لتر پلوامہ جھڑپ:قربانیاں رواں تحریک کا انمول اثاثہ

سرینگر//حریت (گ)، حریت (ع)، تحریک حریت اور مسلم کانفرنس نے لتر پلوامہ میں جاں بحق ہوئے جنگجو کو خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ قربانیاں ہی رواں تحریک آزادی کو ہر قدم پر نہ صرف تحفظ فراہم کررہی ہیں بلکہ ان قربانیوں کی بدولت ہی کشمیریوں کی جدوجہد آزادی ایک فیصلے کن مرحلے میں داخل ہو گئی ہے ۔حریت (گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ نوجوان اپنے گرم گرم لہو سے اس تحریک کو سینچتے ہیں۔ حریت رہنما نے کہا کہ مسئلہ کشمیر آج تک ایک حل طلب مسئلہ کی صورت میں نہ صرف جنوبی ایشیاء، بلکہ امن عالم کے لیے بھی ایک سنگین خطرہ بناہوا ہے۔ حریت رہنما نے جموں کشمیر کے نوجوانوں کی طرف سے ہتھیار اُٹھانے کے معاملہ کو بھارت کی ضد اور ہٹ دھرمی کا ایک ردّعمل قرار دیتے ہوئے کہا کہ مسئلہ کشمیر کے منصفانہ حل کے ساتھ ہی نہ صرف جموں کشمیر، بلکہ پورے جنوبی ایشیا میں ایک نئے دور کا آغاز ہونے کی اُمید کی جاسکتی ہے، مگربھارت کے نشۂ قوت کی وجہ سے جموں کشمیر میں انسانی جانوں کا زیاں جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ جموں کشمیر میں جو بھی خون خرابہ ہورہا ہے اور اس میں جو بھی لوگ مارے جاتے ہیں اس کی تمام تر ذمہ داری بھارت اور اس کے تنگ نظر سیاستدانوں پر عائد ہوتی ہے جو مسئلہ کشمیر کے تاریخی پسِ منظر اور زمینی حقائق کو فوجی غرور میں نظرانداز کررہے ہیں۔ حریت راہنما نے لواحقین کے ساتھ دلی ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے انہیں صبرو استقلال عطا کئے جانے کی دُعا کی۔ حریت (ع) نے فورسز کے ساتھ ایک تصادم آرائی کے دوران لتر پلوامہ میں جاں بحق ہوئے عسکریت پسندعرفان احمد راتھر کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’ہمارے ہزاروں جوانوں کی گرانقدر قربانیاں رواں تحریک آزادی کو ہر قدم پر نہ صرف تحفظ فراہم کررہی ہیں بلکہ ان قربانیوں کی بدولت ہی کشمیریوں کی جدوجہد آزادی ایک فیصلے کن مرحلے میں داخل ہو گئی ہے‘ ۔موصولہ بیان کے مطابق حکمرانوں کی جانب سے یہاں کے نوجوانوں کو طاقت اور تشدد کے بل پر پشت بہ دیوار کرنے کا عمل اگرچہ جاری ہے تاہم اس قسم کے حربوں سے ایک مبنی برحق جدوجہد میں مصروف عوام کے عزم کو شکست نہیں دی جاسکتی اور نہ مسئلہ کشمیر کی حساسیت کے حوالے سے عالمی رائے عامہ کو گمراہ کیا جاسکتا ہے۔بیان میں کہا گیا کہ حق خودارادیت کے حصول کیلئے دی جارہی بے مثال جانی و مالی قربانیاں تبھی ثمر آور ہو سکتی ہیں جب پوری قوم اور قیادت بھر پور یکسوئی ، یکجہتی اور استقامت کا مظاہرہ کرکے حصول مقصد تک اپنے عزم اور استقلال کا مظاہرہ کرے۔بیان میں حریت رہنما  مختار احمد وازہ کی گزشتہ ایک ہفتے سے مسلسل تھانہ نظر بندی کی مذمت کی گئی۔تحریک حریت چیئرمین محمد اشرف صحرائی نے چودھری باغ لتر پلوامہ معرکہ میں جاں بحق ہوئے جنگجوکو خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ’ ہمارے جوانوں نے اپنے خون سے تحریک آزادی کشمیر کی آبیاری کرتے ہوئے متازعہ کشمیر کو عالمی سطح پر اُجاگر کرنے میں بنیادی رول ادا کیا اور ان ایثار پیشہ نوجوانوں کی پوری قوم مرہونِ منت ہے‘۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے اپنے قبضے کو فوجی طاقت کی بنیاد پر دوام بخشنے کے لیے تمام حربے آزمائے اور جمہوری اور سیاسی سطح پر جاری تحریک آزادی کو بزور طاقت کچلنے اور عوام کو زیر کرنے کی ظلم وجبر کی پالیسی اپنائی گئی۔ صحرائی نے کہا کہ بھارت کے ظلم وجبر، تشدد، مار دھاڑ اور قتل وغارت گری کی پالیسی نے ہمارے جوانوں کو سر ہتھیلی پر رکھ کر میدان کارزار میں آنے کے لیے مجبور کردیا۔ مسلم کانفرنس کے چیئرمین شبیر احمد ڈار نے خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ جموں کشمیر کے لوگ بھارت سے مکمل آزادی کے بغیر کوئی بھی حل تسلیم نہیں کریں گے ۔