صفاکدل میں چوری کا معمہ حل،نقب زن مال مسروقہ سمیت گرفتار

سرینگر//صفاکدل سرینگرمیں پولیس نے چوری کا ایک معمہ حل کرتے ہوئے ملزم کی تحویل سے مال مسروقہ برآمد کیا ہے۔گزشتہ سال اکتوبر کی 10 تاریخ کو تھانہ پولیس صفاکدل کو ساجد بشیر خان ساکن ملک صاحب صفاکدل کی جانب سے تحریری شکایت موصول ہوئی جس میں کہا گیا کہ نقب زنوں نے ان کی موبائل فروخت کرنے والی دوکان واقع ملک صاحب سے مختلف کمپنیوں کے مہنگے ترین موبائل فون اڑالئے ہیں۔پولیس نے معاملے کی نسبت مقدمہ زیر نمبر 214/2021 درج کرکے تحقیقات شروع کردی۔ دوران تفتیش چند مشتبہ افراد کو تھانہ میں پوچھ گچھ کیلئے طلب کیا گیا۔دوران تفتیش ایک شخص کے ملوث ہونے کے بارے میں تصدیق ہوئی جس کی شناخت رفیق احمد شاہ ساکن گاڈورہ گاندربل کے طور پر ہوئی جسے پولیس نے فوری طور پر گرفتار کرلیا۔ملزم کے انکشاف پر اس کے قبضے سے مال مسروقہ برآمد کیا گیا۔پولیس کے مطابق کیس کی مزید تحقیقات جاری ہے اور مزید گرفتاریوں متوقع ہیں۔ اسی دوران پولیس اسٹیشن گڑھی نے سرینگر ہوائی اڈے پر ایئر لائنز میں نوکری دلانے کے بہانے لوگوں سے پیسے وصول کرنے والے ایک ملزم کو گرفتار کیا۔ ملزم کی شناخت مشتاق احمد جنجوساکن فرستوار خانصاحب بڈگام کے طور پر کی گئی ہے۔ 29جنوری کو کو عمر علی ساکن شلپورہ آلوچی باغ کی طرف سے ایک شکایت موصول ہوئی جس میں الزام لگایا گیا کہ اس نے سرینگرہوائی اڈے پر نوکری دلانے کیلئے نقدی 93900روپے کی رقم ادا کی۔اطلاع موصول ہونے کے بعد تھانہ پولیس شیر گڑھی نے کیس زیر ایف آئی آر نمبر 16/2022 درج کرکے اس معاملے کی نسبت مزید تحقیقات شروع کردی۔ سرینگر پولیس نے سائبر پولیس کشمیر کی تکنیکی مدد سے ملزم کو گرفتار کیااور اب تک 58800 روپے کی رقم برآمد کر لی گئی ہے۔ تفتیش کے دوران یہ بات بھی سامنے آئی کہ مذکورہ ملزم کے ساتھ دیگر کئی افراد بھی شامل ہیں جوکہ لوگوں کو نوکریاں دلانے کا جھانسہ دیتے ہیں ۔ اس کیس کی مزید تفتیش جاری ہے اورمزید گرفتاریاں متوقع ہیں ۔