تازہ ترین

مزید خبریں

سیاحتی مقامات پر تمام سہولیات بہم رکھنے پر خورشیدگنائی کازور محکمہ سیاحت کے اعلیٰ حکام کی گورنر کے مشیر کے ساتھ میٹنگ  سری نگر//گورنر کے مشیر خورشید احمد گنائی نے محکمہ سیاحت کی طرف سے آنے والے سیاحتی سیزن کے لئے کئے جارہے انتظامات کا جائزہ ایک میٹنگ کی صدارت کرتے ہوئے لیا۔کمشنر سیکرٹری سیاحت ریگزن سمفل ، ناظم سیاحت کشمیر نثار احمد وانی،مختلف ٹورازم اتھارٹیوں کے سی ای اوز نے میٹنگ میں شرکت کی۔اس موقعہ پر خورشید گنائی نے سیاحتی مقامات پر عوامی سہولیات معرض وجود میں لانے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ ریاست  کی سیر پر آنے والے سیاح مستفید ہوں ۔ انہوں نے ان مقامات پر باقاعدہ طور پر بیت الخلائوں کا اِنتظام کرنے کی بھی صلاح دی۔انہوں نے اس موقعہ پر ریاست میں بڑھنے والے سیاحتی دبائو کے مدنظر تمام سی ای اوز سے تجاویز طلب کیں ۔انہوں نے متعلقہ افسروں کو ہدایت دی کہ وہ ٹورازم ڈیولپم

گلمرگ میں بلدیاتی سہولیات کا فقدان

بارہمولہ// شہر ہ آفاق گلمرگ میں بنیادی سہولیات کا کافی فقدان پایا جارہاہے جس کے نتیجے میں سیاحوں کو زبردست مشکلات کا سامنا ہے ۔ جبکہ بنیادی سہولیات کا فقدان ہونے کے باعث اس خوبصورت جگہ کا وجود خطرے میں پڑگیا ہے۔سیاحوں کا کہنا ہے کہ یہاں سڑکوں پرصفائی کا  زبردست فقدان ہے ،جس کی وجہ سے اُنہیں مشکلات درپیش ہیں ۔انہوں نے کہا ہے کہ چونکہ اس سیزن میں پچھلے برسوںسے زیادہ برفباری ہوئی ہے جس کے نتیجے میں یہاں کی تمام اندرونی سڑکیں خستہ حال ہوچکی ہیں۔ جبکہ ان سڑکوں پر جگہ جگہ گہرے گڑھے بن گئے ہیں  اور مذکورہ سڑکوں کی ناگفتہ بہہ حالت سے سیاحوں اور ٹرانسپورٹروں کو شدید مشکلات پیش آرہی ہیں ۔ ایک مقامی سیاح سمیر احمد نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ اس سڑک کی حالت ا س قدر خستہ ہے اس پر اب ٹریفک کی نقل وحمل  دشوار بن گئی ہے اور ٹرانسپورٹر بھی مشکل سے ہی ان سڑکوں پر اپنی گاڑیاں چلا رہے ہیں

بجلی کی عدم دستیابی | مارکی پورہ پٹن اورباغات کالونی سربل مشکلات سے دوچار

بارہمولہ //شمالی قصبہ پٹن کے مارکی پورہ علاقے بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے مقامی آبادی کو اس متبرک ماہ میں سحری و افطار کے دوران سخت مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہاہے ۔مقامی لوگوں نے محکمہ بجلی پر الزام عائد کرتے ہوئے بتایا کہ مارکی پورہ پٹن علاقہ گزشتہ کئی روز سے بجلی سے محروم ہے جس کے نتیجے میں مقامی اآبادی کو سخت مشکلات کا سامنا ہے ۔لوگو ں کا کہنا ہے کہ وہ بجلی کی آنکھ مچولی سے کافی تنگ آچکے ہیں جس سے وہ پریشانوں میں مبتلا ہوگئے ہیں کیونکہ محکمہ کی طرف سے مرتب کردہ شیڈول کے مطابق بجلی فراہم نہیں کی جارہی ہے جس سے  لوگوں کو سحری و افطار کے درون زبردست مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہاہے۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ یہاں کے بجلی کے کھمبے اور ترسیلی لائنیں بھی کافی خستہ ہوچکی ہیں جس کی وجہ سے مقامی آبادی کوسخت مشکلات درپیش ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ اگر چہ انہوں نے کئی بار متعلقہ محکمہ کو اس بارے

