مزید خبرں

میو نسپل کمیٹی تھنہ منڈی میں عملہ کی قلت 

مقامی لوگوں نے مستقل ملازمین تعینات کرنے کا مطالبہ کیا 

طار ق شال 
 
تھنہ منڈی //میو نسپل کمیٹی تھنہ منڈی میں ملازمین کی قلت کی وجہ سے کام کاج بُری طرح سے متاثر ہو رہا ہے ۔مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ کمیٹی کے بہتر کام کاج کیلئے مستقل ملازمین کی تعیناتی عمل میں لائی جائے تاکہ عوام کو درپیش مسائل حل ہو سکیں ۔یاد رہے کہ گزشتہ برس تھنہ منڈی میونسپل کمیٹی میں غیر قانونی سرگرمیوں کا پردہ فاش ہونے کے بعد سابقہ ایگز یکٹو آفیسر ودیگر ملازمین کیخلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا جس کے بعد تھنہ منڈی میونسپل کمیٹی میں ملازمین کی قلت پیدا ہو گئی تھی ۔مقدمہ درج ہ ونے کے بعد لوکل باڈیز جموں کی جانب سے ایگز یکٹو آفیسر میونسپل کمیٹی راجوری ،ہیڈ اسسٹنٹ میو نسپل کمیٹی کالا کوٹ اور جونیئر اسسٹنٹ راجوری کو تھنہ منڈی کا اضافی چارج بھی دے دیا گیا تھا اور میونسپل آفیسران وملازمین ہفتے میں تین دن تھنہ منڈی ڈیوٹی انجام دیتے ہیں ۔تین ماہ قبل ڈائریکٹر لوکل باڈی نے متعلقہ محکمہ میں بطور عارضی ملازمین اپنی مدت پوری کرچکے ملازمین کی تفصیلی بھی مانگی گئی تھی لیکن ملازمین کے پاس اضافی چارج ہونے کی وجہ سے مذکورہ معاملہ پر کوئی پیش رفت نہیں ہو پائی ہے ۔مقامی لوگوں نے متعلقہ انتظامیہ کے تئیں غم و غصہ کا اظہا ر کرتے ہوئے کہاکہ میونسپل کمٹی تھنہ منڈی کو درست کرنے کی جانب کوئی توجہ نہیں دی جارہی ہے ۔انہوں نے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ کمیٹی کے بہتر کام کاج کیلئے مستقل ملازمین تعینات کئے جائیں ۔اس ضمن میں ڈپٹی ڈائریکٹر لوکل باڈیز جموں نے کہا کہ میو نسپل کمیٹی تھنہ منڈی میں آئندہ پیر تک مستقل سٹاف تعینات کر دیا جائے گا ۔انہوں نے ایگزیکٹو آفیسر میونسپل کمٹی تھنہ منڈی کو اس سلسلہ میں ہدایت جاری کرتے ہوئے کہاکہ سٹاف کے سلسلہ میں تحریری رپورٹ پیش کی جائے ۔
 

چھت سے لٹکی ہوئی لاش برآمد

نیوز ڈیسک
 
راجوری //سرحدی ضلع راجوری کے سیوٹ گائوں میں ایک شخص کی لاش چھت سے لٹکی ہو ئی ملی ۔پولیس ذرائع کے مطابق جمعہ کے روز ایک 34 سالہ شخص کو اپنے ہی گھر کی چھت سے لٹکا ہوا پایا گیا۔مہلوک کی شناخت رام لال ولد کرشن لال سکنہ سیوٹ کے طور پر ہوئی ہے۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ تمام تر لورزامات کیلئے لاش کو سندر بنی ہسپتال منتقل کیا گیا جبکہ اس سلسلہ میں ایک کیس درج کر کے مزید تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں ۔
 

راجوری میں موٹر سائیکل چوری ،معاملہ درج 

طارق شال 
 
تھنہ منڈی //راجوری میں بڑھتی ہوئی چوری کی وارداتوں کے دوران ایک موٹر سائیکل زیر نمبر JK11D-1086 کو چوروں نے ضلع ہیڈ کواٹر کے ذبح خانہ کے قریب سے چوری کرلیا ۔تحصیل تھنہ منڈی کے سر فراز حسین ولد محمد شفیع سکنہ کھبلاں نے بتایا کہ وہ ہمالین ایجوکیشن مشن راجوری میں زیر تعلیم ہیں جبکہ چند روز قبل انہوں نے اپنا موٹر سائیکل ذبح خانے کے قریب پارک کیا لیکن جب وہ مذکورہ ادارے سے واپس آئے تو ان کو موٹر سائیکل نہیں ملا جس کے بعد انہوں نے مقدمہ درج کروایا ہے ۔پولیس کے مطابق ایک ہی روز میں راجوری سے کل چار موٹر سائیکل چوری ہوئے ہیں جبکہ اس سلسلہ میںمعاملہ درج کر کے تلاش شروع کر دی گئی ہے۔
 

