تازہ ترین

وادی میں برفباری سے معمولات زندگی ٹھپ،بجلی سپلائی متاثر،بیشتر لوگ اپنے اپنے علاقوں میں محصور

8 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

 

کیرن ،مژھل اورجمہ گنڈ ضلع صدر مقام سے منقطع
 

کپوارہ سے کیرن میت کو چارپائی پرپہنچایا گیا

اشرف چراغ 
کپوارہ//ضلع کپوارہ میں رو اں سال کی پہلی برف باری 5جنوری کو ہوئی اور تب سے ضلع کے کیرن ،مژھل ،کرناہ ،جمہ گنڈ اور مژھل کا زمینی رابطہ ضلع صدر مقام سے منقطع ہے اور ان علاقوں میں رہائش پذیر لوگ سڑک رابطہ بند رہنے کی وجہ سے مشکلات سے دو چار ہیں ۔ان علاقوں کے درماندہ مسافر کپوارہ اور دیگر مقامات پر در در کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں ۔میلیال کیرن سڑک بند رہنے کی وجہ سے وہاں درجنوں مریض بستر علالت پر بہتر علاج و معالجہ کے لئے ترس رہے ہیں۔صورتحال کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ سابق ممبر قانون سازیہ اور نیشنل کانفرنس کے سینئر لیڈر ناصر خان کے برادر اصغر فیاض احمد خان کی موت بدھ کو سرینگر کے صدر اسپتال میں ہوئی تاہم سڑک بند رہنے کی وجہ سے میت کو کیرن نہیں پہنچایا گیا۔لواحقین کے مطابق اگر چہ انہوں نے میت کو ہیلی کاپٹر کے ذریعے کیرن پہنچانے کے لئے انتظامیہ سے رابطہ کیا لیکن موسم ساز گار نہ ہونے کی وجہ سے ہیلی کاپٹر اڑان نہ بھر سکا اور جمعرات کی صبح کو کیرن کے لوگ لاش کو چارپائی پر لاد کر کیرن کی طرف نکل پڑے۔آخری اطلاع ملنے تک مقامی لوگ میت کو لیکر کیرن کے نزدیک پہنچ گئے ہیں۔منگل کو کیرن سے آئے ایک شہری شکور احمد نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ کرناہ میں ضروریات زندگی کی چیزیں نایاب ہیں جبکہ مریض بہتر علاج و معالجہ کے لئے ترس رہے ہیں ۔انہو ں نے کہا کہ 12سال کے بعد ایسا ہوا جب مسلسل برف باری کی وجہ سے میلیال کیرن سڑک ایک مہینہ سے بند پڑی ہے ۔یہی صورتحال مژھل اور جمہ گنڈ کی ہے کہ ایک مہینے سے یہ علاقے ضلع صدر مقام سے کٹ کر رہ گئے ہیں ۔ضلع میں گزشتہ دو روز سے برف باری کا سلسلہ جاری ہے اور تازہ اطلاع کے مطابق کیرن کی فرکیاں گلی پر ڈیڑھ ،نستہ ژھن گلی پر 2،مژھل کی زیڈ گلی پر 2فٹ تازہ برف جمع ہوئی ہے جبکہ کیرن کے اندرونی دیہات میں 4،مژھل میں 5اور کرناہ میں دو انچ برف ریکارڈ کی گئی ۔ضلع میں وقفے وقفے سے بھاری برف باری کا سلسلہ جاری ہے ۔کپوارہ قصبہ میں 7،ہندوارہ میں 6،ترہگام اور کرالہ پورہ میں 8انچ برف جمع ہوئی ہے جبکہ دور دراز علاقوں میں ایک سے ڈیڑھ فٹ برف ریکارڈ کی گئی ۔کرالہ پورہ کے درد پورہ ،راشن پورہ ،کاچہامہ ،آوتھ کل ،فرکن ،تمنہ ،ٹھنڈی پورہ ،سونتی پورہ بٹہ پورہ ،رامحال کے ہنگنی کو ٹ ،ہفرڈہ ،ملک پورہ ،ہچ مرگ ،فل مرگ ،سوچلیاری ،راجواڑ کے ستہ کوچی ،بہنی پورہ ،لچھم پورہ ،لولاب کے ورنو ،ڈوبن ،کلی گام اور دیگر علاقوں میں بھاری برف باری کی وجہ سے سڑک روابط بند ہوگئے ہیں جس کی وجہ سے ان علاقوں میں معمولات زندگی مفلوج ہو کر رہ گئے ہیں ۔ضلع کے بیشتر علاقوں میں بجلی سپلائی متاثر ہے ۔کپوارہ کے ایک80سالہ بزرگ محمد اسداللہ میر نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ دو دہائیو ں کے بعد چلہ کلان نے اپنے سخت تیور دکھائے ۔
 