رسیونگ اسٹیشن 8سال سے تشنۂ تکمیل

کپوارہ//شمالی ضلع کپوارہ میں اگرچہ بجلی کا سخت بحران ہے تاہم کرالہ پورہ علاقہ میں کئی سال سے بجلی کے بحران نے سنگین رخ اختیار کیا ۔کرالہ پورہ میں قائم رسیونگ اسٹیشن کو دو سال قبل اگرچہ اپ گریڈ کیا گیا اور ایک بڑے صلاحیت والے بجلی ٹرانسفار مر کو نصب کیا گیالیکن صارفین کا کہنا ہے اس سے علاقہ کو کوئی فائدہ نہیں پہنچا اور بجلی کا بحران جو ں کا تو ں ہے ۔لوگو ں کا کہنا ہے کہ کرالہ پورہ رسیونگ اسٹیشن اوور لوڈ ہونے کے سبب 8سال قبل روات پورہ پنزگام میں ایک اضافی رسیونگ اسٹیشن تعمیر کیا گیا لیکن تا حال مذکورہ رسیونگ اسٹیشن میں ابھی تک بجلی ٹرانسفارمر کو نصب نہیں کیا گیا اور درجنو ں دیہات کو سپلائی کرنے والے کرالہ پورہ رسیونگ اسٹشین اوور لو ڈ ہو تا ہے اور اس علاقہ میں ابھی بھی سرما کا بجلی کٹوتی شیڈول نا فذ ہے ۔لوگو ں کا کہنا ہے کہ کرالہ پورہ میں جب پہلے رسیونگ اسٹیشن قائم کیا گیا تو اس میں 6میگا

سوپور میں محکمہ بجلی کے خلاف عوام برہم

سوپور //شمالی قصبہ سوپور اور اس کے گردونواحی علاقوں میں بجلی کی عدم دستیابی کے نتیجے میں لوگوں کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اور لوگوں نے محکمہ پی ڈی پی کے جانب سے بجلی کی غیر ضروری کٹوتی پر سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہیں بیشتر اوقات بجلی سے محروم رکھا جاتا ہے خاصکر اس ماہ مقدس میں عموماََ سحری و افطار کے وقت بجلی غائب ہو جاتی ہے ۔ لوگوں نے محکمہ اور ضلع انتظامیہ کوخبردار کیا کہ اگر اس صورتحال پر قابو نہیں پایا گیا اور قصبہ سوپور میں بجلی کی سپلائی بحال کرنے اور بجلی شیڈول کے مطابق فراہم نہیں کی گئی تو لوگ سڑکوں پر نکلنے کیلئے مجبور ہوجائیںگے جس کی ذمہ داری حکام پر عائد ہوگی۔  

قمریہ پارک گاندربل میں گندگی کے ڈھیر

گاندربل//دودرہامہ گاندربل میں نالہ سندھ کے کنارے پر 90 کی دہائی میں ایک خوبصورت پارک تعمیر کی گئی جو قمریہ پارک کے نام سے عوام کے نام وقف کردی گئی ۔پارک کے ایک کونے میں بچوں کی تفریح کے لئے جھولے بھی نصب کئے گئے تھے جو وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ٹوٹ گئے ۔گرمیوںمیں مختلف سکولوںمیں زیر تعلیم طلاب یہاں سیرو تفریح کی خاطر آتے رہتے ہیں لیکن پارک کے متصل نالیوں میں گندگی کے ڈھیرجمع ہوجانے سے پورے علاقے میں بدبو پھیلی رہتی ہے۔دودہرہامہ کے ایک شہری منظور احمد صوفی نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ کئی سالوں سے ان نالیوں کی صفائی نہیں کی گئی جس کی وجہ سے پورے علاقے میں بدبو پھیلی ہوئی ہے۔ اس ضمن میں میونسپل کمیٹی گاندربل کے چیئرمین الطاف احمد نے کہا کہ بہت جلد نالیوں کی صفائی کی جائے گی۔   

