تاخیری حربے موجودہ کشیدہ صورتحال کی اصل وجہ

سرینگر//حریت(ع) چیرمین اورمتحدہ مجلس علماء کے امیر میرواعظ ڈاکٹر مولوی محمد عمر فاروق نے خلیفہ چہارم حضرت علی ؓکے یوم شہادت کے موقعے پر اس انسان کامل کی پوری زندگی کو مسلمانان عالم کیلئے مشعل راہ قرار دیتے ہوئے ان کی مجاہدانہ اور سرفروشانہ حیات طیبہ کے ہر پہلو کو مسلمان اور پوری انسانیت کیلئے لازوال سرچشمئہ ہدایت قرار دیا ہے ۔رمضان المبارک کے عشرئہ نجات کے دوران وعظ و تبلیغ کے سلسلے میں آستانہ عالیہ حضرت پیر دستگیر صاحبؒ سرائے بالا امیراکدل میں نماز عصر سے قبل ایک بھاری دینی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے  میرواعظ نے کہا کہ حضرت علی ؓ نے اپنی پوری زندگی اسلام اور پیغمبر اسلام کے دفاع اور نصرت میں صرف کی اور اس عظیم ہستی کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ ان کی ولادت اللہ کے گھر خانہ کعبہ میں ہوئی ہے اور ان کی شہادت بھی اللہ کے گھر مسجد کوفہ میں ہوئی ۔میرواعظ نے مسئلہ کشمیر کو بھارت اور پاکستان کے درمیان موجودہ کشیدہ صورتحال کی بنیادی وجہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس خطے میں ہو رہے کشت و خون اور انسانی جانوں کا زیاں کسی بھی ذی حس انسان کیلئے خوشی کا باعث نہیں ہوسکتا تاہم حکومت ہندوستان کو یہ بات سمجھ لینی چاہئے کہ مسئلہ کشمیر کے حل کے ضمن میں ان کی جانب سے اختیار کی جارہی حقائق سے بعید پالیسی اور تاخیری حربے موجودہ کشیدہ صورتحال کی اصل وجہ ہے۔ میرواعظ نے کرناہ سیکٹر کے شمس بری علاقے میں جاں بحق ہوئے جنگجوںمدثر احمد اور شیراز احمد کو ان شاندار الفاظ میں خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری نوجوان ایک جائز جدوجہدمیں اپنی جانوںکا نذرانہ پیش کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ایک طرف حکومت ہندوستان اور اس کے ریاستی حواری جنگبندی اور مذاکرات کا راگ الاپ رہے ہیں اور دوسری طرف کشمیر میں کشت و خون کے سلسلے کسی نہ کسی بہانے دراز کیا جارہا ہے اور آئے روز کشمیری حریت پسند عوام کو طاقت اور تشدد کے بل پر پشت بہ دیوار کرنے کے ہر غیر جمہوری اور غیر انسانی حربے بروئے کار لائے جارہے ہیں۔