اننت ناگ میں ہولناک آگ

 سرینگر//جنوبی قصبہ اننت ناگ کے مصروف ترین تجارتی مرکز میں دوران شب آگ کی ایک ہولناک واردات میں 18 دکانیں و گودام اور13رہائشی مکانات خاکستر ہوگئے ۔ اس واقعہ میں مجموعی طور کروڑوں روپے کی املاک خاکستر ہوئی اور درجن بھر کنبے مکمل طور بے گھر ہوگئے ۔ اتوار اور سوموار کی درمیانی شب دو بجکر40منٹ پر اننت ناگ کے چینی چوک ریشی بازار علاقے میں ایک شاپنگ کمپلیکس کی اوپری منزل سے اچانک آگ ظاہر ہوئی جس نے آناً فاناً کئی دیگر دکانوں اور گوداموںکو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا ۔یہ علاقہ قصبے کا مصروف ترین تجارتی مرکز ہے جو گنجان آبادی کے ساتھ ساتھ دکانوں اور گوداموں پر مشتمل ہے۔آگ کے شعلے بلند ہوتے ہی علاقہ میں افراتفری پھیل گئی اور لوگ گھروں سے باہر آکر آگ بجھانے کی کارروائی میں جٹ گئے ۔اس دوران ضلع کے مختلف علاقوںسے فائر برگےڈ کی متعددگاڑےاں درجنوں اہلکاروں کے ہمراہ جائے واردات پر پہنچ گئیں اور بچاﺅ کارروائی شروع کی۔ عینی شاہدین نے بتاےا کہ آگ انتہائی ہولناک تھی جس نے بڑے پیمانے پر تباہی مچا دی ۔مقامی لوگوں نے بتایا کہ آگ کی تپش دوردور سے محسوس کی جارہی تھی اور اس کے شعلے تمام ملحقہ علاقوں سے بھی دیکھے گئے۔اتھل پتھل کے عالم میں اگر چہ مقامی لوگوں اور دکانداروںنے دکانوں سے سامان باہر نکالنے کی کوشش کی لیکن آگ کی بھیانک لپٹوں نے انہیں قریب نہیں آنے دیا ۔اس دوران آگ کے شعلوں نے کئی رہائشی مکانات اور دیگر عمارات کوبھی اپنی لپیٹ میں لے لیا۔اس موقعے پر بچوں اور خواتین کی چیخ و پکار کے دلدوز مناظر بھی دیکھے گئے ۔محکمہ فائر اینڈ ایمرجنسی سروسز کے مطابق آگ بجھانے کی کارروائی میں مختلف اسٹیشنوں سے لائے گئے ایک درجن سے زائدآگ بجھانے والی گاڑیوں نے حصہ لیا۔ڈپٹی ڈائریکٹر فائر اینڈ ایمر جنسی سروسز بشیر احمد شاہ نے خود آگ بجھانے کی کارروائی کی نگرانی کی۔ کئی گھنٹوں کی سخت جدوجہد کے بعد اگر چہ آگ پر مکمل طور قابو پا لیا گےا تاہم ا س سے قبل ہی 18 دکانیں اور گودام خاکستر ہو چکے تھے جبکہ ان میں موجود ہر قسم کا سامان بھی راکھ کے ڈھیر میں تبدیل ہوگیا۔اس کے ساتھ ساتھ 13رہائشی مکانات جن میں گودام بھی تھے ، آگ کی لپٹوں میں آکر خاکستر ہوگئے اور ان میں مقیم کنبے بے گھر ہوگئے۔ جو دکانیں راکھ کے ڈھیر میں تبدیل ہوئے، ان میں ریڈی میڈ ملبوسات، بجلی سامان ، فرنشنگ، ادویات اور فٹ وئیر کی دکانیں شامل ہیں۔کئی مکانوں، د کانوں اور گوداموںکو پانی کی وجہ سے نقصان پہنچا۔ابتدائی طور پر آگ لگنے کی وجہ بجلی کی شارٹ سرکٹ بتائی گئی تاہم پولیس نے معاملے کی نسبت کیس درج کرکے تحقیقات شروع کردی ہے۔اس واردات میں مجموعی طور پرکروڑوں روپے مالےت کی جائیدادمکمل طور پر تباہ ہو گئی۔ واردات کے بعد علاقہ میں ماتم کا ماحول تھا اور متاثرہ دکاندارروتے بلکتے نظر آئے۔اس دوران اپنے متاثرہ ساتھیوں کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کرنے کےلئے علاقے کے تاجروں نے پیر کو اپنا کاروبار معطل رکھا۔دریں اثنا نورآباد کولگام کے کٹ مرگ نامی گاﺅں میں آگ کی ایک واردات میں3رہائشی مکانات خاکستر ہوگئے۔کے این ایس کے مطابق یہ واردات شام کے وقت پیش آئی ۔پیر کی شام آگ کی اس واردات میں جمال الدین دیدڑ،علی محمد دیدڑ اوررفیق احمد دیدڑ کے رہائشی مکانات تباہ ہوگئے۔ فائر اینڈ ایمرجنسی اہلکاروں نے بروقت کارروائی کرکے آگ کو مزید پھیلنے سے روک دیا۔