وادی میں بلدیاتی انتخابات کے 2مرحلے

۔ 130 امیدواربلا مقابلہ کامیاب،79 پر کوئی امیدوار نہیں

12 اکتوبر 2018 (00 : 01 AM)   
(      )

بلال فرقانی

 صرف 106وارڈوں میں انتخاب ہوا، 148 امیدوار میدان میں

 
سرینگر// وادی میںبلدیاتی انتخابات کے2مراحل میں مجموعی طور پر106انتخابی وارڈوں میں268امیدواروں کی قسمت الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں بند ہوگئی ہے،جبکہ پہلے مرحلے میں8 فیصد اور دوسرے مرحلے میں ووٹنگ کی شرح3فیصد رہی۔ دونوں مرحلوں میں130امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے،جبکہ79انتخابی وارڈوں پر کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا۔ وادی میں پہلے مرحلے میں57 انتخابی حلقوں میں ہونے والے انتخابات میں سب سے زیادہ ووٹ ضلع کپوارہ جبکہ سب کم ضلع بانڈی پورہ میں ڈالے گئے۔پہلے مرحلے میں مجموعی طور پر84ہزار692ووٹوں میں سے 7ہزار 57 ووٹ ڈالے گئے۔ بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں49انتخابی وارڈوں میں ووٹ ڈالے گئے،جس کے دوران 148 امیدواروں کی سیاسی تقدیر الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں میں قید ہوگئی۔ وادی میں مجموعی طور پر ووٹوں کی شرح3فیصدر ہی ،جس کے دوران سب سے زیادہ ووٹنگ کی شرح سمبل میں36فیصد جبکہ اسلام آباد(اننت ناگ) میں ایک فیصد رہی۔

وسطی کشمیر

سرینگر میں پہلے مرحلے میں3وارڈوں کے انتخاب میں ووٹنگ کی شرح6 فیصد رہی ۔سرینگر کے3وارڈوں ہمہامہ،باغ مہتاب اور ہمدانیہ کالونی میں8 امیدوار میدان میں تھے۔ دوسرے مرحلے میں2فیصد رائے دہندگان ہی پولنگ مراکز پر آئے۔مجموعی طور پر سرینگر مونسپل کارپوریشن کے23وارڈوں پر انتخاب ہوا،جس کے دوران مجموعی طور پر72امیدوار میدان میں تھے،ایک نشست پر کوئی بھی انتخاب نہیں ہوا۔ پہلے مرحلے میںبڈگام کے13وارڈوں میں9وارڈوں میں امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے جبکہ3پر کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا۔ واحد وارڈ پر2 امیدوار میدان میں تھے،مجموعی طور پر ووٹنگ کی شرح17 فیصد رہی۔ بڈگام میں چاڈورہ میونسپل کمیٹی میں13وارڈوں میں سے5میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا،جبکہ دیگر8وارڈوں میں8امیدوار میدان میںتھے،اور وہ بلا مقابلہ کامیاب ہوگئے۔ میونسپل کمیٹی چاڈورہ میں کوئی بھی انتخاب نہیں ہوا۔خانصاحب میونسپل کمیٹی کے7وارڈوں میں صرف7امیدوار ہی میدان میں تھے،اور  وہ بلا مقابلہ کامیاب ہوئے۔دوسرے مرحلے میںبیروہ میونسپل کمیٹی میں13بلدیاتی وارڈوں میں سے صرف ایک امیدوار نے الیکشن میں شرکت کی ہے،اور دیگر12 وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار انتخابی میدان نہیں آیا اور وہ خالی رہے۔ چرار شریف میں بھی کوئی بھی بلدیاتی انتخاب نہیں ہوا۔ چرار شریف میونسپل کمیٹی 13بلدیاتی وارڈوں پر مشتمل ہے,جہاں11امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوگئے اور2وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار سامنے نہیں آیا ،وہ خالی رہے۔ ماگام میونسپل کمیٹی کے13واڈوں میں7امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے جبکہ دیگر6 وارڈوں میںکوئی امیدوار میدان میں نہیں تھا۔

