مانسون اجلاس|| قومی اینٹی ڈوپنگ اورسنٹرل یونیورسٹی (ترمیمی) بل پاس گتی شکتی یونیورسٹی وقت کی ضرورت ہے:پردھان

نئی دہلی//یو این آئی// کھیل اور کھلاڑیوں کے لیے قومی اینٹی ڈوپنگ بل 2022 کو بدھ کو پارلیمنٹ نے منظوری دے دی۔راجیہ سبھا نے تقریباً تین گھنٹے کی بحث کے بعد اسے صوتی ووٹ سے منظور کر لیا۔ ایوان نے بل کو سلیکٹ کمیٹی کو بھیجنے کی تحریک کو بھی مسترد کر دیا۔ لوک سبھا اس بل کو پہلے ہی پاس کرچکی ہے ۔ یہ بل قائمہ کمیٹی کو بھجا گیا تھا۔بحث کا جواب دیتے ہوئے وزیر کھیل انوراگ سنگھ ٹھاکر نے کہا کہ یہ بل ملک میں کھیلوں اور کھلاڑیوں کے لیے دوستانہ ماحول پیدا کرنے کے لیے ضروری ہے ۔ادھرمرکزی وزیر تعلیم دھرمیندر پردھان نے بدھ کو کہا کہ ملک میں بنیادی ڈھانچے کو ترقی دینے اور عالمی سطح پر ایک کثیر جہتی علمی نیٹ ورک بنانے کی ضرورت کے پیش نظر ایک مرکزی مرکز بنانے کی سمت میں کام کیا جا رہا ہے ۔ یونیورسٹی۔سنٹرل یونیورسٹیز (ترمیمی) بل 2022 پر بحث کا جواب دیتے ہوئے مسٹر پردھان نے کہا کہ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ریل اینڈ ٹرانسپورٹ کو گتی شکتی وشو ودیالیہ میں تبدیل کرنے کا انتظام ہے ۔ ملک میں جس طرح سے بنیادی ڈھانچہ ترقی کر رہا ہے اور کثیر جہتی انفراسٹرکچر کو ڈیزائن کیا جا رہا ہے ، اس کے لیے مناسب انسانی وسائل کی ضرورت ہے ۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے ویژن کے تحت ٹرانسپورٹ، ریلوے ، سڑک، آبی گزرگاہ، ہوا بازی اور بندرگاہوں کے ساتھ ساتھ انفارمیشن ٹیکنالوجی، ٹیلی کمیونیکیشن کے تمام محکموں کو ایک پلیٹ فارم پر لانے کا منصوبہ عمل میں لایا جا رہا ہے ۔

 

وڈودرا میں نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ریل اینڈ ٹرانسپورٹ کی شکل میں ایک ڈیمڈ ٹو بی یونیورسٹی چل رہی ہے ، جسے ریلوے کی قیادت میں ایک عالمی معیار کی متحرک یونیورسٹی میں تبدیل کیا جائے گا۔وزیر تعلیم نے کہا کہ یہ بل 21ویں صدی کے تقاضوں کو مدنظر رکھتے ہوئے لایا گیا ہے ۔ قومی تعلیمی پالیسی میں ایسی دفعات شامل کی گئی ہیں جس سے نہ صرف روزگار حاصل کرنے میں مدد ملے گی بلکہ روزگار پیدا کرنے والے والے بھی تیار ہوں گے ۔اس سے پہلے بحث کا آغاز کرتے ہوئے بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) کی رکن پارلیمان رنجنا بین بھٹ نے کہا کہ ریلوے کے پیچیدہ نظام کو موثر طریقے سے چلانے کے لیے تکنیکی طور پر تعلیم یافتہ اور ہنر مند نوجوانوں کی ضرورت ہے ۔ وقت کا تقاضا ہے کہ نوجوان کورس مکمل کرنے کے بعد ٹرین آپریشن کی باریکیوں کو جانیں اور فوری طور پر کام شروع کریں۔ انہوں نے کہا کہ دنیا کے کئی ممالک جیسے امریکہ، جاپان، روس، برطانیہ اور چین نے ایسی یونیورسٹیاں قائم کی ہیں جن میں تحقیق و مطالعہ ہوتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ گتی شکتی یونیورسٹی کا درجہ ملنے سے ، قومی ادارہ برائے ریل اور ٹرانسپورٹ، وڈودرا کا درجہ بڑھے گا اور پورے ملک کے نوجوان اس سے مستفید ہوں گے ۔