بار ایسو سی ایشن جموں کا رویہ قابل افسوس :مینڈھر بار

 
مینڈھر//با ر ایسوسی ایشن مینڈھر نے جموں بار کی روہنگیاکے خلاف ہڑتال کی مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ افسوسناک بات ہے کہ کٹھوعہ کی 8سالہ آصفہ کے قتل پر جموں بار ایسو سی ایشن نے آواز تک نہیں اٹھائی ۔ بار نے کہاکہ اگر ایسے ہی سلسلہ جاری رہاتو کل یہ کہاجائے گاکہ جموں میں آباد تمام مسلمانوں کو بدر کیاجائے ۔ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایسو سی ایشن کے صدر ایڈووکیٹ بشارت حسین خان نے کہا کہ روہنگیا مسلمانو ں کے خلا ف سازشیں رچی جا رہی ہیں جو قابل مذ مت ہے اور خطہ پیر پنچال و خطہ چناب کے وکلاء کو ایسی مہمات کے خلاف آواز بلند کرنی چاہئے ۔ان کا کہنا تھا کہ روہنگیاظلم کے ستائے ہوئے ہیں جن کی مدد کرنا ہمارا فرض بنتاہے ۔ انہو ں نے کہا کہ افسو س کی بات ہے جمو ں بار ایسوسی ا یشن کے ممبر ان روہنگیا مسلما نو ں کو بدر کرنے کی سازشیں رچ رہے ہیں جو مرکزی حکومت اور اقوام متحدہ کی اجازت سے یہاں آباد ہیں ۔ان کا کہنا تھا کہ جمو ں با ر ایسوسی ایشن کے ممبر ان روہنگیا ئی مسلما نو ں کو جمو ں سے نکالنے کے بعد کل یہ بھی کہہ سکتے ہیں جمو ں میں بس رہے مسلمانوں کو بھی بدر کیاجائے ۔بار صدر نے کہاکہ خطہ پیر پنجال اور خطہ چنا ب کے وکلاء حضر ات سے اپیل کی جاتی ہے کہ وہ جموں بار کے اس رویہ کے خلاف آواز بلند کریں ۔انہو ں نے کہا کہ بڑ ے افسو س کی بات ہے کہ کٹھو عہ میں بچی کے قتل پر جمو ں با ر ایسو سی ایشن نے آواز نہیں اُ ٹھا ئی کیو نکہ و ہ مسلمان تھی، اگر اس قسم کا واقعہ کسی ہند و بچی کے ساتھ ہو اہو تا تو یقینا شدید رد عمل ہوتالیکن آصفہ چونکہ مسلمان بچی تھی اس لئے بار نے منہ تک نہیں کھولا۔ انہو ں نے کہا کہ وہ جموں بار کے صدر کے بیان کی مذمت کرتے ہیں جس میں انہوںنے جغرافیائی تناسب تبدیل ہونے کی بات کی ہے۔اس موقعہ پر بار ایسو سی ایشن کے نا ئب صدر ایڈووکیٹ شوکت چوہد ری ، ایڈووکیٹ محمد شمیم خان، ایڈووکیٹ نا زک شاہ، ایڈووکیٹ وسیم خان، ایڈووکیٹ یو سف چوہد ری، ایڈووکیٹ افضال میر، ایڈووکیٹ الیاس خان وغیرہ بھی موجود تھے ۔