مزید خبریں

آئی جی پی نے سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا 

سمت بھارگو

راجوری //انسپکٹر جنرل آف پولیس جموں زون ایم کے سنہا نے راجوری کادورہ کرکے سیکورٹی صورتحال کاجائزہ لیا ۔اس دوران انہوں نے راجوری پولیس لائنز میں پولیس دربار کا انعقاد کرکے پولیس اہلکاروں کے مسائل بھی سنے ۔اس پولیس دربار میں ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس ڈی کے سلاتھیہ ، ایس ایس پی راجوری یوگل منہاس و دیگر افسران بھی موجود تھے ۔اس دوران پولیس اہلکاروں و افسران نے اپنے اپنے مسائل سے پولیس افسر کو آگاہ کیا او رانہوں نے جائز مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کرنے کا یقین دلایا ۔بعد ازآں سنہا نے پولیس لائنز راجوری کے کانفرنس ہال میں ایک میٹنگ منعقد کرکے ضلع میں سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا ۔انہیں میٹنگ کے دوران ضلع میں جرائم کے واقعات اور مختلف پولیس تھانوں میں اس حوالے سے درج معاملات کے بارے میں بتایاگیا ۔سنہا نے آرمی و دیگر سیکورٹی ایجنسیوں کے افسران کے ساتھ بھی تبادلہ خیال کیا اور سیکورٹی کے بارے میں معلومات حاصل کیں ۔بعد میں انہوں نے صوبائی کمشنر جموں کے ساتھ سیول انتظامیہ راجوری کی ایک میٹنگ میں شرکت کی ۔
 
 

تھنہ منڈی میں 110سالہ شہری کی وفات 

نیوز ڈیسک

 
تھنہ منڈی //تھنہ منڈی میں معمر شہری کی وفات ہوئی ہے جس کی عمر 110سال بتائی جارہی ہے ۔مرحوم فقیر محمد خان لائف انشورنس کمپنی کے ایڈوائزر محمد رشید خان کے دادا ہیں جنہوں نے ایک طویل زندگی گزار کراس دار فانی سے کوچ کرلیا ۔وہ طویل علالت کے بعد منگل کے روز وفات پائے گئے اور انہیں اپنے آبائی علاقے عظمت آباد میں سپرد لحد کیاگیا۔مرحوم کی نماز جنازہ میں بڑی تعداد میں رشتہ داروں اور پڑوسیوں و سیاسی و سماجی تنظیموں کے عہدیداران نے شرکت کی۔
 
 
 
 

صارفینSBI عملے سے خفا 

رمیش کیسر

 
نوشہرہ //بھارتیہ سٹیٹ بینک آف انڈیا کے عملے کی کارکردگی کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے نوشہرہ کے صارفین نے اسے تبدیل کرنے کی مانگ کی ہے ۔ نوشہرہ میں بینک کے باہر کھڑی پوجا شرما و دیگرصارفین نے بتایاکہ اس بینک میں تعینات عملہ غفلت شعاری سے کام لے رہاہے اور ملازمین ان سے سیدھے منہ بات کرنے کو بھی تیار نہیںہوتے ۔ انہوں نے کہاکہ اپنے پیسے بینک سے نکالنے کیلئے انہیں پریشانی اٹھانی پڑرہی ہے اور کیش دینے سے منع کیاجارہاہے ۔ پوجا کاکہناتھاکہ اس کے ساتھ ایسا پہلی مرتبہ نہیں بلکہ ماضی میں بھی کئی مرتبہ ہوچکاہے ۔ انہوں نے اعلیٰ حکام سے اپیل کی کہ بینک میں تعینات عملے کو تبدیل کیاجائے۔
 
 
 
 

