اٹانومی کی بحالی ہی مسئلہ کشمیر کاسیاسی حل:نیشنل کانفرنس

سرینگر//نیشنل کانفرنس اٹانومی کی بحالی کے ایجنڈا اور پالیسی پر قائم و دائم ہے ،یہی ایک ایسا حل ہے جو سب کیلئے قابل قبول ہوسکتا ہے۔ ان باتوں کا اظہار نیشنل کانفرنس کے صوبائی صدر ناصر اسلم وانی نے کل ہارون دارا میں حلقہ انتخاب سونہ وار کے یک روزکنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہا کہ نیشنل کانفرنس مسئلہ کشمیر کے سیاسی حل کیلئے اپنی جدوجہد جاری رکھے گی اور ہمارا یہی موقف ہے کہ اگر اٹانومی سے بہتر کوئی ایسا حل ہے جو تینوں خطوں کے لوگوں کے جذبات اور احساسات کی ترجمانی کرتا ہے تو ہم اس قبول کرتے ہیں۔ شمالی زون صدر محمد اکبر لون اور وسطی زون صدعلی محمد ڈار نے کہا کہ پی ڈی پی حکومت کا تجربہ عوام کیلئے کڑوا ثابت ہوا۔ کبھی سینک کالنیوں اور کبھی علیحدہ پنڈت کالینوں کے قیام کی کوششیں کی گئیں ، کبھی سکولوں سے سٹیٹ سبجیکٹوں کی فراہمی کرنے کی کوشش کی گئی تو کبھی شرناتھیوں کو مستقل باشندگی دینے کیلئے راہ ہموار کرنے کی کوششیں کی گئیں، کبھی حکومتی پشت پناہی میں آر ایس ایس کی ہتھیار بند ریلیوں کا انعقاد کیا گیا تو کبھی جنگلاتی اراضی کے نام پر جموں میں پسماندہ مسلمانوں کو بے گھر کیا گیا۔انہوں نے الزام لگایا کہ محبوبہ مفتی کی حکومت نے وادی میں آپریشن آل آئوٹ اور آپریشن CASOکی داغ بیل ڈالی اور نوجوان پود کیخلاف اعلانِ جنگ کیااور ان کی غلط اور ظالمانہ پالیسیوں کی وجہ سے ہی آج کشمیر جل رہا ہے ۔س موقعے پر پارٹی لیڈران شوکت حسین گنائی(ایم ایل سی)، پیر آفاق احمد ضلع صدر سرینگر،سلمان علی ساگر، احسان پردیسی، بشیر احمد گنائی اور عبدالمجید بٹ بھی موجود تھے۔