نوشہر ہ میں 2برس سے منریگا کاموں کی اجرت نہیں ملی 

مزدور طبقہ شدید مشکلات میں مبتلا ،انتظامیہ خاموش تما شائی 

رمیش کیسر 
 
نوشہرہ //نو شہرہ کے مختلف دیہاتوں میں محکمہ دیہی ترقی کی جانب سے منریگا اسکیم کے تحت کروائے گئے کاموں کی اجرت وگزار نہیں کی گئی ہے جس کی وجہ سے مزدور طبقہ کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔مقامی لوگوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ گزشتہ 2برسوں سے ان کو اجرت کی ادائیگی نہیں کی گئی ہے جس کی وجہ سے ان کو اپنے کنبہ کا پیٹ پالنا مشکل ہو تا جا رہاہے ۔سب ڈویژن نوشہرہ میں مجموع طورپر 4بلاکوں کے درجنوں گائوں میں محکمہ دیہی ترقی کے تحت غریب طبقہ نے منریگا اسکیم کا فائدہ اٹھا نے کیلئے تعمیر اتی کام کروائے ہوئے ہیں تاہم متعلقہ محکمہ اور مقامی انتظامیہ کی عدم توجہی کی وجہ سے ان لوگوں کی ادائیگی کو ممکن نہیں بنایا گیا ہے ۔نوشہرہ کے قلعہ درہال اور لمبیڑی علا قہ کی عوام نے الزام عائد کرتے ہو ئے کہا ہے کہ 2016-17کے دوران کئے گئے ترقیاتی کاموں کی اجرتیں وگزار نہیں کی گئی ہیں تاہم انہوں نے متعدد بار متعلقہ محکمہ کے چکر کاٹے ہیں لیکن ہر بار ان کو جھوٹی یقین دہانی کروائی جاتی ہے لیکن عملی طور پر ابھی تک کچھ بھی نہیں کیا گیا ہے ۔مقامی لوگوں نے محکمہ دیہی ترقی   پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ متعلقہ محکمہ کے ملازمین ہر بار یقین دلاتے ہیں کہ مزدروں کی اجرتیں بینک کھاتوں میں آجائینگی لیکن ابھی تک ایسا نہیں ہوا ۔اس سلسلہ میں انیل کمار ،محمد اکرم سوم راج گورجیت سنگھ ودیگران نے ضلع انتظامیہ راجوری اور ریاستی گورنر سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ ان کی اجرت کی ادائیگی کو ممکن بنایا جائے تاکہ مزدور طبقہ کو درپیش مسائل حل ہو سکیں ۔
 

کو ٹرنکہ میں فائر اینڈ ایمر جنسی سروس فراہم کرنے کی مانگ 

محمد بشارت راتھر 
 
کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ کی عوام نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ اس علا قہ میں فائر اینڈ ایمر جنسی سروس فراہم کی جائے تاکہ کسی بھی مشکل وقت میں عوام کا نقصان نہ ہو ۔مقامی لوگوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ اسمبلی حلقہ بدھل اور کا لا کوٹ میں مذکورہ اسٹیشن قائم کرنے کی مانگ ایک دراز عرصہ سے کی جارہی ہے لیکن اس طرف دھیان نہیں دیا جارہاہے ۔انہوں نے کہاکہ ان علا قہ میں کسی بھی آگ کی وردات پر قابو پانے کیلئے راجوری سے فائر بریگیڈ لائی جاتی ہے لیکن جب تک مذکورہ گاڑی عملے کیساتھ 60کلو میٹر ی مسافت طے کرتی تب تک ایک بڑا نقصان ہو جاتا ہے ۔ایک سماجی کارکن محمد تاج نے کہا کہ اس سے قبل عوام نے متعدد بار ضلع انتظامیہ سے مطالبہ کیا ہے لیکن ابھی تک سروس فراہم نہیں کی گئی ۔انہوں نے کہاکہ کوٹرنکہ کے مختلف علا قوں میں اس سے قبل آگ کی کئی وارداتیں ہوئی ہیں جن کے دوران غریب لوگوں کا لاکھوں کانقصان ہوا ہے ۔مقامی لوگوں نے گورنر انتظامیہ سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ کوٹرنکہ میں فائر اینڈ ایمر جنسی سروس فراہم کی جائے ۔
 

