جولائی 2016سے جون 2019تک | 17306گرفتاریاں، 404جیل بھیج دئے گئے

نئی دلی //وزارت داخلہ کے اعداد و شمار میں کہا گیا ہے کہ 2016کے ایجی ٹیشن کے بعد حالیہ برسوں میں پتھرائو کے واقعات میں کافی حد تک کمی واقع ہوئی ہے۔ وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ 2016 میں 2653 پتھرائو کے واقعات رونما ہوئے جو برہان وانی کی ہلاکت کے بعد ایسے واقعات کے دوران 10571 نوجوانوں کو گرفتار کیا گیا جن میں سے بیشتر کو وارننگ دے کر چھوڑ دیا گیا تاہم 276 کو جیل بھیج دیا گیا۔ ان اعداد وشمار کے مطابق 2017میں پتھرائو کے 1412 واقعات رونما ہوئے جس کے دوران 2838 شرپسند عناصر کو گرفتار کیاگیا جن میں سے 63 کو جیل بھیج دیا گیا تھا ۔ اعداد وشمار میں کہا گیا ہے کہ 2018 کے دوران 1458 پتھرائو کے واقعات رونما ہوئے جس کے دوران 3797 نوجوانوں کو گرفتار کیا گیا جن میں سے 65 کو جیل بھیج دیا گیا۔ وزارت داخلہ کے مطابق 2019 کے پہلے چھ ماہ میںپتھرائو کے 40واقعات رونما ہوئے جس کے دوران 100افراد کو گرفتار کرکے جیل بھیج دیا گیا۔ وزارت داخلہ نے کہا ہے کہ گورنر راج کے بعد وادی میں پتھرائو کے واقعات میں کمی آئی جبکہ جنگجوئوں کی ہلاکت میں اضافہ ہوا۔ 2018میں 240جنگجو مارے گئے جبکہ پتھرائو کے واقعات کے دوران سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کے زخمی ہونے کی تعداد میں بھی کمی واقع ہوئی۔