امید ہے نئی حکومت مسئلہ کشمیر کی حقانیت تسلیم کریگی:میر واعظ

سرینگر// حریت (ع) چیئر مین میرواعظ عمر فاروق نے امید ظاہر کی ہے کہ نئی دہلی کی نئی حکومت مسئلہ کشمیر کی حقانیت تسلیم کرے گی۔انہوںنے علیحدگی پسند جماعتوں پر عائد پابندی ہٹانے کا مطالبہ کرتے ہوئے عید سے قبل اعتماد سازی کے اقدامات اٹھانے کی وکالت کی۔حریت صدر دفتر راجباغ پر میرواعظ مولانا محمدفاروق اور خواجہ عبد الغنی لون کی برسیوں پر خراج عقیدت ادا کرنے کیلئے ’’ہند پاک کشیدگی کے تناظر میں مذاکراتی عمل کی اہمیت‘‘ کے زیر عنوان سمینار کا انعقاد کیا گیا۔ میر واعظ عمر فاروق نے توقع ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ نئی دہلی کی نئی حکومت اپنی کشمیر پالیسی کو بامعنی مذاکراتی عمل کیلئے سر نو ترتیب دے گی،تاکہ با وقار طرز پر اس مسئلہ کا حل برآمد کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا ’’ اب بھارت بھر میں پارلیمانی انتخابات ختم ہوئے ہیں،ہم امید کرتے ہیں بھارت کی سیاسی قیادت یہ بات سمجھ لے گ

۔1993کی متحدہ حریت کو فعال بنانے کی ضرورت

سرینگر//مسلم کانفرنس کے سربراہ پروفیسر عبدالغنی بٹ نے1993کی متحدہ حریت کے قیام کی وکالت کرتے ہوئے علیحدگی پسند جماعتوں کو مشورہ دیاکہ وہ ماضی کی طرح ایک واحد پلیٹ فارم پر جمع ہو۔ راجباغ میں حریت ہیڈ کواٹر پر میر واعظ محمد فاروق اور خواجہ عبدالغنی لون کے علاوہ شہدائے حول کی برسیوں کے تناظر میں منعقد سمینار’ہند پاک کشیدگی کے تناظر میں مذاکراتی عمل کی اہمیت‘‘ کے دوران پروفیسر عبدالغنی بٹ نے کہا’’ عالمی سطح پر بدلتے سیاسی ماحول کے تناظر میں،ہمیں اس راستے کا انتخاب کرنا چاہے،جو ہمیں حتمی منزل پر پہنچائے۔‘‘ انہوں نے کہا کہ ہند پاک ،برصغیر کے لوگوں کے وسیع تر مفادات کو مد نظر رکھتے ہوئے مسئلہ کشمیر کے تصفیہ کا ادراک کرنا ضروری ہے،اور اس کیلئے دونوں ملکوں کو جرتمندانہ اقدامات کرنے ہونگے۔‘‘ پروفیسر بٹ نے علیحدگی پسند جماعتوں کو میر واعظ عمر

