ایڈوکیٹ انکورشرماخطہ جموں کے امن کیلئے خطرہ :سیرت کمیٹی رام بن

 رام بن//ضلع رام بن کی مسلم تنظیموں نے جموں کے ایک وکیل انکورشرماکوخطہ جموں کے پرامن ماحول کیلئے خطرہ اورایک نام نہادلیڈرقراردیتے ہوئے حکومت سے مانگ کی کہ ہے مذکورہ وکیل کی طرف سے مفادخصوصی اورسیاسی مفادکی خاطرفرقہ وارانہ بھائی چارے اورہندومسلم بھائی چارے میں دراڈڈالنے کی کوششوں پرقدغن لگانے کامطالبہ کیاہے۔ یہاں منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں سیرت کمیٹی کے صدراور چیئرمین آئمہ مساجد رام بن شوکت مغل اورمولوی نذیراحمدنے جموں میں ایک پریس کانفرنس کے دوران انکورشرماکی طرف سے دیئے گئے فرقہ پرست بیانات کی شدیدالفاظ میں مذمت کی ہے۔انہوں نے کہاکہ اگرحکومت نے شرپسندعناصرپرلگام نہ لگائی تو بھدرواہ قصبہ میں پراسرارحالات میں ایک شخص کی موت کے معاملے پربھدرواہ میں حالات کسی بھی وقت قابوسے باہرہوسکتے ہیں۔انہوں نے دعویٰ کہاکہ صوبہ جموں کے لوگ انکورشرماجیسے لوگوں کی حقیقت جانتے ہیں اوریہ اچھی طرح سمجھتے ہیں کہ وہ سیاسی فائدہ حاصل کرنے کیلئے گھنائونے ایجنڈے پرکام کررہاہے۔انہوں نے جموں کے لیڈروں اورسول سوسائٹی ممبران پرزوردیاہے کہ وہ گندی سیاست کرنے والے عناصراورذاتی مفادحاصل کرنے کیلئے صوبہ جموں میں ایک مخصوص طبقے کے خلاف زہریلے بیانات دینے والوں کی چالوں کوسمجھیں۔انہوں نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ ضلع رام بن میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کوبرقراررکھیں۔انہوں نے ایک جٹ پرجموں صوبہ کے ماحول کوپراگندہ کرنے کاالزام عائد کیا۔انہوں نے کہاکہ اگروادی چناب یاضلع رام بن میں حالات خراب ہوئے تواس کیلئے ایک جٹ تنظیم کے ایڈوکیٹ انکورشرماذمہ دارہوں گے۔