راجوری میں پبلک ٹرانسپورٹ کی ’لائف لائن‘ خستہ حالی کا شکار آٹو رکشہ بنیادی سہولیات سے محروم، پارکنگ کیلئے کوئی جگہ نہیں!

 سمت بھارگو

راجوری// راجوری قصبہ میں عوامی نقل و حمل کی ’لائف لائن‘ سمجھے جانے والے، آٹو رکشے وینٹی لیٹر کے نظام پر چل رہے ہیں کیونکہ حکام آٹو سٹینڈ سمیت بنیادی سہولیات کو یقینی بنانے میں ناکام رہے ہیں۔ ٹرانسپورٹ کی خستہ حالی سے ناراض ہو کر آٹو رکشہ ڈرائیوروں نے ہفتہ کو انتظامیہ کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ سرحدی قصبہ راجوری میں، تھری وہیلر ڈیزل پر مبنی آٹو رکشا عوامی نقل و حمل کا اہم ذریعہ ہیں یہ گاڑیاں شہر کے تین مختلف راستوں پر چلتی ہیں جن میں پرانے بس سٹینڈ سے کھیوڑہ روٹ، سلانی پل سے عبداللہ پل روٹ اور کھانڈلی پل سے عبداللہ پل روٹ شامل ہیں۔ ان میں سے سینکڑوں پبلک ٹرانسپورٹ گاڑیاں ان تین مقررہ راستوں سے گزرتی ہیں اور روزانہ ہزاروں مسافروں کو ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جاتی ہیں۔ ہفتے کے روز، آٹو رکشہ ڈرائیوروں نے راجوری میں ایک میٹنگ کی جس میں ان کی خراب حالت پر تشویش کا اظہار کیا اور مزید کہا کہ قصبے میں عوامی نقل و حمل کی لائف لائن وینٹی لیٹر پر ہے جس سے ڈرائیوروں اور مالکان کا نقصان ہو رہا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ حالات کی خرابی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ پارکنگ سلاٹ کی عدم دستیابی ہے اور انہیں اپنی گاڑیاں سڑک کے بیچوں بیچ سڑک پر کھڑی کرنی پڑتی ہیں جس سے مسافروں کو ٹریفک جام بھی ہو جاتا ہے لیکن ان کے لیے کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے۔ کیونکہ آٹو اسٹینڈز دستیاب نہیں ہیں۔ ڈرائیوروں نے ان تمام راستوں پر آٹو سٹینڈز قائم کرنے پر زور دیا تاکہ آٹو رکشا کی آسانی سے نقل و حرکت کو آسان بنایا جا سکے۔ جموں و کشمیر اپنی پارٹی کے رہنما مشتاق بھٹ نے کہا کہ یہ بدقسمتی کی بات ہے کہ ایک طرف انتظامیہ نے آٹو رکشوں کو سڑکوں پر چلنے کے لیے روٹ پرمٹ منظور کیے ہیں لیکن دوسری طرف کوئی سہولیات نہیں دی گئی ہیں۔ بھٹ نے مزید کہا کہ گمنام آٹو رکشہ یونینوں کے کچھ خود ساختہ نمائندے بھی ان غریب آٹو رکشہ ڈرائیوروں سے پیسے بٹور رہے ہیں جو اپنی گاڑیاں چلانے اور اپنی زندگی چلانے اور اپنے خاندان کا پیٹ پالنے کے لیے دن رات محنت کر رہے ہیں۔ بھٹ نے کہا، “ہم انتظامیہ خاص طور پر موٹر وہیکل ڈیپارٹمنٹ (MED) سے درخواست کرتے ہیں کہ وہ آٹو رکشا بنانے کے علاوہ آٹو کی فلاح و بہبود کیلئے تمام ضروری انتظامات کو یقینی بنائے”۔