وادی کے 69فیصد وارڈوں میں پولنگ نہیں ہوئی

۔186بلدیاتی حلقوں میں639 امیدوارمیدان میں،244بلا مقابلہ کامیاب،181وارڈ خالی

18 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی
سرینگر// وادی میںبلدیاتی انتخابات کے تمام مراحل میں مجموعی طور پر40بلدیاتی اداروں میں186انتخابی وارڈوں میں 639امیدواروں کی قسمت الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں بند ہوگئی ہے۔ پہلے مرحلے میں8فیصد، دوسرے مرحلے میں3فیصد تیسرے مرحلے میں3.5اور آخری مرحلے میں4.2فیصد ووٹنگ کی شرح رہی۔الیکشن میں244امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہو ئے ، جبکہ 181انتخابی وارڈوں پر کوئی بھی کھڑا نہیں ہوا۔الیکشن کمیشن کی طرف سے مرتب کئے گئے اعدادو شمار کے مطابق38.62 فیصد وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا،جن میں پہلے مرحلے میں69دوسرے مرحلے میں61اور تیسرے مرحلے میں49جبکہ آخری مرحلے میں52وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار نہیں تھا۔بلدیاتی انتخاب کے پہلے مرحلے میں8 اکتوبر کو 57انتخابی وارڈوں میں138امیدواروں کی سیاسی قسمت ووٹنگ مشینوں میں بند ہوئی اور اس دوران وادی میںمجموعی طور پرووٹنگ کی شرح8.3فیصد رہی۔پہلے مرحلے میں69امیدوار بلا مقابلہ کامیاب،جبکہ23وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں تھا۔پہلے مرحلے میں مجموعی طور پر 4ہزار692وٹوں میں سے7ہزار57ووٹ ڈالے گئے۔دوسرے مرحلہ میں10اکتوبر کو بلدیاتی انتخابات میں49انتخابی وارڈوں میں ووٹ ڈالے گئے،جس کے دوران148امیدواروں کی سیاسی تقدیر الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں قید ہوگئی۔انتخابات میں مجموعی طور پر180امیدوار میدان میں تھے،جن میں61امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہونگے،جبکہ 56انتخابی وارڈوں پر کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا۔تیسرے مرحلہ میں 13اکتوبر کوسرینگر سمیت10میونسپل اداروں کے151وارڈوں میں انتخاب ہوا۔49وارڈوں پر امیدواربلا مقابلہ کامیاب ہوئے۔اس مرحلے میں55نشستوں پر کوئی بھی امیدوار نہیں تھا،جبکہ مجموعی طور پر47انتخابی وارڈوں پر انتخاب ہوئے،جن میں مجموعی طور پر169امیدوار میدان میں تھے۔چوتھے مرحلہ میںسرینگر کے25وارڈوں سمیت132 وارڈوں میں الیکشن ہوا،جس میں مجموعی طور پر202امیدوار میدان میںتھے۔ اس مرحلے میں52 انتخابی وارڈوں میں امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہونگے،جبکہ44 انتخابی وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار نہیں تھا،اور صرف36وارڈوں میں ہی انتخاب ہوا اور اصل طور پر155امیدواروں کے درمیان ہی مقابلہ تھا

تازہ ترین