نوشہرہ کے بریری گائوں میں چوری کی واردات 

چور لاکھوں روپے مالیت کے زیورات لے کر فرار ،معاملہ درج 

رمیش کیسر 
 
نوشہرہ //سب ڈویژن نوشہرہ کے بریری گائوں میں ایک چوری کی واردات میں چو لاکھوں روپے مالیت کے زیورات لے کر فرار ہو گئے تاہم پولیس نے معاملہ درج کر تے ہوئے تحقیقات شروع کر دی ہیں ۔بریری گائوں کے اندر سنگھ ولد جوگندر سنگھ جو کہ پیشہ سے ڈرائیور ہیں نے بتایا کہ وہ اپنے کنبہ کے دیگر افراد کیساتھ رشتہ داروں کے گھر میں شادی کے سلسلہ میں نوشہرہ گئے ہوئے تھے تاہم واپسی پر انہوں نے اپنے گھر کا تالا اور دیگر الماریوں کے تالے ٹو ٹے ہوئے پائے جس کے بعد انہوں نے پولیس کو جانکاری فراہم کی ۔پولیس کے مطابق چوروں نے زیورات کیساتھ ساتھ چور 45ہزار روپے نقدی بھی لئے کر فرار ہوئے ہیں جبکہ اس سلسلہ میں ایک مقدمہ درج کر کے مزید تحقیقات شرو ع کر دی گئی ہیں ۔یہاں یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ نوشہر ہ کے مختلف علا قوں میں اس سے قبل بھی کئی مرتبہ چوری کی وارداتیں سامنے آچکی ہیں ۔ایس ایچ ائو نوشہرہ نے کہا کہ اس سلسلہ میں انہوں نے کچھ افراد کو حراست میں لیا ہو ا ہے جبکہ پولیس کی کوشش ہے کہ مذکورہ معاملہ میں ملو ث افراد کو جلداز جلد بے نقاب کیا جائے ۔
 

خاتون ٹیچر کیساتھ بدسلوکی کا معاملہ 

سرکاری سکول میں تعینات ماسٹر کیخلاف معاملہ درج 

راجوری //سرحدی ضلع راجوری میں پولیس نے سرکاری سکول میں تعینات ایک ماسٹر کی جانب سے ساتھی خاتون ٹیچر کو ہراسان کر نے کا الزام سامنے آنے کے بعد معاملہ درج کرتے ہوئے مزید تحقیقات شروع کردی ہے ۔پولیس ذرائع کے مطابق ایجوکیشن زون راجوری کے گور نمنٹ مڈل سکول تنونی میں اپنی خدمات انجام دینے والی ایک خاتون ٹیچر نے مبینہ طورپر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ سکول ہیڈ ماسٹر کی جانب سے مبینہ طورپر اس کو ہراساں کیا جارہا ہے ۔تحریری شکایت درج کروانے کے بعد مذکورہ ماسٹر کیخلاف وومن پولیس اسٹیشن راجوری میں ایک کیس زیر ایف آئی آر نمبر 16/2019درج کرلیا گیا ہے ۔ایس ایس پی راجوری نے کہاکہ مذکورہ معاملہ سامنے آنے کے بعد کیس درج کرلیا گیا ہے جبکہ اس سلسلہ میں مزید تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں ۔
 

  منڈی پونچھ سڑک پر جام روز کا معمول

حسین محتشم
پونچھ// منڈی پونچھ سڑک کی کشادگی کے چلتے اس سڑک پر ٹریفک جام معمول بن گیا ہے جس کی وجہ سے مسافروں و طلباء کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہاہے ۔اس سلسلہ میں ضلع انتظامیہ کی جانب سے اگر چہ تین گھنٹوں تک کام بند کر نے کا حکم بھی جاری کیا ہوا ہے لیکن اس کے باوجود بھی مذکورہ سڑک مسافروں کیلئے درد سر بن چکی ہے۔جمعہ کے دن بھی منڈی پونچھ سڑک پر ایک مال بردار ٹرک کے پھنس جانے کی وجہ سے ڈھائی گھنٹوں تک مسافروں کو جام میں انتظار کرنا پڑا ۔جام کی وجہ سے پریشان سرکاری ملازمین اور طلباء نے کہا کہ مذکورہ سڑک پر جام لگنے کی وجہ سے وہ دفتروں اور سکولوں میں وقت پر نہیں پہنچ سکتے ۔مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ وہ اس سڑک پر جام جیسی صورتحال کیساتھ نمٹنے کیلئے ٹھوس اقدامات اٹھا ئے تاکہ مسافروں کو مشکلات سے چھٹکارہ مل سکے ۔
 

