تازہ ترین

عبادت گاہوں کو احتیاطاً بند کرینکا فیصلہ

منتظمین سے تعاون پیش کرنے کی تلقین

27 مارچ 2020 (00 : 01 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
سرینگر//کورونا وائرس سے متاثرہ اَفراد کی تعداد میں اِضافہ کو دیکھتے ہوئے اور اسکے پھیلائو کو روکنے کی خاطر ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ سرینگر اور اننت ناگ نے ضلع میں تمام عبادت گاہوں کو بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔بیشترعبادت گاہوں بشمول زیارت گاہوں اور گوردواروں کے منتظمین نے اِنتظامیہ کے اِس فیصلے کی حمایت کی ہے۔اِن میں سے کئی عبادت گاہوں کے منتظمین نے جمعرات صبح سے ہی عبادت گاہوں کو لوگوں کی آمد  کے لئے بند کیا ہے جن میں درگاہ آثارِ شریف حضرت بل ،آستانِ عالیہ نقشبند صاحب، آستان عالیہ دستگیر صاحب اور گوروارہ چھٹی پادشاہی شامل ہیں۔ضلع بھر میں تمام عبادت گاہوں بشمول مساجد ، گوردواروں ، مندروں اورگرجاگھروںکو فی الحال بند کرنے کے اقدامات کئے جارہے ہیں۔ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ نے تمام عبادت گاہوں کی اِنتظامیہ کمیٹیوں اور ضلع کے باشندوں سے درخواست کی ہے کہ وہ اِنتظامیہ کے اِس فیصلے کی عمل آوری کے لئے اپنا تعاون دیں ۔ ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ نے کہا کہ اگر چہ یہ فیصلہ قدرے مشکل ہے تاہم موجودہ حالات کو مد نظر رکھتے ہوئے یہ قدم اُٹھانا ناگزیر ہے۔اُنہوں نے عمل آوری ایجنسیوں سے تلقین کی ہے کہ وہ یہ فیصلہ عملانے کے لئے اَگلے احکامات تک ضروری کارروائی کریں۔ ادھر عارف بلوچ کے مطابق ضلع مجسٹریٹ اننت ناگ کی ہدایت پر انتظامیہ نے زیارت ریشی صاحبؒ اور حنفیہ مسجد زیارت ریشی صاحبؒ کو بند کردیا ہے ۔انتظامیہ کا کہنا ہے کہ مذکورہ زیارت شریف میں عقیدت مندوں کا تانتابندھا رہتا ہے ،اور اس اقدام کا مقصد کوویڈ19-کے پھیلائو کو روکنا ہے ۔