راجوری میں جنوبی کشمیر کے تین جنگجو گرفتار،ڈرون سے گرائے گئے ہتھیار ضبط:پولیس

سرینگر//جموں کشمیر پولیس کے ڈائریکٹر جنرل دلباغ سنگھ نے ہفتے کو کہا کہ راجوری میں جن تین جنگجوﺅں کو گرفتار کیا گیا اُنہوںنے کنٹرول لائن پر ڈرون کے ذریعے گرائے گئے ہتھیار حاصل کئے تھے۔
انہوں نے ڈرون کے ذریعے ہتھیار ڈالنے کو ایک چیلنج سے تعبیر کیا۔
انہوں کہا کہ مصدقہ اطلاع ملنے کے بعد فورسز نے ایک آپریشن کے دوران تین جنگجوﺅں کو گرفتار کیا حالانکہ مذکورہ جنگجوﺅں نے گرینیڈ چلا کر فرار ہونے کی کوشش کی لیکن اُن کا پھینکا گیا گرینیڈ پھٹنے سے رہ گیا جس کے بعد اُن کی گرفتاری عمل میں لائی۔اُن کی تحویل سے اے کے47قسم کی 2بندوقیں،4ہینڈ گرینڈ،3چینی ساخت کے پستول اور دیگراسلحہ کے علاوہ ایک لاکھ روپے نقد شامل ہے۔
یہ سارے ہتھیار کنٹرول لائن کے اس پار ڈورن کے ذریعے گرائے گئے تھے۔
مذکورہ جنگجوﺅں کی شناخت راہل بشیر ساکن ٹکن پلوامہ،عامر جان ساکن لیلہ ہار پلوامہ اور یونس وانی ساکن کیلر شوپیان کے طور کی گئی ہے۔
اس سے قبل آج صبح پولیس نے دعویٰ کیا کہ اُنہوں نے قصبہ راجوری میں تین مشتبہ جنگجوﺅں کو گرفتار کرکے اُن کی تحویل سے اسلحہ و گولہ بارود بر آمد کیا ہے۔
اطلاعات کے مطابق ایک جنگجو مخالف آپریشن کے دوران فورسز اور پولیس نے راجوری قصبہ میں مشترکہ طور تینوں مشتبہ افراد کو گرفتار کیا۔