 سوپورمیں روزانہ سرگرمیاں متاثر،اندرونی سڑکیں بند، بجلی سپلائی ٹھپ 

سوپور/غلام محمد/ شمالی کشمیر کے قصبہ سوپور، رفیع آباد اور زینہ گیر علاقوں میں تازہ برفباری کے سبب معمولات زندگی متاثر ہیں، تمام رابطہ سڑکیں منقطع ہیں جبکہ بجلی سپلائی بھی ٹھپ ہوکر رہ گئی۔عوام نے انتظامیہ پر الزام لگایا ہے کہ بیشتر سڑکیں برف کی وجہ سے بند پڑی ہیںجن سے برف ہٹانے کیلئے کوئی اقدام نہیں کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ زینہ گیر اور سوپور کی رابطہ سڑکوں پر برف ہٹانے کی مشینریاں دوپہر تک غائب رہیں جبکہ بجلی گزشتہ رات سے ہی بند ہے۔ ادھر محکمہ بجلی کے افسران نے کہا ہے کہ برفباری کی وجہ سے کئی علاقوں میں ترسیلی لائنیں گرگئی ہیںتاہم بجلی بحال کرنے کیلئے اقدامات کئے جارہے ہیں۔
 

اوڑی کی بیشتر سڑکیں بند،8کلومیٹرپیدل سفر کرکے میت کو گھر پہنچایا گیا

اوڑی/ظفر اقبال/ اوڑی میں برف باری کے نتیجے میں ترکانجن بونیار، باڑین، میدانن، چوٹالی، برنیٹ، دودرن،چرنڈہ، بٹگراں، موٹھل، ہتھلنگا، سلی کوٹ کی سڑکیں گاڑیوں کی آمدو رفت کے لئے بند ہیں۔برف باری کی وجہ سے ترسیلی لائنوں کو نقصان پہنچا ہے جس کی وجہ سے بیشر دیہات میں بجلی کا نظام ٹھپ ہے۔ربطہ سڑکیں بند ہونے کی وجہ سے ترکانجن بونیار کے حبیب اللہ نامی ایک شہری کی میت مقامی لوگوں نے  8 کلو میٹر پیدل سفر کر کے گھر پہنچایا۔جس کی موت سرینگر کے ایک ہسپتال میں ہوئی تھی۔
 

ٹنگمرگ میں5مکانات کی چھتیں دب گئی

ٹنگمرگ /مشتاق الحسن/ٹنگمرگ میں گزشتہ دو روز سے ہورہی بھاری برفباری سے نصف درجن رہائشی مکانات کی چھتیں دب گئی ہیں۔ بدھ کی صبح سے ہی ہوری برفباری سے گوگلڈارہ میں دو اور دارہ کشی میں تین رہاشی مکانات کے چھت دب گئے ۔ ادھر بابا ریشی کے ژونٹھی پتھری میں بشیر احمد وانی ولد محمد اسداللہ وانی کا رہائشی مکان بھاری برفباری سے زمین بوس ہوگیا ہیتاہم افراد خانہ معجزاتی طور بچ گئے۔ بھاری برفباری کے نتیجے میں سب ڈویژن ٹنگمرگ کے تمام دیہات کی رابطہ سڑکیں بند پڑی ہیں ۔
 

