بجلی بحران سنگین تر

فیاض بخاری+بلال فرقانی
بارہمولہ+سرینگر//بارہمولہ ضلع میں برقی رو کی عدم دستیابی کو لیکر ٹریڈرس فیڈریشن نے مین چوک میں ہاتھوں میں موم بتیاں رکھ کر زبردست احتجاجی دھرنا دیا ۔ اس دوران احتجاجی تاجروں نے بجلی بلیں بھی نذر آتش کر کے گورنر انتظامیہ کے خلاف سخت نارضگی کا اظہار کیا۔ بیوپارمنڈل بارہمولہ کے جنرل سیکرٹری انجینئر طارق احمد مغلو کی قیادت میں سوموار کو ٹریڈرس فیڈریشن نے مین چوک میں احتجاجی مظاہرے کئے ۔ انہوں نے گورنر انتظامیہ اور این ایچ پی سی کے خلاف زبردست نعرے بازی کرتے ہوئے کہا ہے کہ رمضان مبارک کے اس مقدس مہینے میں بھی بجلی کٹوتی کی جارہی ہے جس وجہ سے لوگوں کو زبر دست مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وادی کے دیگر اضلاع کی طرح بارہمولہ میں بھی محکمہ بجلی کی جانب سے بلا جواز کٹوتی نے لوگوں کو کافی پریشان کردیا ہے ۔ طارق احمد مغلو نے بتایا کہ بجلی کی آنکھ مچولی کے نتیجے میں نہ صرف صارفین کو بلکہ کاروباری اداروں سے وابستہ لوگ بھی مختلف مسائل سے دوچار ہورہے ہیں ۔ تاجروں نے دھمکی دی کہ اگر آنے والے دنوں میں بجلی کی صورتحال ٹھیک نہیں کی گئی تو سکریٹریٹ گھیرائو کے ساتھ ساتھ بجلی بلوں کی ادائیگی روک دی جائیگی، جس کا انتظامیہ اور متعلقہ محکمہ خود ذمہ دار ہوگا۔ادھر شہر سرینگر کے کئی علاقوں میں بھی بجلی کی عدم دستیابی پر احتجاج کیا گیا۔ خاص کر خواتین گھروں سے باہر آئیں اور انہوں نے کرالہ کھڈ، حبہ کدل، فتح کدل اور دیگر کئی علاقوں میں دھرنا دیا اور بجلی کی عدم دستیابی پر احتجاج کیا گیا۔