فروٹ منڈی نوپورہ سوپور میں دکانوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ|| ۔50افراد کیخلاف کیس درج ڈائریکٹر ہارٹیکلچر(مارکیٹنگ) ، ایریا مارکیٹنگ آفیسر اور فائدہ اٹھانے والے48افرادشامل

 عظمیٰ نیوز سروس

سرینگر //اینٹی کورپشن بیورو فروٹ منڈی نوپورہ سوپور میں دکانوں کی غیر قانونی الاٹمنٹ کے فراڈ میں ڈائریکٹر ہارٹیکلچر (پلاننگ اینڈ مارکیٹنگ محمد سلطان تیلی، اُس وقت کے ایریا مارکیٹنگ آفیسر سوپور محمد اشرف دمنو اور دیگر 48 غیر قانونی فائدہ اٹھانے والوں کیخلاف مقدمہ درج کیا ہے۔محکمہ باغبانی منصوبہ بندی اور مارکیٹنگ کی طرف سے فروٹ منڈی سوپور میں دکانوں کے الاٹمنٹ میں بڑے پیمانے پر گھپلے کے الزامات کی تحقیقات کے لیے اے سی بی کے ذریعے ایک مشترکہ سرپرائز چیک کیا گیا۔ یہ الزام لگایا گیا تھاکہ متعلقہ ایریا مارکیٹنگ آفیسر نے فروٹ منڈی یونین کے کارندوں کے ساتھ ملی بھگت سے ان کی مرضی سے دکانیں الاٹ کیں اور دو دہائیاں قبل پریمیم کے ساتھ فارم جمع کرانے والے باوقار درخواست دہندگان کو نظر انداز کیا گیا ۔ یہ سامنے آیا کہ محکمہ باغبانی(منصوبہ بندی اور مارکیٹنگ)نے پھلوں اور سبزیوں کے کاشتکاروں/ تاجروں/ کمیشن ایجنٹوں/ جوائنٹ فرموں/ سوسائٹیوں/ فیڈریشنوں/ کارپوریشنوں اور دیگر این جی اوز سے فروٹ منڈی پر 700 دکانوں کی الاٹمنٹ کے لیے تجویز کردہ فارم پر پیشکشیں طلب کیں۔ سبزی منڈی نوپورہ سوپور کے ذریعہ جاری کردہ نوٹسز میں شرائط و ضوابط بھی واضح کئے گئے اور اس پیشکش کے جواب میں، 595 درخواستیں 25,000/- کی پہلی پریمیم قسط کے ساتھ موصول ہوئیں۔تحقیقات سے یہ بات بھی سامنے آئی کہ دکان کی جگہوں کی الاٹمنٹ قرعہ اندازی کے بجائے من مانی کی گئی۔ ایریا مارکیٹنگ آفیسر سوپور محمد اشرف دمنو نے من پسند مستحقین کو جگہ دینے کے لیے جعلسازی کا سہارا لیا۔ الاٹ شدہ فائدہ اٹھانے والوں سے پریمیم وصول کرنے کے بجائے، ایریا مارکیٹنگ آفیسر سوپور نے ان مستفیدین کو فہرست میں شامل کیا جنہوں نے مقررہ وقت کے اندر درخواست بھی نہیں دی تھی، بشمول ان کا اپنا بیٹا اور بہنوئی کے۔ تحقیقات سے یہ بات سامنے آئی کہ 29ستمبر 2001 کو کٹ آف ڈیٹ کے باوجود 2009، 2012، 2013 اور 2014 میں ایسے اڑتالیس (48) مستفیدین کو اسی پریمیم 100,000/-روپے پر درج کیا گیا ، جو؎ سال 2001 میں مقرر کیا گیا جبکہ اس دوران زمین کی شرح میں کئی گنا اضافہ ہوا۔تحقیقات سے یہ بھی انکشاف ہوا کہ محکمہ باغبانی (پلاننگ اینڈ مارکیٹنگ)کے افسران/ اہلکاروں نے اس معاملے کو 2009 تک غیر فعال رکھا۔ الاٹمنٹ اس مقصد کے لیے مطلع کردہ شرائط و ضوابط کو نظر انداز کرتے ہوئے کی گئیں۔ یہ بھی پتہ چلا ہے کہ دکان کی جگہوں کے قبضے کے حقوق مستفید ہونے والوں کو پچاس ہزار روپے کے پریمیم کی تیسری قسط وصول کیے بغیر دیئے گئے ہیں، جو محکمہ کی طرف سے جاری کردہ الاٹمنٹ کی شرائط و ضوابط کی پیشگی شرائط میں سے ایک تھی۔ اس وقت کے ڈپٹی ڈائریکٹر ہارٹیکلچر اور اس وقت کے ایریا مارکیٹنگ آفیسر سوپور نے 591 درخواست دہندگان کے حق میں الاٹمنٹ کے احکامات جاری کیے بغیر مکملایک لاکھ روپے کے پریمیم کی رقم وصول کیے بغیر۔پلاننگ اینڈ مارکیٹنگ ڈیپارٹمنٹ کشمیر کے ملوث افسران/اہلکاروں نے ایک اچھی سازش کے تحت آپس میں اور فائدہ اٹھانے والوں کے ساتھ، اپنے عہدوں کا غلط استعمال کرتے ہوئے، بے ایمانی اور دھوکہ دہی سے مالی منافع کے بدلے، دکانوں کے لیے درخواست فارم کا انتظام کیا۔ فروٹ اینڈ ویجیٹیبل منڈی نوپور میں کئی سالوں کی کٹ آف ڈیٹ اور نوٹیفائیڈ شرائط و ضوابط کو نظر انداز کرتے ہوئے ان کے حق میں الاٹمنٹ کے احکامات جاری کیے جن میں ان کے رشتہ دار بھی شامل ہیں، مستحق افراد کو محروم رکھا گیا، اس طرح خود کو اور مستحقین کو ناجائز فائدہ پہنچایا گیا۔ انہوں نے جان بوجھ کر نادہندہ الاٹیوں کے خلاف کوئی تجویز کردہ پینل کارروائی نہیں کی اور وقت پر مطلوبہ پریمیم رقم کا صحیح احساس نہیں کیا، جس کے نتیجے میں بالآخر اسی طرح کے 1,21,88,000/- روپے کا نقصان ہوا۔ ملزمین کی جانب سے اس وقت کے ڈپٹی ڈائریکٹر ہارٹیکلچر محمد سلطان تیلی، اس وقت کے ایریا مارکیٹنگ آفیسر، سوپور محمد اشرف دمنو، استفادہ کنندگان اور دیگر کی جانب سے کوتاہی اور کمیشن کی کارروائیاں قابل سزا جرم ہیں۔ اس کے مطابق، کیس ایف آئی آر نمبر 06/2024 بارہمولہ میں درج کیا گیا اور تحقیقات کا آغاز کیا گیا۔ مقدمے کے اندراج کے فوراً بعد ملزمان بشمول سرکاری ملازمین کے گھروں کی تلاشی بھی لی گئی جس کے دوران اس معاملے سے متعلق متعدد مجرمانہ دستاویزات بھی برآمد کر کے قبضے میں لے لی گئیں۔