بین ضلع بھرتی سے پابندی ہٹائی جائے:ذوالفقار

خطہ پیر پنچال کیلئے پہاڑی ترقیاتی کونسل کا مطالبہ 

راجوری //بین ضلع بھرتی سے پابندی ہٹانے کا مطالبہ کرتے ہوئے سابق وزیر و پی ڈی پی لیڈر چوہدری ذوالفقا ر علی نے کہاکہ اس پابندی کے باعث درج ذیل قبائل کو بری طرح سے متاثر ہوناپڑاہے ۔پریس کلب راجوری میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ذوالفقار نے کہاکہ اس پابندی نے درج ذیل طبقوں کے نوجوانوں میں غم وغصہ پیدا کیاہے ۔ان کاکہناتھاکہ یہ نوجوان قانون کے منافی مطالبہ نہیں کررہے بلکہ انہیں یہ جائز حق ملناچاہئے ۔انہوں نے کہاکہ بین ضلع بھرتی پر پابندی کی وجہ سے یہ نوجوان دیگر نوجوانوں کے ساتھ مقابلہ نہیں کرپاتے اور وہ پریشانی کاشکار ہیں ۔ انہوں نے کہاکہ یہ ناانصافی ہے اور انہوں نے اس کی 2010میں بھی مخالفت کی تھی اورحکومت میں رہنے کے دوران بھی انہوں نے یہ معاملہ متعدد مرتبہ وزیر اعلیٰ سے اٹھایا ۔ذوالفقار نے خطہ پیر پنچال کیلئے پہاڑی ترقیاتی کونسل کی مانگ کرتے ہوئے کہاکہ راجوری پونچھ کے جغرافیائی خدوخال کو دیکھتے ہوئے یہ درجہ ملناچاہئے تاکہ یہاں کی ترقی ہوسکے ۔انہوں نے کہاکہ پہاڑی ترقیاتی کونسل ہی خطہ پیر پنچال کے عوامی مسائل کا حل ہے ۔جموں پونچھ شاہراہ کی کشادگی کے کام میں سست روی پر تشویش کا اظہا رکرتے ہوئے سابق وزیر نے کہاکہ 2015میں اس پروجیکٹ کیلئے 5100کروڑ روپے منظور کئے گئے لیکن ابھی تک زمینی سطح پر کوئی کام نظر نہیں آیا ۔انہوں نے کہاکہ جموں اور اکھنور کے درمیان تھوڑا سا کام ہواہے لیکن اکھنور سے آگے پونچھ کی طرف یہ کام شروع ہی نہیں کیاگیا ۔انہوں نے جموں پونچھ ریلوے لائن کی منظوری کا خیر مقدم کرتے ہوئے کہاکہ مرکز کو فوری طور پر اس پر کام شروع کرناچاہئے ۔ذوالفقار نے کہاکہ سابق حکومت کے دو رمیں شرو ع ہوئے ترقیاتی پروجیکٹوں کی گورنر انتظامیہ کے دور میں کوئی نگرانی نہیں ہورہی جس کی وجہ سے یہ کام سست روی کاشکا رہیں ۔ان کاکہناتھاکہ محبوبہ مفتی کی قیادت والی حکومت نے کئی اہم پروجیکٹ شروع کئے اور گورنر کو مداخلت کرتے ہوئے ان میں تیزی لانے کی کوشش کرنی چاہئے ۔اس موقعہ پر سابق ممبراسمبلی راجوری چوہدری قمر حسین ، پارٹی کے ضلع صدر اعجاز مرزا، نوجوان لیڈر تعظیم ڈار و دیگران بھی موجو دتھے ۔
 
 
 
 

تمام بڑی جماعتوںنے خطہ پیر پنچال کو نظرانداز کیا:پیپلز کانفرنس کارکنان 

جاوید اقبال

 
مینڈھر//مینڈھر سے تعلق رکھنے والے ایڈووکیٹ ابرار احمد خان نے پیپلز کانفرنس میں شمولیت اختیارکی ہے ۔پارٹی میں شمولیت کے بعد ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ابرار خان نے ریاست میں قائم ہونے والی سابقہ حکومتوں کو تنقید کا نشانہ بنایا اورکہاکہ ریاست میں جس قدر بھی حالات خراب ہیں اس کی ذمہ دار تمام بڑی جماعتیں ہیں۔انہوں نے کہا کہ یہ اِنکی غلط کاریوں کانتیجہ ہے ۔ ان کاکہناتھاکہ ہر ایک سیاسی جماعت نے خطہ پیر پنجال کونظر انداز رکھااور اسی وجہ سے یہاں صنعتی شعبہ سرے سے ہی وجود میں نہیں آسکا او رنہ ہی سیاحتی ترقی ہوئی ۔ان کاکہناتھاکہ حلقہ انتخاب مینڈھر میں ترقی کا اندازہ قصبہ مینڈھر سے لگایاجاسکتاہے جہاں گندگی کے ڈھیر جمع رہتے ہیں اور ترقیاتی پروجیکٹ کاغذوں تک محدود ہوکر رہ گئے ہیں ۔انہوں نے پہاڑی لیڈران پر تنقید کرتے ہوئے کہاکہ انہی کی وجہ سے قوم کو ایس ٹی کادرجہ نہیں ملا ۔ ابرار خان نے کہاکہ یہاں گوجر پہاڑی کے نام پر ووٹوں کی تقسیم کی جاتی ہے اور لیڈران پھر اپنی جائیداد میں اضافہ کرتے ہیں مگر عوام کے مسائل فراموش کردیتے ہیں ۔ انہوں نے خطہ پیر پنچال کے عوام سے اپیل کی کہ وہ پیپلز کانفرنس میں شمولیت اختیار کریں تاکہ ریاست کے ساتھ ساتھ خطے کی تعمیروترقی بھی ہوسکے اورذات پات کی سیاست کا خاتمہ ہو۔
 

نیٹ کے امتحانی میں کامیابی 

سرنکوٹ// سرنکوٹ کے علاقہ موہڑہ بچھائی سے تعلق رکھنے والی قدسیہ کھٹک دختر محمد بشیر کھٹک نے نیٹ (قومی اہلیتی ٹیسٹ )کے امتحان میں کامیابی حاصل کی ہے ۔ انہیں اس کامیابی پر مبارکباد پیش کی جارہی ہے ۔