خطہ چناب میں کشیدگی کے بعد عائد بندشوں میں نرمی،انٹرنیٹ پر پابندی برقرار

اشتیاق ملک
ڈوڈہ //ڈوڈہ کے ایڈیشنل ضلع بھدرواہ میں مسلسل چھٹے روز کرفیو نافذ رہنے کے بعد بدھ کو ڈیڑھ گھنٹے تک ڈھیل دی گئی جس کے بعد قصبہ میں لوگوں کی کافی بھیڑ رہی۔ اس دوران موبائل انٹرنیٹ و براڈ بینڈ خدمات بھی معطل رہیں۔ تفصیلات کے مطابق رواں ماہ کی 9 تاریخ کو بھدرواہ میں گستاخ رسول کے خلاف ہوئے احتجاج کے دوران پیدا تنازعہ پر انتظامیہ نے وادی چناب کے تینوں اضلاع میں کرفیو نافذ کر کے انٹرنیٹ سروسز کو معطل کیا تھا تاہم پیر کو ڈوڈہ، ٹھاٹھری و گندوہ سے بندشیں ہٹائی گئیں اور بھدرواہ میں کرفیو بدستور نافذ رہا۔ اے ڈی سی بھدرواہ چوہدری دلمیر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سیول سوسائٹی کے ساتھ متعدد بار بات چیت کے بعد انتظامیہ نے دوپہر ساڑھے تین بجے سے لے کر پانچ بجے تک کرفیو میں نرمی برتی جس کے پرامن طریقے سے تمام بازار کھل گئے اور بھاری تعداد میں لوگ خرید و فروخت کر کے اپنے گھروں کو واپس لوٹے۔ انہوں نے کہا کہ حالات بہتری کی طرف آرہے ہیں اور آنے والے دنوں میں مزید نرمی برتی جائے گی۔ اے ڈی سی نے سیول سوسائٹی سے امن و اماں قائم رکھنے میں انتظامیہ کو اپنا ہر ممکن تعاون دینے کی اپیل کی۔ اطلاعات کے مطابق بھدرواہ قصبے میں بدھ کے روز مسلسل چھٹے روز بھی کرفیو نافذ رہنے سے لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرناپڑا۔ذرائع نے بتایا کہ قصبے میں سبھی کاروباری مراکز و تعلیمی ادارے بند پڑے ہوئے جبکہ انٹرنیٹ خدمات بھی معطل ہے۔معلوم ہوا ہے کہ بھدرواہ میں کسی بھی ناخوشگوار واقعے کو ٹالنے کی خاطر جگہ جگہ اضافی اہلکاروں کی تعیناتی عمل میں لائی گئی ہے۔ذرائع کے مطابق امن دشمن عناصر کو بڑے پیمانے پر تلاش کیا جارہا ہے جنہوں نے قابل اعتراض مواد سوشل میڈیا پر پوسٹ کیا تھا۔سرکاری ذرائع نے بتایا کہ بھدرواہ قصبے میں چھٹے روز بھی کرفیو نافذ رہا تاہم اس دوران لوگوں کو ضروریات زندگی کی اشیاء خریدنے کی اجازت دی گئی۔انہوں نے بتایا کہ دونوں طبقہ کے ذی عزت شہریوں کے ساتھ پولیس کے سینئر آفیسران بات چیت کر رہے ہیں تاکہ قصبے میں حالات کو دوبارہ معمول لایا جاسکے۔  اْن کے مطابق خرمن امن میں رخنہ ڈالنے والے عناصر کے خلاف قانونی کارروائی عمل میں لائی گئی اور کئی ایک کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔سرکاری ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ حالات پوری طرح سے قابو میں ہے اور لوگ بھی انتظامیہ کو اپنا بھر پور تعاون فراہم کر رہے ہیں۔دریں اثنا موبائیل انٹرنیٹ اور برانڈ بینڈ سہولیا ت مسلسل معطل رہنے سے طلبا وطالبات کو مشکلات کاسامنا کرناپڑرہا ہے۔مقامی لوگوں نے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ بھدرواہ قصبے میں انٹرنیٹ خدمات کو فوری طورپر بحال کیا جائے تاکہ طلبا اپنی تعلیم کو جاری رکھ سکے۔