سنڈے مارکیٹ میںگرم ملبوسات کی خریداری جوبن پر | قطار در قطار خریداروں کی بھیڑ،ٹریفک جام کے مناظر

سرینگر// سرف موسم کے باوجود سرینگر کے مشہور و معروف بازار سنڈے مارکیٹ میں اتوار کو گرم ملبوسات کی خریداری جوبن پر رہی  ۔وادی میں سردی اور یخ بستہ ہوائوں سے نمٹنے کیلئے شہر سرینگر سمیت وادی بھر میں گرم ملبوسات کی مانگ میں بے تحاشہ اضافہ ہوا ہیں اور اس سلسلے میں شہر کے مشہور و مصروف ترین بازاروں کے علاوہ پٹری فروشوں کی دکانوں پر صارفین کا سخت رش رہا۔ سردی کا مقابلہ کرنے کیلئے مرد و خواتین کی ایک بری تعداد بازاروں میں گرم ملبوسات کی خریداریوں میں مشغول ہو کر اپنے من پسند گرم کپڑوں کوہاتھوں ہاتھ حاصل کرنے کی دوڈ میں رہیں۔ اتوار کو معروف سنڈے مارکیٹ میں بھی مرد و خواتین کی بڑی تعداد گرم ملبوسات کی خریداری میں مصروف رہیں،اور اس سلسلے میں پولو گراونڈ سے لیکر بٹہ مالو تک پٹریوں پر لوگوں کی بڑی بھیڑ خریداری کرتی رہیں۔ پٹری فروشوں کی دکانوں اور سٹالوں پر بھی لوگ گرم ملبوسات کی خرید و فروخت کر رہے ہیں اور پٹری والوں کی بھی اچھی خاصی چل پڑی ہیں۔اس دوران جگہ جگہ پٹریوں اور دکانوں کے علاوہ سڑکوں پر ٹھیلوں کی بھی بڑی بھر مار نظر آرہی ہے جہاں مختلف اقسام کے جوتوں کی خریداری بڑئے پیمانے پر  رہی۔ سنڈے مارکیٹ میں سینکڑوں کی تعداد میں تاجر اپنی چھاپڑیاں لگاکر ان پر مال سجاتے ہیں جن میں کراکری، ہوزری، جرابے، جوتے ، سٹیشنری، کتابیں ، ملبوسات، الیکٹرانک ساز و سامان ،بھی شامل ہوتا ہے ۔ سنڈے مارکیٹ شہر کاایک وہ واحدمارکیٹ ہیں جہاں پر اس تعدادمیں لوگ خریداری کرتے ہیں اور خریداری کی غرض سے ہی لوگ یہاں آتے ہیں ۔پٹریوں پر ریڈیوں لگانے والے تاجروں نے کہا کہ اس مارکیٹ کی وجہ سے ہی ان کے اہل و عیال کا پیٹ پلتا ہے کیوں کہ ہفتے کے چھ دن وہ سنڈے مارکیٹ کیلئے مال تیار رکھتے ہیں اور اس روز یہاں فروخت کرتے ہیں ۔ اس دوران سنڈے مارکیٹ میں  خریداروں کی بھیڑ سے ٹریفک جام کے مناظر بھی دیکھنے کو ملے اور دن بھر ٹی آر سی سے لیکر امیراکدل تک ٹریفک کی نقل و حرمت میں خلل پڑ گیا۔