پانی آئے تو کہاں سے۔۔۔ | کرالپورہ سب ڈیوژن میں15فلٹریشن پلانٹ بیکار

16 مئی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

اشرف چراغ
کپوارہ// محکمہ پی ایچ ای کی جانب سے ضلع کپوارہ کے سب ڈو یژن کرالہ پورہ میں لوگو ں کو صاف پینے کے پانی کی فراہمی کے لئے15فلٹریشن پلانٹ قائم کئے ہیں لیکن سب کے سب بے کار ہیں اور آج تک ان فلٹریشن پلانٹوں کے ذریعے لوگو ں کو کبھی بھی پانی صاف کر کے فراہم نہیں کیا گیا ۔کرالہ پورہ سب ڈویژن سے منسلک درجنو ں علاقوں جن میں آ ورہ ،زرہامہ ،کنن پوشہ پورہ ،ترہگام ،گزریال ،سلامت واری آلوسہ ،ہری ،گوگلوسہ ،شمناگ ،بڈنمل ،بٹہ پورہ ،پنزگام ،درد پورہ ریشی گنڈ ،دردسن اوروارسن شامل ہیں ،کے لوگوں کا کہنا ہے کہ آج تک جس مقصد کے لئے فلٹریشن پلانٹ بنائے گئے ہیں وہ مقصد ہی فوت ہواہے کیونکہ ان علاقوں کے لوگ دہائیو ں سے گندہ پینے کا پانی استعمال کرتے ہیں جس کی وجہ سے مہلک بیماریا ں پھو ٹ پڑنے کا اندیشہ ہے ۔اس دوران مذکورہ سب ڈویژن میں 45ایس آر ہیں جن میں پانی جمع کر کے سپلائی کیا جاتا ہے لیکن لوگو ں کے مطابق آج تک ان کی صفائی عمل میں نہیں لائی گئی اور اکثر و بیشتر ایس آر میں ایک سے دو فٹ کیچڑ جمع رہتی ہیں ۔ان علاقوں کے لوگو ں کا یہ بھی کہنا ہے کہ ان ایس آر میں ند ی نالو ں کا پانی براہ راست جمع کیا جاتا ہے جو اس قدر گندہ ہوتا ہے کہ لوگ اس پانی کو استعمال کرنے سے کتراتے ہیں ۔لوگو ں نے مطالبہ کیا کہ محکمہ کے اعلیٰ حکام کو اس بات کی سخت نو ٹس لینی چاہئے کہ اگرکرالہ پورہ سب ڈویژن میں 15فلٹریشن پلانٹ ہیں ، وہ سب کے سب بیکار کیوں ہیں۔
 

تازہ ترین