شاہراہ چوتھے روز بھی بند

بانہال+سرینگر // تین سو کلومیٹر لمبی جموں سرینگر شاہراہ رامسو اور رام بن کے درمیان متعدد مقامات پر بھاری پسیوںکی وجہ سے چوتھے روز بھی بند رہی۔جمعرات کو متعدد مقامات پر پسیوں کو ہٹانے کا کام دوسرے روز بھی جاری رہا تاہم شاہراہ کی بحالی کی کوئی کوشش کامیاب نہیں ہو سکی اور  گاڑیوں کی آمدورفت ٹھپ رہی۔البتہ بدھ کو بانہال اور سرینگر کے درمیان سڑک بحال کی گئی تھی۔ بھاری برفباری اور بارشوں کی وجہ سے شیر بی بی اور رام بن کے درمیان شاہراہ ایک درجن مقامات پر پتھروں اور پسیوں کی وجہ سے متاثر ہوئی ہے جبکہ بیشتر پسیوں کو صاف کرنے کے بعد انوکھی فال ، پنتھیال اور گانگرو کے مقام پرشاہراہ کی بحالی کا کام مسلسل گرتے پتھروں کی وجہ سے جمعرات کی شام تک بھی ممکن نہ ہوسکا۔ شاہراہ کے حوالے سے  ڈی ایس پی ٹریفک پردیپ سنگھ سین نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ شاہراہ پر گانگرو ، پنتھیال ، انوکھی فال اور بیٹری چشمہ کے مقامات پر پسیوں اور پتھروں کے گرنے کا سلسلہ شدت کے ساتھ جاری رہا جس کی وجہ سے شاہراہ پر ٹریفک کی بحالی چوتھے روز بھی ممکن نہیں ہو سکی ۔ انہوں کہا کہ لگاتار گر رہے پتھروں کی وجہ سے فورلین شاہراہ کی تعمیراتی کمپنیوں کی طرف سے بحالی کا کام بار بار متاثر ہورہا ہے اور اسی کوشش کے دوران بدھ کی رات تعمیراتی کمپنی کا ایک آپریٹر پتھروں کی زد میں آکر زخمی بھی ہوا۔
انہوں نے کہا کہ بلاک ڈیولپمنٹ آفس رامسو کے نزدیک سڑک کا ایک حصہ دھنس گیا ہے جبکہ گانگرو کے مقام پر بھی ایک بھاری پسی جمعرات کی دوپہر بعد سڑک پر آگری۔انہوں نے کہا کہ شاہراہ پر ٹریفک کی بحالی کے بارے میں جمعہ کو ہی کچھ بتایا جاسکتا ہے۔ جمعرات کی صبح جواہر ٹنل اور بانہال میں ہلکی برفباری بھی ہوئی تاہم سرینگر اور بانہال کے درمیان شاہراہ متاثر نہیں ہوئی۔ ادھر وادی میں جمعرات کو موسم نے عجیب کروٹیں لیں۔کبھی دھوپ تو کبھی دھوپ میں ہی برفباری ہوتی رہی۔مھکمہ موسمیات کا کہنا ہے کہ آنے والے کئی دنوں تک موسم خشک رہے گا، ٹھنڈی ہوائیں چلیں گی اور رات کے درجہ حرارت میں گراوٹ آتی جائے گی۔جمعرات کو وادی کے کئی علاقوں میں صبح کے وقت ہلکی برفباری ہوئی۔