ کے ترجمان نے حملے دہشت گردی قرار دیتے ہوئے کہا کہ بے گناہ نمازیوں پراس طرز کے حملے درندگی اور حیوانیت کی بدترین مثال ہے ۔انہوں نے جان بحق ہوئے لوگوں کے تئیں خراج پیش کرتے ہوئے کہا کہ ان حملوں سے مسلمانان عالم کے حوصلے پست نہیں ہوسکتے نہ ہی دنیا پر راج کرنے کے سامراج کے خواب پورے ہونگے۔شاہین سپورٹس سینٹر سوشل ٹرسٹ کے چیرمین شوکت احمد خانیاری نے نیوزی لینڈ میں دو مساجدمیں نہتے نمازیوں پر حملہ پر دکھ اور صدمے کا اظہار کیا ہے۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ یہ حملہ اسلام مخالف سوچ اور رائٹ ونگ ذہنیت کی بھرپور عکاسی کرتا ہے جس کی مثال مسلمانوں کو دہشت گرد قرار دینا اور خود بدترین دہشت گردی میں پیش پیش ہونا ہے۔  انہوں نے کہا کہ نیوزی لینڈ ایک پُرامن ملک ہے ،مخلوظ کلچر کیلئے مشہور ہے لیکن اگر اس طرح کے حملے وہاں ہوئے تو یقینا عالمی امن کیلئے خطرہ ہے۔