ڈھچل محلہ کی عوام نے دریاپر پل تعمیر کرنے کی مانگ کی 

جاوید اقبال
مینڈھر//مینڈھر قصبہ سے دو کلو میٹر کی دوری پر دریائے مینڈھر کے کنارے  پر واقع محلہ ڈھچل گوہلد کی عوام نے انتظامیہ سے مانگ کر تے ہوئے کہاکہ دریا پر پل تعمیر کیا جائے تاکہ لوگوں کو عبور ومرور میں دقتوں کا سامنا نہ کرنا پڑے ۔مقامی لوگوں نے کہاکہ دریا کے کنارے ایک نجی ہائر سکنڈری سکول بھی ہے اور سکول کے بچوں کو بھی دریا پار کر نے میں شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑرہاہے ۔مقامی لوگوں نے کہاکہ اس سے قبل بھی متعدد بار مانگ کی گئی تاہم انتظامیہ کی جانب سے کو ئی مثبت جواب نہیں ملا۔انہوں نے کہاکہ اس دریا سے دن بھر سینکڑوں لوگ گزرتے ہیں اور بارشوں کے موسم میں کئی کلو میٹر دور تک سفر کرکے سکولی بچے اور عام لوگ گھر پہنچتے ہیں جو کہ لوگوں کے ساتھ نا انصافی ہے۔محمد رشید نامی ایک مقامی شخص نے کہاکہ مذکورہ معاملہ کے سلسلہ میں انہوں نے کئی بار انتظامیہ سے رجوع کیا تاہم اس وقت تک کو ئی مثبت قدم نہیں اٹھا یا گیا جس کی وجہ سے مقامی لوگوں اور طلبا ء کو دقتوں کا سامنا کرنا پڑرہا ہے۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ سے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ مذکورہ مقام پر ایک پل تعمیر کیا جائے تاکہ طلباء اور مقامی لوگوں کو بارشوں میں مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔
 

کوٹرنکہ میں راشن کی قلت صارفین پریشان 

محمد بشارت 
 
کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹر نکہ میں راشن کی قلت کی وجہ سے صارفین کو شدید مشکلات کا سا مناکرنا پڑرہا ہے ۔مقامی لوگوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ کوٹر نکہ کے مختلف علا قوں میں گزشتہ دو ماہ سے صارفین کو راشن ہی فراہم نہیں کیا گیا ہے جس کی وجہ سے بی پی ایل اور اے اے وائی زمروں میں آنے والے مستحقین مہنگے داموں پر راشن خریدنے پر مجبور ہو چکے ہیں ۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ مختلف اسکیموں کے تحت فراہم کردہ راش گزشتہ دو ماہ سے فراہم ہی نہیں کیا جارہا ہے ۔محمد یونس سامی شخص نے بتایا کہ نیشنل فوڈ سیکورٹی ایکٹ کے تحت صارفین کو معیاری و معقول راشن فراہم نہیں کیا گیا ۔اسی طرح لڑکوتی پنچایت ودیگر علاقوں میں راشن ڈیپو گزشتہ کئی ماہ سے خالی پڑے ہوئے ہیں جس کی وجہ سے صارفین پریشان ہو چکے ہیں ۔ایک سماجی کارکن و سابقہ سرپنش تاج ٹھکر نے ریاستی انتظامیہ سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ کوٹرنکہ میں راشن کی قلت کو جلداز جلد دور کیا جائے ۔اس سلسلہ میں ایڈیشنل ڈائریکٹر فوڈ سپلائی نے بتایا کہ گزشتہ برس جوں سے لے کر فروری 2019تک MMSFESاسکیم کے تحت 50فیصد راشن ملتا رہا جبکہ مارچ کا پورا راشن فراہم کیا گیا ہے لیکن اپریل کا راشن نہیں ملا جبکہ اب جون سے مناسب مقدار میں راشن فراہم کیا جائے گا۔