ہیرپورہ شوپیان میں8اور پیر کی گلی میں10فٹ برف جمع

 شوپیان/شاہد ٹاک/ ضلع شوپیان کے میدانی علاقوں میں دو فٹ تازہ برف جمع ہوگئی ہے جبکہ بالائی علاقوں میں چار سے پانچ فٹ تک جمع ہوگئی ہے۔اگر چہ ضلع انتظامیہ نے قصبہ میں سڑکوں سے برف ہٹائی تاہم جاری برفباری کی وجہ سے سڑکوں پر گاڑیوں کی آمدورفت معطل رہی۔شدید برفباری کی وجہ سے لوگ گھروں میں ہی محصور رہے۔ادھر بھاری برفباری کی وجہ سے ضلع کے بازار آج بالکل بند رہے جس کی وجہ سے روز مرہ کی زندگی میں استعمال ہونے والی چیزیںنہ ملنے سے لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔برفباری کی وجہ سے کئی علاقوں میں کئی شیڈ ٹوٹ گئے ہیں۔ بدھ کی شام سے ہی بجلی کی سپلائی ٹھپ ہوگئی ہے۔جبکہ پورے ضلع میں میں پینے کے پانی کی سخت قلت نے عوامی زندگی کو بری طرح متاثر کیا ہے۔قصبہ شوپیان میں دوفٹ تازہ برف جمع ہوگئی ہے جبکہ چوگام میمندر،راولپورہ،ویہل،چودری گنڈ، کچھ ڈورو،دانگام اور کاپرن میں تین فٹ برف جمع ہوگئی ہے۔ ہیرپورہ میں پہلے ہی چارفٹ برف جمع تھی اور تازہ چار فٹ مزید جمع ہونے سے کل آٹھ فٹ برف جمع ہوگی ہے جبکہ دبجن اور پیر کی گلی میں قریب دس فٹ برف جمع ہوگئی ہے۔
 
 

 بڈگام اور اننت ناگ میں برف ہٹانے کے کام کا جائزہ لیا گیا

سرینگر//ضلع ترقیاتی کمشنر بڈگام ڈاکٹر سید سحرش اصغر نے ضلع کے مختلف علاقوں کا دورہ کرکے چھوٹی بی سڑکوں سے برف ہٹانے اور صحت،پانی اور بجلی سمیت اہم خدمات کی فوری بحالی کی ہدایات دیں۔دورے کے دوران ترقیاتی کمشنر نے کہا کہ برفباری شوع ہونے کے ساتھ ہی ضلع بھر میں لازمی خدمات کی بحالی کے لئے افرادی قوت اورمشینری کو کام پر لگایا گیا ۔انہوںنے متعلقہ محکموں کو ہدایت دی کہ وہ راشن،ایل پی جی،مٹی کے تیل اور دیگرخدمات کی دستیابی کو یقینی بنانے کے لئے ہر ممکن اقدامات کریں۔بعد میں ترقیاتی کمشنر نے ضلع ہسپتال کا دورہ کرکے وہاں مریضوں کو دستیاب طبی سہولیات کا بھی جائزہ لیا۔اس دوران ضلع ترقیاتی کمشنر اننت ناگ محمد یونس ملک نے آج قاضی گنڈ،بیجبہارہ اور مٹن سمیت ضلع کے کئی علاقوں کا دورہ کیا اور برف ہٹانے کے کام کے علاوہ اہم خدمات کی بحالی کا جائزہ لیا۔ترقیاتی نے ایمرجنسی ہسپتال قاضی گنڈ اورایس ڈی ایچ بیجبہاڑہ کا بھی دورہ کرکے وہاں مریضوں کو دستیاب سہولیات کاجائزہ لیا۔انہوںنے ہسپتالوں میں ڈاکٹروں اور نیم طبی عملے کی رات دن دستیابی کو یقینی بنانے کی بھی ہدایت دی۔ترقیاتی کمشنر کو بتایا گیا کہ ضلع کی اہم سڑکوں پر سے برف ہٹائی گئی ہے اور رابطے بحال کئے گئے ہیں۔انہیںیہ جانکاری بھی دی گئی کہ ضلع میں اہم خدمات کی بحالی کو بھی یقینی بنایا گیا ہے تاکہ عام لوگوں کو مشکلات کا سامنا نہ کرنا پڑے۔
 
 