تھنہ منڈی میں دو گروپوں میں آپسی تصادم

تھنہ منڈی //تحصیل تھنہ منڈی کی وارڈ نمبر 13میں ایک ہی کنبے کے دو گروپوں کے درمیان ہوئے آپسی جھگڑے میں مرد و خواتین سمیت 7افراد زخمی ہوگئے جن میں سے دو افراد کو ضلع ہسپتال راجوری ریفر کردیا گیا ہے ۔اراضی تنازعہ کے سلسلہ میں ایک ہی کنبہ کے دو گروپوں کے درمیان اس وقت جھگڑا ہو جبکہ دوسرا گروپت اپنی اراضی میں مکان کا لینٹر ڈالنے کی تیاری کررہاتھا تاہم ایک گروپ نے لینٹر کو روکنے کی کوششیں کی جس پر دونوں گروپوں کے مابین تصادم ہوا ۔اس آپسی جھگڑے کے دوران 2خواتین سمیت 7افراد زخمی ہوگئے ۔زخمیوں کی شناخت محمد رشید ولد احمد دین، برکت حسین ولد محمد حسین جبکہ دوسرے گروپ میں محمد فاضل ولد نظام دین،کبیر حسین ولد سید محمد، محمد حسین ولد نورحسین ،شکیلہ بیگم زوجہ محمد حسین، اسیہ کوثر دختر محمد حسین کے طور پر ہوئی ہے۔تاہم اس دوران پولیس نے موقعہ پر پہنچ کر بیچ بچائو کرتے ہوئے زخمیوں کو ہسپتال منتقل کیا

پہلی پورہ سب سنٹر میں طبی عملے کا فقدان

بارہمولہ //ضلع بارہمولہ کے پہلی پورہ بونیار اوڑی میں ریاستی سرکار نے 2007  میں  ایک سب سنٹر کا درجہ بڑھاکر اُسے پرائمری ہیلتھ سینٹر کا درجہ دیا اور اس کیلئے باضابطہ طور پر لاکھوں روپے کی لاگت سے ایک دو منزلہ نئی عمارت تعمیرکی ۔عمارت میں اگر چہ ہر طرح کی جدید مشینری اور دیگر سازو سامان لایا گیا لیکن کسی ڈاکٹر کو تعینات نہیںکیا گیا ،جس کی وجہ سے لاکھوں روپئے کا ساز سامان دھول چاٹ رہاہے ۔مقامی لوگوں کے مطابق اگر چہ محکمہ نے اس اسپتال کوچلانے کیلئے دو ملازم جن میں ایک ایف ایم پی ایچ ڈبلیو اور ایک فارماسسٹ کو تعینات کیا  تاہم ڈاکٹر کی عدم موجود گی سے یہاں کوئی بیمار آتا ہے نہ ہی ایکسرے مشین اور شعبہ دندان کا سازوسامان استعمال کیا جاتا ہے۔انہوں نے بتایا کہ پہلی پورہ علاقہ تحصیل بونیار کا سب سے بڑا علاقہ ہے اور اس میں دو درجن سے زیادہ دیہات ہے جن میں تقریباً تیس ہزار سے زیادہ

مزید خبریں

ہند وپاک مذاکراتی عمل |  مسئلہ کشمیر سرفہرست رہے گا :پاکستان سرینگر//پاکستان نے بھارت پر واضح کر دیا کہ پاکستان بھارت سے غیر مشروط مذاکرات کے لئے تیار ہے لیکن اس بارے میں ہمارا موقف واضح ہے۔ اسلام آباد میںمیڈیا نمائندں کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے پاکستانی وزیر اطلاعات فواد چودھری کا کہنا تھا کہ کشمیر متنازعہ علاقہ ہے، اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق مسئلہ کشمیر کا حل چاہتے ہیں،پاکستان بھارت سے غیر مشروط مذاکرات کے لئے تیار ہے لیکن اس بارے میں ہمارا موقف واضح ہے کہ جب بھی مذاکرات ہوں گے کشمیر پر بات ہو گی۔انہوںنے کہا کہ پاکستان ہر قسم کی دہشت گردی کے خلاف ہے ۔ انہوںنے مزید کہا کہ طورخم بارڈر پر ہونے والی کشیدگی سے پاک افغان تعلقات پر گہرا اثر پڑا ہم کبھی بھی نہیں چاہتے کہ دونوں ممالک میں کوئی کشیدگی ہو اور افغان وفد کی پاکستان آمد کا مقصد بھی کشیدگی ختم کرنا تھا۔ سرحدی انتظ