شمالی کشمیر

 پہلے مرحلے میںبانڈی پورہ میونسپل کمیٹی کے 16 وارڑوں کے لیے ووٹوں کی شرح تین فیصدی رہی ہے ۔ سمبل کے11وارڈوں پر انتخاب ہوا،جبکہ2وارڈوں پر امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے۔ انتخابات کے پہلے مرحلے میںہندوارہ اور کپوارہ میونسپل کمیٹیوں کے 26وارو ڈوں میں 47امیدوار میدان میں تھے اور ان میں ہندوارہ میونسپل کمیٹی کے لئے 6امیدوارہ بلا مقابلہ کامیاب ہوئے جبکہ کپوارہ میونسپل کمیٹی کے لئے دو امیدوار پہلے ہی بلا مقابلہ کا میاب ہوئے ۔ لنگیٹ میونسپل کمیٹی میں9وارڈوں پر امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے جبکہ دیگر2وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا اور صرف2وارڈوں پر انتخاب ہوئے جہا ں کل 4امیدوار میدان میں تھے۔میونسپل کونسل بارہمولہ میں پہلے مرحلے میں 8اکتوبر کو انتخاب ہوا۔21وارڈوں میں6 پر امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے،جبکہ دیگر وارڈوں پر31امیدوار میدان میں تھے۔ دوسرے مرحلے میںبارہمولہ کے وتر گام رفیع آباد کے واحد بلدیاتی وارڈ میںصرف 19ووٹ ڈالے گئے۔میونسپل کمیٹی رفیع آباد 13وارڈوں پر مشتمل ہے۔یہاں 8وارڈوں میں امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہوئے جبکہ 4میں کوئی امیدوار نہیں تھا۔ کنزر میونسپل کمیٹی میں بھی کوئی انتخاب نہیں ہوا،کیونکہ اس میونسپل کمیٹی کے7وارڈوں میں صرف 7امیدواروں نے ہی کاغذات نامزدگی داخل کئے ہیں،جو بلا مقابلہ کامیاب ہونگے ۔

جنوبی کشمیر

 جنوبی کشمیر کی کوکر ناگ میونسپل کمیٹی 13واڈوں پر مشتمل ہیں ،1وارڈ میں کوئی بھی اُمیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا ،جبکہ8واڈوں میں 6کانگریس اور  2آزاد اُمیدوار نے بلا مقابلہ جیت درج کی ہے ۔اس میونسپل کمیٹی کے4واڈوں میں ووٹ ڈالے گئے ۔اچھ بل میونسپل کونسل میں پہلے مرحلے میں انتخاب تھا۔ اس کونسل کے 8وارڈوں میں 3 وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا تھا،جبکہ مزید5امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہونگے۔انتخابات کے پہلے مرحلے میں میونسپل کمیٹی کولگام کے13وارڈوں کیلئے5امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہونگے،جبکہ8انتخابی وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار میدان میں نہیں تھا۔ دیوسر میونسپل کمیٹی میں انتخابات کے پہلے مرحلے میں8 وارڈوں میں بی جے پی کے8 امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہو گئے ہیں۔ قاضی گنڈ میونسپل کمیٹی جس کے7وارڈوں میں پہلے مرحلے میں انتخاب تھے،جہاں بی جے پی کے4امیدوار بلا مقابلہ کامیاب ہونگے،جبکہ3وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار کھڑا نہیں ہوا ہے۔ انتخابات کے دوسرے مرحلے میںاننت ناگ میونسپل کونسل  کے16وارڈوں میں انتخابات ہوئے۔میونسپل کونسل میں کل 25وارڈ ہیں،جن میں سے 9 پر امیدوارپہلے ہی بلا مقابلہ کا میاب ہوچکے ہیں جبکہ16وارڈوں میں 38اْمیدوار میدان میں تھے۔ کولگام کی فرصل میونسپل کمیٹی کے 13وارڈوں میں دوسرے مرحلے میں ہونے والے انتخابات کے سلسلے میںکسی بھی امیدوار نے کاغذات نامزدگی داخل نہیںکئے تھے اور کوئی بھی امیدوار سامنے نہیں آیا‘‘۔ ضلع میں یہ واحد بلدیاتی ادارہ ہے،جہاں کوئی بھی امیدوار میدان میں نہیں ہے۔یاری پورہ میونسپل کمیٹی کے6وارڈوں میں4امیدوار میدان میں ہیں،جبکہ2 وارڈوں میں کوئی بھی امیدوار میدان میں نہیں ہے۔ 4وارڑوں میں صرف ایک ایک امیدوار کھڑا ہوا تھا،اور ممکنہ طور پر وہ بلا مقابلہ کامیاب ہونگے۔بجبہاڑہ میونسپل کمیٹی میں 17 وارڈوں کیلئے صرف5امیدوار میدان میں تھے۔جو بلا مقابلہ ہونگے۔12وارڈوں میںکوئی بھی امیدوار نہیں تھا۔
 

تازہ ترین