 ضلع انتظامیہ سرینگر نے ہیلپ لائین نمبرات جاری کئے

سرینگر//سرینگر انتظامیہ نے ضلع میں ناسازگار موسمی حالات کے پیش نظر ہیلپ لائین نمبرات جاری کئے ہیں۔عوام سے کہا گیا ہے کہ وہ ضرورت پڑنے پر ان نمبرات پر رابطہ قائم کریں۔ڈی سی آفس 0194-2477033/2452182/9419042342/7051112345، آراینڈ بی 0194-2313751/7006003383، فائر اینڈایمرجنسی0194-2479488/101/9419251908، ایم ای ڈی  0194-2497458/9596193550/9419059311،یو ای ای ڈی 0194-2500444، ایس ایم سی 0194-2474499/18001807038، پی ایچ ای 0194-2452047/9596046111، محکمہ صحت 0194-2452498/9906540795/941900484،ڈرنیج 9906621818،امور صارفین 0194-2455019 پولیس کنٹرول روم 0194-2452092/100 اورٹریفک کنٹرول روم 0194-2450022 ۔ضلع ترقیاتی کمشنر سرینگر ڈاکٹر سید عابد رشید شاہ نے کہا ہے کہ موجودہ ناسازگار موسمی صورتحال سے نمٹنے کے لئے لائین محکموں،بشمول ایم ای ڈی،پی ڈبلیو ڈی،پی ایچ ای،پی ڈی ڈی ،یو ای ای ڈی،محکمہ ٹریفک اورمحکمہ صحت کو پوری طرح متحرک کیا گیا ہے۔انہوںنے کہا کہ متعلقہ محکموں کو سختی سے یہ ہدایت دی گئی ہیں کہ وہ برف ہٹانے اور تمام چھوٹی بڑی سڑکوں میں جمع شدہ پانی کی نکاسی کے لئے ترجیحی بنیادوں پر اقدامات کریں جب کہ محکمہ ٹریفک کوٹریفک کی نقل وحرکت کی باقاعدگی کو یقینی بنانے کے لئے زیادہ سے زیادہ ٹریفک اہلکاروں کو ذمہ داری سونپنے کی ہدایت دی گئی۔ترقیاتی کمشنر نے کہا کہ تمام لائیں محکموں کی طرف سے کنٹرول رومز قائم کئے گئے ہیں جب کہ ان محکموں کو افرادی قوت اور مشینری کو متحرک رکھنے پرزوردیا گیا ہے۔

 

برفانی تودوں کے گرنے کا خطرہ

۔22گھرانوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا گیا

کنگن/ غلام نبی رینہ/ وسطی ضلع گاندربل کے سونہ مرگ ، زوجیلا ،گگن گیر، کلن ،گنڈ اور کنگن میں دوسرے روز بھی شدید برفباری کا سلسلہ جاری رہا جس کے نتیجے میں جمعرات کو معمولات زندگی مفلوج ہوکر رہ گئیں جبکہ تحصیل گنڈ کے رامواری علاقے میں جمعرات کو ضلع انتظامیہ اور پولیس نے ایسے 22گھرانوں کو محفوظ مقامات پر پہنچایا گیا جنہیں برفانی تودے گر آنے کی وجہ سے خطرہ لاحق ہوگیا تھا ۔برفباری کے باعث کنگن سے گگن گیر تک ٹریفک کی آمدو رفت معطل رہی اور بجلی سپلائی متاثر رہی ۔ ونی آرم وانگت کنگن ،شودہ گنڈ، گوجر پتی پرنگ کنگن اور ہائن علاقے میں شدید برفباری کی وجہ سے کئی ٹین شیڈوں کو نقصان پہنچنے کی اطلاعات موصول ہوئی ہے ۔اس دوران جمعرات کو وسطی ضلع گاندربل کے تحصیل گنڈ کے خان محلہ رامواری میں پولیس ،سیول انتظامیہ اور سی آر پی ایف 118بٹالین گنڈ نے 22گھرانوں پر مشتمل 124افراد جن میں بچے مرد اور خواتین شامل ہیں کو گورنمنٹ مڈل سکول رامواری میں منتقل کیا  ۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ ان گھرانوں کو برفانی تودے گر آنے کی وجہ سے خطرہ لاحق ہوگیا تھا جس کے بعد انتظامیہ نے انہیں محفوظ جگہ پر منتقل کیا ۔ایس ڈی ایم کنگن معراج الدین شاہ نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ رامواری علاقے کے خان محلہ میں رہائش پذیر 22گھرانوں پر مشتمل 124افراد کو محفوظ جگہ پر منتقل کیا گیا ۔انہوں نے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ جنگلی علاقوں کی طرف جانے سے احتیاط برتیں ۔ 

 

 

عوام کو راحت پہنچانے کیلئے تیار رہیں،امیر جماعت اسلامی کی کارکنوں کو ہدایت

سرینگر//امیر جماعت اسلامی جموں و کشمیر ڈاکٹر عبدالحمید فیاض نے بھاری برف باری کے نتیجے میں ممکنہ خطرات سے چوکنا رہنے اور متاثرین کو ہنگامی بنیادوں پر ہر ممکن راحت بہم پہنچانے کی خاطر اپنے کارکنوں کو تیار رہنے کی ہدایت جاری کی ہے۔انہوں نے اضلاع، تحصیلات اور حلقہ امراء کو ایک دوسرے کے ساتھ مکمل رابطے میں رہنے پر زور دیا ہے تاکہ حالات کی جانکاری بہم رہے اور برف باری سے نقصان کی صورت میں متاثرین کو ہر ممکن راحت پہنچانے کی خاطر ہنگامی کارروائی کی جاسکے۔اس سلسلے میں رضاکارانہ خدمات انجام دینے کی خاطر کارکنان جماعت علی الخصوص اسلامی جمعیت طلبہ کے جوانوں کو تیار رہنے کی ہدایت بھی جاری کی گئی ہے جبکہ بالائی علاقوں میں خصوصی نظر رکھنے پر زور دیا گیا۔
 

 مریضوں اور ضرورتمندوں کی ہنگامی بنیادوں پر مدد کریں:ڈاکٹرالکندی 

سرینگر//جمعیت اہلحدیث جموں و کشمیر کے ناظم علی ڈاکٹر عبد اللطیف الکندی نے کہا ہے کہ مسلسل باراں و برف باری کی وجہ سے جہاں عبور و مرور میں بے حداڑچنیں پیدا ہوئی ہیں وہاں پسماندہ اور غریب لوگ انتہا درجے کی پریشانیوں کا سامنا کر رہے ہیں اور بہت سارے کنبے نان شبینہ کے محتاج بن گئے ہیں۔انہوںنے ان نازک گھڑیوں میں ایک دوسرے کا دکھ درد سمجھ کر متاثرہ ومفلوک الحال لوگوں کی وسعت قلبی سے مدد کرکے اپنی روایات کو پائندہ وتابندہ رکھنے کی تلقین کی ۔انہوں نے جموں سرینگر شاہراہ پر درماندہ بے شمار مسافروں کے حوالے سے زبر دست فکرمندی کا اظہار کرتے ہوئے مقامی بستیوں کو ان کی مدد کرنے کی دردمندانہ اپیل کی ۔
 

عوام کو درپیش مسائل کا ازالہ کریں،میاں الطاف کی گورنر سے اپیل

گاندربل /ارشاد احمد/نیشنل کانفرنس کے سینئر رہنما میاں الطاف احمد نے تازہ برفباری کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال سے نمٹنے کیلئے اقدامات کریں۔اپنے ایک بیان میں انہوں نے انتظامیہ سے مطالبہ کیا کہ وہ برفباری کے بعد لوگوں کو درپیش مسائل کا فوری طور پر ازالہ کرے تاکہ عوام کو کسی بھی طرح پریشانی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ انہوں نے کنگن اور اس سے ملحقہ علاقوں میں بجلی، پانی کی فراہمی اور سڑکوں کو قابل استعمال بنایا جائے۔انہوں نے رامواری علاقے سے درجنوں خاندانوں کو برفانی تودے گرنے والے علاقے سے نکال کر محفوظ مقامات کی طرف منتقل کرکی اپیل کی تاکہ کسی جانی نقصان کا سامنا نہ کرنا پڑے۔انہوں نے مزید کہا کہ کنگن کے بیشترعلاقے پچھلے ایک ماہ سے زیادہ عرصہ سے گھپ اندھیرے میں ہیں کیونکہ ان علاقوں میں نصب ٹرانسفارمر ں کو نقصان پہنچ چکا ہے اور محکمہ کے ورکشاپ میںپڑے ہوئے ہیں ۔
 

برف ہٹانے کیلئے مشینیں دستیاب رکھیں،پی ڈی پی یوتھ لیڈر کی اپیل

سرینگر//وادی میںبرفباری کے پیش نظر بلاک سطحوں پر برف صاف کرنے والی مشینوں کو دستیاب رکھنے کا مطالبہ کرتے ہوئے پی ڈی پی نے انتظامیہ کو متحرک کرنے کی اپیل کی۔پارٹی کے یوتھ صوبائی صدر انجینئر نذیر یتو نے کہا کہ بلاک سطحوں پر برف ہٹانے والی مشینوں کو بہم رکھنے سے نہ ہی سڑکیں بند ہوجائیںگی اور نہ ہی لوگوں کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑے گا۔انجینئر یتو نے کہا کہ کسی بھی نامساعد موسمی حالت میں اُن سے 9419000592 اور9797000685 نمبرات پر رابطہ قائم کریں۔